Aaj News

منگل, اپريل 16, 2024  
07 Shawwal 1445  

اسلام آباد ہائی کورٹ: رانا شمیم پر بیان حلفی کیس میں فرد جرم عائد کر دی گئی

اسلام آباد ہائی کورٹ نے گلگت بلتستان کے سابق چیف جسٹس رانا شمیم...
شائع 20 جنوری 2022 05:21pm

اسلام آباد ہائی کورٹ نے گلگت بلتستان کے سابق چیف جسٹس رانا شمیم پر عدالت کو اسکینڈل کرنے اور اپنے طرز عمل سے زیر سماعت کیس کو متاثر کرنے پر فرد جرم عائد کردی۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ایک اخباری مضمون سے متعلق توہین عدالت کیس میں شمیم کے خلاف فرد جرم عائد کی جس میں رانا شمیم کے بیان حلفی کا حوالہ دیا گیا جس میں الزام لگایا گیا تھا کہ سابق چیف جسٹس ثاقب نثار نے مسلم لیگ (ن) کے سربراہ نواز شریف اور ان کی بیٹی مریم کو ضمانت نہ دینے کی ہدایت کی تھی۔

تاہم عدالت نے جیو اور جنگ گروپ کے ایڈیٹر ان چیف میر شکیل الرحمان اور سینئر صحافیوں انصار عباسی اور عامر غوری کے خلاف فرد جرم عائد نہیں کی، جو اس مقدمے میں مدعی بھی ہیں۔

عدالت نے انہیں متنبہ کیا کہ اگر یہ سامنے آیا کہ یہ خبر جان بوجھ کر شائع کی گئی تو پھر صحافیوں پر فرد جرم عائد کی جائے گی۔

جیو نیوز کے اظہر عباس نے ٹوئٹر پر صحافیوں پر فرد جرم عائد نہ کرنے کے عدالتی فیصلے کو سراہتے ہوئے کہا کہ یہ صحافت کی آزادی کی جیت ہے۔

جسٹس اطہر من اللہ نے رانا شمیم کی جانب سے فرد جرم عائد کرنے سے قبل پراسیکیوٹر تبدیل کرنے اور انکوائری شروع کرنے کی درخواستیں بھی مسترد کر دیں۔

فرد جرم پڑھتے ہوئے جسٹس اطہر من اللہ نے کہا کہ شمیم نے نوٹری سے حلف نامہ لیک ہونے کے امکان کو قبول کیا تھا لیکن انہوں نے صحافی انصار عباسی اور پبلک نوٹری کے خلاف کوئی کارروائی شروع نہیں کی۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس نے پھر شمیم سے پوچھا کہ کیا آپ نے الزامات کو قبول کیا یا نہیں جس پر سابق چیف جسٹس نے کہا کہ انہوں نے کچھ الزامات کو قبول کیا۔

عدالت نے انہیں ہدایت کی کہ اگر وہ اپنے دفاع میں کچھ کہنا چاہتے ہیں تو تحریری طور پر پیش کریں۔

اس سے قبل سماعت میں رانا شمیم نے عدالت سے استدعا کی کہ ان کے وکیل عبداللطیف آفریدی کے سماعت میں شامل ہونے تک فرد جرم عائد کرنے میں تاخیر کی جائے لیکن عدالت نے ان کی درخواست مسترد کر دی۔

سماعت کے دوران پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹس کے صدر افضل بٹ نے عدالت کو بتایا کہ وہ زیر سماعت معاملات پر رپورٹنگ اور تجزیہ کرنے کے لیے میٹنگز کر رہے ہیں۔

اسلام آباد ہائی کورٹ جرنلسٹس ایسوسی ایشن کے صدر ثاقب بشیر اور اٹارنی جنرل خالد جاوید خان نے عدالت سے صحافیوں پر فرد جرم عائد کرنے میں تاخیر کی استدعا کی۔

ثاقب بشیر نے عدالت کو بتایا کہ وہ زیر سماعت مسائل پر رپورٹنگ میں محتاط انداز اختیار کرنے پر غور کر رہے ہیں۔

جس پر جسٹس اطہر من اللہ نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ خبر کا آرٹیکل صرف ثاقب نثار سے ہی نہیں بلکہ ہائی کورٹ سے بھی ہے اور اس کیس میں ملوث افراد نے زیر سماعت مقدمات کو متاثر کرنے کی کوشش کی۔

انہوں نے ریمارکس دیئے کہ لوگوں کو بتایا گیا کہ عدالت کے ججوں سے سمجھوتہ کیا گیا ہے۔

اس موقع پر عدالت کی معاونت کرنے والے سینئر صحافی ناصر زیدی نے کہا کہ صحافیوں نے کیس کی کارروائی سے سیکھا ہے کہ کیسز کی کوریج کے دوران احتیاط برتی جائے۔

انہوں نے عدالت کو بتایا کہ توہین عدالت کے تحت کیس کی سماعت شروع ہوئی تو دنیا بھر میں غلط پیغام جائے گا۔

فوجی عدالتوں کی جانب سے صحافیوں کو سزا کے طور پر کوڑوں کی سزا اور عدلیہ کی آزادی کے لیے وکلاء کی تحریک بھی کچھ ایسے معاملات تھے جن پر سماعت کے دوران بحث ہوئی۔

عدالت کی معاونت کرنے والے ایڈووکیٹ فیصل صدیقی نے میڈیا اداروں کے نمائندوں کے بیانات کو سراہا اور کہا کہ صحافیوں کی جانب سے بھی ایسے بیانات آئیں گے کہ وہ زیادہ محتاط رویہ اپنائیں گے۔

IHC

Rana Shamim

Comments are closed on this story.

تبصرے

تبولا

Taboola ads will show in this div