Aaj TV News

BR100 4,855 Increased By ▲ 19 (0.39%)
BR30 24,780 Increased By ▲ 335 (1.37%)
KSE100 45,903 Increased By ▲ 177 (0.39%)
KSE30 19,153 Increased By ▲ 133 (0.7%)

آمدن سے زائداثاثہ جات کیس میں خورشید شاہ ،صوبائی وزیر اویس شاہ اور ایم پی اے فرخ شاہ سمیت 18 ملزمان پر فرد جرم عائد کردی گئی ہے۔

ملزمان نے صحت جرم سے انکار کردیا ، جس کے بعدسماعت 11 دسمبر تک ملتوی کردی گئی۔

خورشید شاہ نے عدالت کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ملک کی سب سے بڑی عدالت نیب کے خلاف جو بول چکی ہے اس سے زیادہ کوئی نہیں بول سکتا ،ہمیشہ پارلیمنٹ کی بالادستی کی بات کی ہے ،

سکھرکی احتساب عدالت میں پاکستان پیپلزپارٹی کے مرکزی رہنما سید خورشید احمد شاہ ،ان کے داماد سندھ کے وزیر ٹرانسپورٹ سید اویس قادر شاہ ،خورشید شاہ کے دو صاحبزادوں ایم۔ پی اے فرخ شاہ اور زیرک شاہ۔کے علاوہ خورشید شاہ کی دو بیگمات سمیت 18 افراد کے خلاف نیب کی جانب سے داخل ریفرنس کی سماعت ہوئی۔

سماعت کے دوران نیب کی جانب سے عدالت میں خورشید شاہ ،ان کے صاحبزادوں ،دو بیگمات اور داماد صوبائی وزیر اویس شاہ سمیت 18 ملزمان کے خلاف 1 ارب 23 کروڑ روپے سے زائد آمدن کے اثاثے بنانے کے الزام میں داخل ریفرنس میں فرد جرم عائد کی گئی۔

تاہم ملزمان نے صحت جرم سے انکار کردیا۔ عدالت نے فرد جرم عائد ہونے کے بعد سماعت 11 دسمبر تک ملتوی کردی۔

واضح رہے کہ ریفرنس کی سماعت صبح کے وقت بھی ہوئی تھی تاہم ایک ملزم کی عدم پیشی کے باعث عدالت نے سماعت دوپہر دو بجے تک ملتوی کردی تھی تاہم دو بجے کی سماعت پر ملزمان پر فرد جرم عائد کی گئی۔

سماعت کے بعد عدالت کے باہر پیپلزپارٹی کے مرکزی رہنما سید خورشید احمد شاہ کا کہنا تھا کہ ہ یہ حکومت پارلیمنٹ کے ساتھ جنگ کرنا چاہ رہی ہے ریاست اور عوام سے جنگ کرنا چاہ رہی ہے جو کسی طور ملک کے مفاد میں نہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ نیب پر جب ملک کی سب سے بڑی عدالت جو کچھ بول چکی ہے اس کے بعد کسی کو بولنے کی ضرورت باقی نہیں بچتی ہے۔