Aaj News

بدھ, جون 12, 2024  
05 Dhul-Hijjah 1445  

کرغزستان میں مقامی اور غیرملکی طلبہ میں ہنگامہ آرائی، ’کوئی پاکستانی جاں بحق نہیں ہوا‘

ہاسٹلز پر حملے، پاکستانی سفیر کی طلبہ کو رہائش گاہوں تک محدود رہنے کی ہدایت
اپ ڈیٹ 18 مئ 2024 03:10pm

کرغزستان کے دارالحکومت بشکیک میں طلبہ گروہوں کے درمیان ہونے والی ہنگامہ آرائی اور ڈنڈوں سے کئے گئے حملوں کی زد میں پاکستانی طلبہ بھی آگئے ہیں۔ خیبرپختونخوا کے مشیر اطلاعات کے مطابق 3 پاکستانی جاں بحق ہوگئے ہیں، تاہم، کرغزستان میں موجود پاکستانی سفارت خانے کسی بھی پاکستانی کے مارے جانے کی تردید کی ہے۔

بشکیک میں تشدد کے واقعات میں پاکستانی طلبہ تشویش کا شکار ہیں۔ پاکستانی طلبہ کے ہاسٹلز پر حملے میں متعدد طلبہ کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں۔

ایک پاکستانی طالبعلم کا کہنا تھا کہ پاکستانی طالبات کو ہراساں کیا جارہا ہے۔ ہوسٹل میں لڑکوں اور لڑکیوں پرتشدد کیا گیا۔ کرغز طلبہ پورے بشکیک میں غیرملکی طلبہ وطالبات پر حملے کر رہے ہیں۔

خیبرپختونخوا کے مشیر اطلاعات بیرسٹر سیف نے کہا کہ حملوں میں تین پاکستانی طالب علم شہید ہونے کی اطلاعات ہیں۔

آج نیوز آزادانہ طور پر ان اموات کی تصدیق نہیں کر سکا۔

دوسری جانب پاکستانی سفیر نے کسی بھی پاکستانی طالبعلم کے جاں بحق ہونے کی تردید کی ہے، تاہم، بنا کوئی تعداد بتائے زخمیوں کی تصدیق کی ہے۔

بیرسٹر سیف کے مطابق کرغزستان میں 10 ہزار پاکستانی زیر تعلیم ہیں۔

پاکستانی طلبہ کے مطابق جھگڑا کرغز طالب علموں کی جانب سے مصری طالبات کو ہراساں کرنے پر شروع ہوا جس کے بعد ہنگامے پھوٹ پڑے، مشتعل افراد کے طلبہ پر تشدد کی ویڈیوز سوشل میڈیا پر وائرل ہوگئیں۔

کرغرستان میں تعینات پاکستانی سفیر نے پاکستان طلبہ کے لیے ہدایت نامہ جاری کردیا، جس میں کہا گیا ہے کہ حالات معمول پر آنے تک پاکستانی طلبہ گھروں پر رہیں، سفارت خانہ مقامی قانون نافذ کرنے والے اداروں سے رابطے میں ہے۔

پاکستانی سفیر نے اپنے بیان میں کہا کہ طلبہ کی حفاظت یقینی بنانے کیلئے اقدامات کررہے ہیں۔

ادھر ترجمان دفتر خارجہ ممتاز زہرہ بلوچ نے کہا کہ کرغزستان میں پاکستانی سفارتخانے کا پیغام موصول ہوا ہے۔ پاکستانی سفارتخانہ کرغز حکام سے رابطے میں ہے۔

ترجمان دفترخارجہ نے اپنے بیان میں کہا کہ پاکستانیوں کی حفاظت انتہائی اہمیت کی حامل ہے۔

پاکستانی سفیر کی کرغز نائب وزیر خارجہ کی ملاقات اس حوالے سے پاکستانی سفیر حسن ضیغم نے کرغزستان کے نائب وزیرِ خارجہ سے بھی ملاقات کی ہے، حسن ضیغم نے خدشات سے کرغز نائب وزیر خارجہ کو آگاہ کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ کرغز حکومت پاکستانی شہریوں کے تحفظ کو ترجیح دے۔

کرغز نائب وزیر خارجہ نے پاکستانی سفیر کو بتایا کہ کرغز حکام نے صورتحال پر قابو پالیا ہے، پولیس ہاسٹلز کو سیکیورٹی فراہم کررہی ہے، اس معاملے کی براہ راست نگرانی کرغز صدر کر رہے ہیں۔

نائب وزیر خارجہ الماز نے سفیر کو یقین دلایا کہ کرغزستان کی حکومت کل کے حملے کے مجرموں کے خلاف قانونی کارروائی کرے گی۔

انہوں نے بتایا کہ کچھ پاکستانیوں سمیت چودہ غیر ملکی شہریوں کو ابتدائی طبی امداد فراہم کر دی گئی ہے، ایک پاکستانی شہری زیر علاج ہے۔

Pakistani Students

Kyrgyzstan

Kyrgyzstan Clash