Aaj News

بدھ, فروری 28, 2024  
18 Shaban 1445  

آئندہ الیکشن میں پی ٹی آئی کا ٹکٹ لینے والا بھی کوئی نہیں ہوگا، فیصل واؤڈا

جنرل (ر) فیض حمید چیئرمین کو گرفتار کرکے صدام کی طرح 30 سال بیٹھنا چاہتے تھے، سابق وزیر
شائع 14 جولائ 2023 10:11pm

سابق وفاقی وزیر فیصل واوڈا کا کہنا ہے کہ آئندہ الیکشن میں پی ٹی آئی کا ٹکٹ لینے والا بھی کوئی نہیں ہوگا۔

”آج نیوز“ کے پروگرام ”روبرو“ میں بات کرتے ہوئے تحریک انصاف کے سابق وفاقی وزیر فیصل واوڈا نے کہا کہ میں نے ایک جھوٹے شخص کو جو ہیرو بن کر بیرون ملک بیٹھا ہوا تھا اس کا پردہ چاک کیا تھا، وہ شخص گواہوں کے بیانات کے ساتھ جھوٹا بھی ثابت ہوچکا ہے، گزشتہ روز بھی میں نے ایک پروگرام میں اتنا کہا تھا کہ صحافی ارشد شریف جب دبئی جارہے تھے تو شہزاد اکبر وہاں کیا کررہے تھے، جس پر مجھے ہدف تنقید بنایا گیا۔

فیصل واوڈا کا کہنا تھا کہ میرے گزشتہ روز کے بیان کے بعد میرے خلاف ایک نجی ٹی وی چینل (ARY) کے ممبرز نے ٹویٹس کیں، ایک عدیل راجا نامی شخص نے کہا کہ مجھے ارشد شریف قتل کیس میں ملوث کیا جائے، مجھے سمجھ نہیں آرہی کہ انہیں شہزاد اکبر کے ہیرو سے زیرو بننے کی تکلیف ہوئی یا میرے یہ بتانے سے تکلیف ہوئی کہ شہزاد اکبر اس وقت دبئی میں موجود تھے جب ارشد شریف کو کینیا بھیجا جارہا تھا، اور اس وقت کچھ اور لوگ بھی وہاں موجود تھے۔

فیصل واؤڈا نے کہا کہ مجھے ان کی تکلیف کا علم نہیں، لیکن جو بھی ہے اب ارشد شریف کا کیس دوبارہ اٹھ گیا ہے اور راستہ کھل گیا ہے، تو اسے منطقی انجام تک پہنچائیں گے، اور بہت سے نام سامنے آئیں گے، اور کوئی شکنجے سے باہر نہیں نکل سکے گا۔

سابق وزیر نے کہا شہزاد اکبر اس وقت ہیرو بنا جب اس نے پاکستان آکر 190 ملین پاؤنڈ کیس کی ایک جھوٹی روداد سنائی، اور مجھے سب سے بڑا جھوٹا کہا، اور بتایا کہ میں نے کابینہ میں کوئی آواز نہیں اٹھائی تھی، لیکن بعد میں ایک پروگرام میں امین اسلم نے تصدیق کی کہ فیصل واوڈا نے کابینہ میں سب کہا تھا جو اس کا بیان ہے، ندیم افضل چن نے بھی میری گواہی دی۔

فیصل واؤڈا نے کہا کہ شہزاد ایک مفرور بھگوڑا شخص ہے، وہ اپنی پریس کانفرنسز میں کابینہ اجلاس کے منٹس اور کاغذ لہرا رہا ہے، جب کہ وہ سلیکٹڈ تھا اور میں قومی اسمبلی کا الیکٹڈ ممبر تھا، اس کاغذ تک میری بھی رسائی نہیں تھی تو شہزاد اکبر کس حیثیت سے کاغذات لہرا رہا تھا، یہ غیر قانونی اور جرم ہے۔

سابق وزیر نے بتایا کہ کابینہ اجلاس سے ایک روز قبل کچن کیبنٹ میں میری اور شہزاد اکبر کی تلخ کلامی ہوئی تھی، اور میں نے اس وقت کے وزیراعظم سے کہا تھا کہ یہ ایک جھوٹا شخص ہے اس نے کوئی کیس بھی آج تک منطقی انجام تک نہیں پہنچایا، یہ سلطانی گواہ بن جائے گا یا بیرون ملک فرار ہوجائے گا۔

سابق وزیر نے کہا کہ جس روز 190 ملین پاؤنڈ والا معاملہ کابینہ کے سامنے پیش کیا گیا تو اس میں شہزاد اکبر موجود ہی نہیں تھا، جب کہ یہ معاملہ بھی ایجنڈے کا حصہ نہیں تھا تو پھر اتنی جلدی کس چیز کی تھی، اور اگر مہربند لفافہ کابینہ نہیں دیکھ سکتی تو کابینہ کا کیا فائدہ، ہمیں تو یہ بھی نہیں پتہ تھا کہ لفافے میں کچھ تھا بھی یا نہیں، یہ کونسا معاہدہ تھا جو ان لوگوں کو نہیں دکھایا جاسکتا جو ملک چلارہے ہیں، شیریں مزاری نے بھی یہ معاملہ اٹھایا تو انہیں شٹ اپ کال دے دی گئی، اور تین منٹ کے اندر معاملہ حل کرلیا گیا، 190 ملین کیس کا اتنا کلین کام تھا تو ٹرسٹی کیوں بدلے۔

فیصل واوڈا نے کہا کہ یہ المیہ ہے کہ اس ملک میں باپ کیس داخل کرتا ہے اور نسلیں پیشیاں بھگتی ہیں اور فیصلہ نہیں ہوپاتا، لیکن یہ وہ کیسز ہیں جن کی وجہ سے چیئرمین پی ٹی آئی مجھے نہیں لگتا کہ اس الیکشن میں حصہ لے سکیں گے، ہم پیپلزپارٹی اور ن لیگ کو کرپشن کا بادشاہ کہتے تھے، لیکن ہم نے بھی کمی نہیں چھوڑی، صرف ہمیں وقت کم ملا تھا، اگر مل جاتا تو ہم انہیں بھی پیچھے چھوڑ دیتے۔

سابق وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ ایسا نہیں کہ پی ٹی آئی دور میں سب نے کرپشن کی اور پیسہ بنایا، چند لوگ ہیں جو بیرون ملک فرار ہوگئے، یا روپوش ہیں، میں یہ باتیں گزشتہ 3 سال سے کررہا ہوں، جب مجھے نکالا گیا اس وقت تو پارٹی اور چیئرمین بہت مضبوط تھے، ایسا نہیں کہ مجھے پارٹی سے نکالا گیا تو میں ان لوگوں کے خلاف ہوگیا۔

فیصل واوڈا نے کہا کہ میں یہ پھر بتادوں کہ جو چند لوگ اس جماعت میں رہ گئے ہیں یا روپوش ہیں وہ یہی کہہ رہے ہیں کہ چیئرمین پی ٹی آئی کو گرفتار کیا جائے تو ہم بھی باہر نکلیں، پہلے بھی سب نے دیکھا کہ ایک شخص آیا اور اس نے کہا مجھے گولی مار دو میں تحریک انصاف نہیں چھوڑوں گا، اور ایک اور سانپ آیا اور اس نے کہا کہ میں ایسی سوئنگ کھیلوں کہ جانشین بن جاؤں لیکن وہ پکڑا گیا، ایک اور شخص جو بچپن سے چھوٹی شیروانی پہن کر گھومتا ہے اس نے بھی جانشینی لینے کی کوشش کی، سب نالائقوں کی فہرست ہے، لیکن ایک بات سب کو بتادوں چیئرمین پی ٹی آئی گاڑی گرا دیں گے کسی کو گاڑی کو اسٹیئرنگ نہیں دیں گے۔

فیصل واؤڈا نے کہا کہ جنرل (ر) فیض حمید چیئرمین پی ٹی آئی کو گرفتار کرکے مارشل لا لگانا چاہتے تھے اور خود صدام کی طرح 30 سال بیٹھنا چاہتے تھے۔

سابق وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ آئندہ الیکشن میں پی ٹی آئی میں کوئی ٹکٹ لینے والا نہیں ہوگا، اور 20 سال تک کسی جماعت کو سادہ اکثریت بھی نہیں ملے گی، اس عرصے میں اتحادی جماعتیں ہی حکومت کریں گی۔

rubaroo

faisal vawda

pti chairman

Comments are closed on this story.

تبصرے

تبولا

Taboola ads will show in this div