Aaj TV News

BR100 4,349 Increased By ▲ 3 (0.07%)
BR30 22,105 Increased By ▲ 22 (0.1%)
KSE100 41,787 Decreased By ▼ -19 (-0.05%)
KSE30 17,639 Decreased By ▼ -19 (-0.11%)
COVID-19 TOTAL DAILY
CASES 309,015 798
DEATHS 6,444 7

دماغی لہروں کو پڑھ کر اپنی ساخت بدلنے والا انوکھا لباس تیار کرلیا گیا۔ تھری ڈی لباس آپ کی دماغی لہروں کے مطابق جگمگائے گا۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق تھری ڈی پرنٹڈ روبوٹک لباس کو "پنگولین ڈریس" کا نام دیا گیا ہے۔ اسے پہننے کے لیے سر پر 1204 ننھے سنسرز کے کمپیوٹر انٹر فیس کو بھی پہننا پڑتا ہے، یہ تھری ڈی لباس دماغی لہروں کے مطابق جگمگائے گا۔

لباس پہننے کے بعد اگر آپ سکون محسوس کر رہے ہیں تو کپڑے کی روشنی مدھم اور سکون پہنچانے والے جامنی رنگ کی ہو جائے گی۔

پینگولین ڈریس کو جلد آسٹریا میں ہونے والے آرٹس ٹیکنالوجی اینڈ سوسائٹی فیسٹیول میں ریمپ واک کے دوران پیش کیا جائے گا۔

تناؤ کا شکار ہوں تو روشنیاں جلنے بجھنے لگیں گی جبکہ کپڑے میں موجود ایک موٹر اس طرح حرکت کرے گی جیسے پر حرکت کر رہے ہوں۔

ڈیزائنر نے اس لباس کو دماغی پیچیدگیوں کی عکاسی کا منفرد ذریعہ قرار دیا جو اس سے پہلے ایک ایسا روبوٹک لباس بھی تیار کر چکے ہیں جس میں ایسے سنسرز موجود تھے جو کسی کے بہت قریب آنے ہر پہننے والے کا دفاع کرتے ہیں۔

اس لباس کو ہلکے وزن کے پائیدار نائیلون میٹریل سے تیار کیا گیا ہے جس میں سنسرز اور تاروں کو تہوں میں چھپا دیا گیا ہے۔