Aaj News

منگل, مئ 28, 2024  
19 Dhul-Qadah 1445  

فوجی اور فاطمہ فرٹیلائزر کو بڑا دھچکا، سبسڈی گیس کی فراہمی میں توسیع کی تجویز مسترد

وزارت صنعت و پیداوار کی تجویز پیش کی تھی، دونوں پلانٹس کو سبسڈی گیس ملنے سے وزارت کو ماہانہ 3.8 ارب روپے کا بوجھ پڑتا
اپ ڈیٹ 14 مئ 2024 09:35am

اسلام آباد: وزارت خزانہ نے مالی مجبوریوں کی وجہ سے فوجی اور فاطمہ فرٹیلائزر پلانٹس کیلیے سبسڈی بڑھانے سے انکار کر دیا

واضح رہے کہ 7 مئی کو وزارت صنعت و پیداوار (ایم او آئی اینڈ پی) نے ایس این جی پی ایل پر مبنی یوریا کھاد کے دو پلانٹس کو سبسڈی گیس کی فراہمی میں مزید 6 ماہ کی توسیع کی تجویز پیش کی تھی۔ تجویز منظور ہونے کے بعد دونوں پلانٹس کو 30 ستمبر 2024 تک سبسڈی گیس ملنے کا امکان تھا۔

اس حوالے سے نئی پیش رفت سامنے آئی ہے ۔ بزنس ریکارڈر کی رپورٹ کے مطابق دو فرٹیلائزر پلانٹس کو سبسڈی والے نرخوں پر آر ایل این جی کی فراہمی سے ماہانہ 3.8 ارب روپے کا بوجھ برداشت کرنے پڑتا۔

خیال رہے کہ ایف آر سی نے مندرجہ ذیل سفارشات کی تھی: (i) وزارت ایس این جی پی ایل پر مبنی پلانٹس کے آپریشنز میں 31 مارچ 2024 سے آگے توسیع کے لیے سمری بھیجے گی؛ (ii) پیٹرولیم ڈویژن یوریا/DAP کھاد کی زیادہ سے زیادہ پیداوار کو برقرار رکھنے کے لیے فوجی فرٹیلائزر کمپنی لمیٹڈ (ایف ایف بی ایل) کو زیادہ سے زیادہ گیس پریشرفراہم کرنے کو یقینی بنائے گا۔

کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی (ای سی سی) نے 7 فروری 2024 کے اپنے فیصلے میں ایس این SNGPL پر مبنی دو پلانٹس کو ایک ہزار 239 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو کے گیس ریٹ پر چلانے کی اجازت دینے کا فیصلہ کیا تھا۔

پاکستان

LNG

Gas