Aaj.tv Logo

اسلام آباد کی مقامی عدالت نے نورمقدم قتل کیس میں تینوں متفرق درخواستوں پرمحفوظ فیصلہ سنا دیا ،عدالت نے شریک ملزمہ عصمت آدم جی کی مکمل سی سی ٹی وی فوٹیج فراہمی کی درخواست مسترد کردی اور ڈی جی ایف آئی اے کو کیس کی سی سی ٹی وی وائرل ہونے کی تحقیقات کرانے کا حکم بھی دے دیا۔

اسلام آباد کے ایڈیشنل سیشن جج عطا ءربانی نے نور مقدم قتل کیس میں 3مختلف درخواستوں پراحکامات جاری کردیئے۔

عدالت نے شریک ملزمہ عصمت آدم کی مکمل سی سی ٹی وی فوٹیج فراہمی کی درخواست خارج کردی۔

عدالت نے حکم دیاکہ ڈی جی ایف آئی اے نور مقدم قتل کیس کی سی سی ٹی وی وائرل ہونے کی تحقیقات کرائیں ۔

عدالت نے پراسیکیوشن کی 2نئے گواہ ڈاکٹرانعم اورڈاکٹرحماد کو طلب کرنے کی درخواست منظور کر لی ۔

عدالت نے تینوں درخواستوں پر گزشتہ روز دلائل مکمل ہونے پر فیصلہ محفوظ کیا تھا۔