Aaj News

پاکستانی معیشت کی تاریک سرنگ کے آخر میں روشنی کی ایک کرن؟

ایک بار جب بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (IMF) سے قسط موصول ہو جائے گی، اضافی مالیاتی چینلز خود کھل جائیں گے۔
شائع 01 اگست 2022 04:23pm
<p>تصویر: اے ایف پی</p>

تصویر: اے ایف پی

وفاقی وزارت خزانہ نے جولائی کی ماہانہ اقتصادی اپ ڈیٹ اپنی ویب سائٹ پر جاری کردی ہے، جس میں “قلیل مدتی مشکلات” (سال بہ سال افراط زر 20 فیصد سے زیادہ، بین الاقوامی ذخائر میں 8.5 بلین ڈالر کی کمی، ملکی شرح سود پر نمایاں اوپری دباؤ کے ساتھ ساتھ اہم مالیاتی استحکام) کو کم ظاہر کیا گیا ہے ، جبکہ امید برقرار رکھتے ہوئے کہا گیا ہے کہ “طویل مدتی پالیسیوں کو ان قلیل مدتی مشکلات سے گزرنا چاہیے۔”

بزنس ریکارڈر میں شائع ایڈیٹوریل کے مطابق ان مشکلات سے باہر نکلتے وقت “ایک بار جب بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (IMF) سے قسط موصول ہو جائے گی، اضافی مالیاتی چینلز خود کھل جائیں گے۔ جس سے طویل مدتی مقاصد پر توجہ مرکوز کرنے کا موقع مل جائے گا۔

ان مقاصد میں سے ایک اعلیٰ پائیدار ترقی کی رفتار کو محفوظ بنانا ہے جو اندرونی اور بیرونی مالیاتی رکاوٹوں سے بچتے ہوئے پاکستان کے تیزی سے بڑھتے انسانی سرمائے کو جھیلنے کے قابل ہو۔

پریشان کن بات یہ ہے کہ یہ دعوے تین چیزوں پر آسانی سے چیلنج کیے جا سکتے ہیں۔

اوّلاً، فنڈ مناسب مانیٹری اور مالیاتی پالیسیوں کے ذریعے معیشت کے سکڑاؤ پر انحصار کر رہا ہے جو کہ مجموعی گھریلو پیداوار (جی ڈی پی) کی نمو کو روکے گی، ان کی ویب سائٹ پر موجود دستاویزات کے مطابق تخمینہ غیر حقیقت پسندانہ طور پر 5 فیصد ہے، کثیر الجہتی کمپنیاں پہلے ہی ایک فیصد سے 4 فیصد تک گھٹ چکی ہیں۔ تاہم، آزاد ماہرین اقتصادیات ایک سال کے دوران مزید نیچے جانے کی طرف نظرثانی کی پیش کش کر رہے ہیں جس کے نتیجے میں ٹیکس ریونیو پر اثرات بشمول جی ڈی پی کی شرح 5 فیصد سے منسوب بجٹ میں متوقع 60 فیصد اضافہ کے ساتھ مرتب ہوں۔ اس لیے زیادہ ٹیکسوں کا واضح امکان ہے جو گھرانوں کی ڈسپوزایبل آمدنی کو مزید کم کر دے گا، جس سے ضروری اشیاء خوراک، کپڑے، اسکول کی فیس وغیرہ کی طلب میں رکاوٹ پیدا ہو جائے گی ، جن کے سنگین سماجی و اقتصادی اثرات ہونے کا امکان ہے۔

دوسرا، پاکستان کا تیزی سے بڑھتا ہوا انسانی سرمایہ دوسرے ممالک کی نسبت کل آبادی میں نوجوانوں کے اضافے کی نشاندہی کرتا ہے جس کی وجہ سے یہ صوبائی حکومتوں پر واجب ہے کہ وہ تعلیم پر (ایک صوبائی مضمون سوائے ہائر ایجوکیشن کمیشن کے) مناسب رقم مختص کریں۔

اس کے علاوہ، نوجوانوں کو روزگار کے مناسب مواقع کی ضرورت ہوتی ہے جو ایک چیلنج چابت ہو سکتا ہے ، اگر بڑے پیمانے پر مینوفیکچرنگ (LSM) سیکٹر، جو کہ بینکوں سے قرض لینے پر بہت زیادہ منحصر ہے، کے لیے 15 فیصد رعایت کی شرح بہت زیادہ ہے۔

شائع اپ ڈیٹ میں مزید بتایا گیا ہے کہ اندرونی اور بیرونی مالیاتی رکاوٹوں سے بچنے کے لیے، مؤثر سپلائی سائڈ ڈائنامکس کو دانشمندانہ ڈیمانڈ مینجمنٹ کے ساتھ ملایا جانا چاہیے۔ اور جب کہ مارکیٹ اس بات کی نشاندہی کرتی ہے کہ ڈیمانڈ مینجمنٹ کا مطلب صارفین تک پہنچانے کے لیے لیا جا سکتا ہے (i) بین الاقوامی اجناس کی قیمتوں میں اضافہ (روس یوکرین جنگ کی وجہ سے) اور (ii) روپے اور ڈالر کے روزانہ کٹاؤ۔ ڈالر کی برابری جو کہ بلا روک ٹوک جاری ہے، پھر بھی سپلائی کا انتظام شاید یوٹیلیٹی اسٹورز میں ضروری اشیاء کو رعایتی نرخوں پر دستیاب کرانے کا حوالہ ہے کیونکہ بہت سے صارفین پہلے ہی ان اسٹورز کے شیلف پر اشیاء کی دستیابی کی کمی کی شکایت کر رہے ہیں۔

اور آخر کار، اقتصادی ٹیم کے دو لیڈروں وزیر خزانہ اور قائم مقام گورنر اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے تقریباً روزانہ کے دعووں کے باوجود کہ روپے کی گراوٹ “غیر ضروری” ہے اور آئی ایم ایف کی جانب سے 1.177 بلین ڈالر کی قسط جاری ہونے کے بعد اسے واپس لے لیا جائے گا۔ دوست ممالک کی طرف سے وعدوں کے ساتھ جو کہ قسط سے منسلک ہیں، ان کے دعووں کا مارکیٹ کے انتہائی ناموافق تاثرات کو دور کرنے میں کوئی اثر نہیں پڑا جو برقرار ہے۔

اگرچہ کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ اس کا الزام نہ صرف عام لوگوں پر بلکہ اداروں کے اندر جاری سیاسی غیر یقینی صورتحال اور پولرائزیشن پر بھی عائد ہوتا ہے، حالانکہ فریقین کو قومی مفاد کے لیے تعمیری بات چیت میں شامل ہونے پر زور دیا جاسکتا ہے ، لیکن اقتصادی منتظمین پر زور نہیں دیا جاسکتا جنہیں خاص طور پر ان بنیادی مسائل کو حل کرنے اور اصلاحی اقدامات کے لیے مقرر کیا گیا ہے، جو معیارِ زندگی کو زوال کا باعث بن رہے ہیں۔

زور صرف اس بات پر دیا جاسکتا ہے کہ ہماری تاریخ کے اس موڑ پر آؤٹ آف دی باکس سوچ ضروری ہے، ایک آؤٹ آف دی باکس سوچ جو کہ فنڈ کی پالیسی کے حالات اور اقتصادی ٹیم کے رہنماؤں کی جانب سے ان کی خاموشی سے قبولیت میں واضح نہیں ہے۔

اپ ڈیٹ میں 25 جولائی کو ڈالر کے مقابلے روپے کی قدر 229.88 روپے بتائی گئی ہے، جس کے دو دن بعد 28 جولائی کو انٹربینک میں 240 کا اندراج ہوا، گزشتہ سال 32.5 بلین ڈالر کی برآمدات 72 بلین ڈالر کی درآمدات سے کہیں زیادہ تھیں جس سے کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ 2020 میں 2.8 بلین ڈالر سے بڑھ گیا۔

بجٹ دستاویزات کے مطابق 2021-22 میں 21 سے 17.4 بلین ڈالر، اور گزشتہ مالی سال میں ایف بی آر کی آمدنی میں 29.1 فیصد کا متاثر کن اضافہ تھا، اس کے باوجود گزشتہ سال جی ڈی پی کا محض 8.96 فیصد تھا، جو کہ ایک خوفناک حد تک کم رقم ہے۔

صرف یہ امید کی جاسکتی ہے کہ موجودہ حکومت گزشتہ سال ترسیلات زر میں 6.1 فیصد کی نمو کا فائدہ اٹھائے گی، موجودہ اخراجات کے تمام وصول کنندگان سے قربانی کا مطالبہ کر کے اپنے اخراجات میں کمی کرے گی، اور ان لوگوں کے ساتھ کام کرے گی جو سوچنے سمجھنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

Comments are closed on this story.