Aaj News

منگل, مئ 28, 2024  
19 Dhul-Qadah 1445  

شرح سود میں حالیہ اضافہ آپ پر کس طرح اثر انداز ہوگا

بچت کرنے اور پرسنل لون لینے والے دونوں ہی مشکل میں آئیں گے۔
شائع 02 مارچ 2023 06:00pm

پاکستان نے بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے ساتھ بات چیت کے دوران شرح سود میں 200 بیسس پوائنٹس (بی پی ایس) یا 2 فیصد تک اضافے پر آمادگی ظاہر کی تھی، لیکن حیران کن طور پر آج اس میں 300 بی پی ایس یعنی 3 پوائنٹس کا اضافہ کردیا گیا۔

اس حکومتی اقدام سے پرسنل لون جو پہلے ہی مہنگے ہیں مزید مہنگے ہو جائیں گے، لوگوں کیلئے اس بڑھتی ہوئی مہنگائی کے درمیان اپنی مساوی ماہانہ اقساط (EMIs) کی ادائیگی مزید مشکل ہوجائے گی۔

دوسری جانب، پنشنرز اور بچت کے خواہاں دیگر لوگوں کو بھی ایک مشکل انتخاب کا سامنا کرنا پڑتا ہے کہ اپنی رقوم بینک میں رکھیں یا انہیں فکسڈ اثاثوں میں تبدیل کردیں۔

موڈیز ماہرین کے مطابق افراط زر پہلے ہی 31.5 فیصد سے اوپر جا چکا ہے اور چند مہینوں میں یہ 33 فیصد تک پہنچ جائے گا۔

اسی تناظر میں بینک سیونگز تیزی سے اپنی حقیقی قدر کھو رہی ہیں۔

اگرچہ آپ کا بینک آپ کو اچھا منافع ادا کرتا رہتا ہے، لیکن چند ماہ بعد آپ 10 لاکھ روپے سے شاید وہ نہ خرید سکیں جو آپ آج خرید سکتے ہیں۔

اب سوال یہ ہے کہ ان حالات میں، کیا آپ کو لون (قرض) لینے یا منافع کمانے کے لیے اپنی جمع پونجی بینک کے حوالے کرنا چاہیے؟

آپ کا ذاتی قرض (پرسنل لون) کیوں اور کتنا مہنگا ہو جائے گا؟

شرح سود جسے پالیسی ریٹ بھی کہا جاتا ہے، اس میں اضافے کی وجہ سے آپ کا پرسنل لون مہنگا ہوتا جا رہا ہے۔

23 جنوری کو اسٹیٹ بینک آف پاکستان (SBP) کے اعلان کے بعد شرح سود پہلے ہی 17 فیصد پر ہے۔

ایک سالہ ”کراچی انٹر بینک آفر ریٹ“ (KIBOR) جو بینک ایک دوسرے کو قرض دینے کے لیے استعمال کرتے ہیں، 19.82 فیصد ہے۔ یہ شرح اس وقت عائد ہوتی ہے جب بینک آپ کو پیش کردہ پرسنل لون کا حساب لگاتے ہیں۔

KIBOR کا تعین شرح سود کی بنیاد پر کیا جاتا ہے۔ اس لیے شرح سود اہمیت رکھتی ہے۔

جب بینک آپ کو قرض کی پیشکش کرتے ہیں، تو وہ KIBOR کے اوپر اپنا منافع شامل کرتے ہیں۔ اس لئے KIBOR پلس بینک منافع وہ شرح سود ہے جو آپ قرض پر ادا کرتے ہیں۔

ایک بینک ذاتی قرض پر تقریباً 10 فیصد چارج کرے گا۔

لہٰذا، ذاتی قرض پر بینک کی شرح سود آج تقریباً 30 فیصد ہے۔ اس میں اضافی تین فیصد یا 300 بی پی ایس کا اضافہ ہوگا۔

مرکزی بینک نے 16 مارچ 2023 کو ہونے والی مانیٹری پالیسی کمیٹی کے اجلاس کا انتظار کیے بغیر پالیسی ریٹ کا اعلان کیا۔

شرح سود کے اس اعلان کا آپ پر کیا اثر پڑے گا؟

مثال کے طور پر، اگر آپ نے پانچ سالوں کے لیے 10 لاکھ روپے کا قرض لیا ہے، تو پالیسی ریٹ میں اضافے کے بعد آپ کی ای ایم آئی کم از کم 32,353 روپے سے بڑھ کر 34,220 روپے ہو جائے گی۔

آپ کو کچھ دیگر اخراجات میں کمی کرکے اضافی روپے 1,867 کی مالی اعانت کرنے کی ضرورت ہے۔ بڑھتی ہوئی مہنگائی کے درمیان، یہ ایک مشکل کام ہو سکتا ہے۔

بچت کرنے والے مخمصہ کا شکار

جب کہ زیادہ تر لوگ ذاتی قرضوں پر 30 فیصد سے زیادہ سود ادا کرتے ہیں، پنشنرز اور دیگر سیونگز کرنے والوں کو ان کی رقم پر صرف 16 فیصد منافع ملتا ہے۔

مختلف اقسام کے سیونگ سرٹیفکیٹس پر منافع 12.60 اور 15.96 فیصد کے درمیان ہے۔

سیونگ اکاؤنٹس کے منافع کی شرح تقریباً 15 فیصد ہے۔

پنشنرز اور دیگر کی جانب سے تیزی سے بچت اسکیموں سے فنڈز نکالے جانے کے بعد شرحیں جنوری میں بڑھائی تھیں۔ اس سے پہلے انہیں تقریباً 12.5 فیصد منافع ادا کیا جارہا تھا۔

اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق جولائی 2022 سے دسمبر 2022 کے درمیان بچت اسکیموں سے کم از کم 240.21 بلین روپے کا اخراج ریکارڈ کیا گیا۔

بچت کرنے والوں کو اپنا پیسہ بینکوں یا نیشنل سیونگ اسکیم (NSS) میں جمع کروانا اب کھٹک رہا ہے۔

وہ اپنے فنڈز کو اثاثوں میں تبدیل کرنے کے لیے نکال رہے ہیں جس سے روپے کے لحاظ سے ان کی قدر میں اضافہ ہوگا۔

افراط زر کی شرح 27.6 فیصد اور بچت پر منافع صرف 16 فیصد ہونے کی وجہ سے پنشنرز ہر سال اپنی رقم کی قوت خرید میں کم از کم 11.6 فیصد کمی دیکھتے ہیں۔

مرکزی بینک نے جمعرات کو اس بات کی تصدیق کی ہے کہ رواں مالی سال میں اوسط مہنگائی 27 سے 28 فیصد کے درمیان رہے گی۔

ایک آئٹم جسے آپ 10 لاکھ روپے میں خرید سکتے ہیں، اگلے سال 27.6 فیصد افراط زر کی شرح پر 1.276 ملین روپے میں دستیاب ہوگا۔

دریں اثنا، بینک سے ایک سال میں آپ کا کل منافع صرف 160,000 روپے ہے، جبکہ آپ کا نقصان 116,000 روپے ہے۔

سیونگز کرنے والے اس نقصان سے بچنا چاہتے ہیں۔

لیکن بینکوں سے رقم نکالنا اور اسے اثاثوں میں تبدیل کرنا آسان نہیں ہے، خاص کر بوڑھے لوگوں کے لیے۔

ایک مائع اثاثہ جیسے نقدی کو ایک مقررہ اثاثہ میں تبدیل کرنا جیسے زمین کا ایک ٹکڑا یا ایسا ہی کچھ اور، اس میں محنت درکار ہوتی ہے۔

اس کے علاوہ، حفاظت ایک اور چیلنج ہے۔

اگر اثاثہ سونے جیسی قیمتی دھات ہے، تو آپ کو بینک لاکر تلاش کرنے کی ضرورت ہے۔

اگر یہ زمین کا ایک ٹکڑا ہے تو آپ کو یہ یقینی بنانا چاہیے کہ کوئی بھی اس پر ناجائز قبضہ نہ کرے۔

آپ یا تو خطرے کو قبول کرتے ہیں اور مقررہ اثاثوں میں تبدیل کرنے کے لیے بینک سے رقم نکال لیتے ہیں یا تقریباً 11.6 فیصد نقصان کو قبول کرتے ہیں۔

کچھ دوسرے اختیارات ہیں جیسے میوچل فنڈز، اسٹاک مارکیٹ، یا رئیل اسٹیٹ انویسٹمنٹ اسکیم (REIT) ، لیکن ان سب میں کسی نہ کسی قسم کا خطرہ ہے۔

قومی بچت اسکیمیں اور سیونگ اکاؤنٹس پنشنرز اور نوجوان بچت کرنے والوں کے لیے مالیات کی محدود معلومات کے ساتھ سب سے محفوظ راستے ہیں۔

SBP

پاکستان

KIBOR

پنشنرز

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ

آئی ایم ایف

اسٹیٹ بینک آف پاکستان

شرح سود

پرسنل لون