Aaj News

پیر, جون 24, 2024  
17 Dhul-Hijjah 1445  

بلوچستان حکومت کا صوبے کا سیکیورٹی پلان ازسرنو مرتب کرنے کا فیصلہ

حکومت دہشت گردوں اور ان کے سہولت کاروں کا مکمل قلع قمع کرے گی، سرفراز بگٹی
شائع 14 اپريل 2024 08:53pm

وزیر اعلیٰ بلوچستان میر سرفراز بگٹی نے گزشتہ روز نوشکی میں پیش آئے واقعے کے سدباب اور ایسے واقعات کی مکمل روک تھام کے لیے سیکیورٹی پلان کو ازسرنو مرتب کرنے فیصلہ کیا ہے۔

وزیراعلیٰ بلوچستان کی زیرِ صدارت صوبے میں امن و امان کی صورتِ حال سے متعلق اعلیٰ سطحی اجلاس ہوا جس میں نوشکی میں پیش آئے واقعے کی پر زور مذمت کی گئی۔

اجلاس میں سیکیورٹی کو مزید بہتر بنانے کے حوالے سے اہم فیصلے کیے گئے، اس دوران کمشنر اور ڈی آئی جی رخشان ڈویژن نے واقعے کے متعلق تفصیلی بریفنگ دی۔

اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ مستقبل میں ایسے واقعات کی بیخ کنی اور مکمل روک تھام کے لیے سیکیورٹی پلان کو از سر نو مرتب کیا جائے گا۔

اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے سرفراز بگٹی نے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف یہ جنگ صرف سیکیورٹی فورسز کی نہیں بلکہ ہم سب کی مشترکہ جنگ ہے اور بلوچستان کے عوام دہشت گردی کی اس عفریت کے خلاف سیکیورٹی اداروں کے شانہ بشانہ کھڑے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ امن دشمنوں کے خلاف یہ جنگ ریاست کی جنگ ہے اور یہ جنگ سیاست دانوں، سول آرمڈ فورسز، بیورو کریسی، عدلیہ اور میڈیا نے مل کر لڑنی ہے، دہشت گردی کے خلاف ریاست کی جنگ کو سیاسی ذمہ داری اور مشترکہ لائحہ عمل کے ساتھ لڑیں گے۔

وزیر اعلیٰ بلوچستان نے محکمہ داخلہ کو نوشکی میں قتل ہونے والے تمام افراد کو سات دنوں کے اندر معاوضہ ادا کرنے کی ہدایت کی۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ایسے افسوس ناک واقعات کے مکمل تدارک کے لیے سیکیورٹی کے ٹھوس اقدامات ناگزیر ہیں اور حکومت بھی اس حوالے سے اپنی ذمہ داریوں سے آگاہ ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ یہ ریاست کی ذمہ داری ہے کہ وہ اپنے ہر شہری کو تحفظ فراہم کرے، حکومت دہشت گردوں اور ان کے سہولت کاروں کا مکمل قلع قمع کرے گی اور اپنے شہریوں کی حفاظت کو یقینی بنائے گی۔

cm balochistan

sarfaraz bugti

Noshki Massacre