Aaj News

اتوار, جون 23, 2024  
16 Dhul-Hijjah 1445  

سابق گورنر سندھ عشرت العباد نے پاکستان آنے کا فیصلہ کرلیا

اب محسوس ہوتا ہے کہ مجھے فعال ہونا چاہیئے، سابق گورنر کی صحافیوں سے گفتگو
اپ ڈیٹ 24 مئ 2024 08:13pm

سابق گورنر سندھ عشرت العباد نے پاکستان آنے کا فیصلہ کرلیا، کراچی کے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ فیصلہ کرلیا پاکستان آنا ہے اور آ کر کچھ کرنا ہے، کب آنا ہے اور کیسے آنا ہے بس ٹائمنگ دیکھنی ہے۔

کراچی کے مقامی ہوٹل میں سینئر صحافیوں سے ملاقات کے بعد ویڈیو لنک کے ذریعے گفتگو کرتے ہوئے سابق گورنر سندھ عشرت العباد نے اب محسوس ہوتا ہے کہ مجھے فعال ہونا چاہیئے، مجھے کئی سال تک لوگوں کی خدمت کا موقع ملا، میں اپنے دوستوں سے مشاورت کرتا رہا ہوں، میں ملک سے جانے کے بعد ملک کے لیے دعاگو رہا ہوں، کب آنا ہے اس کےلیے وقت ضروری ہے۔

سابق گورنر سندھ نے مزید کہا کہ مجھے جو بھی کرنا ہے پاکستان آکر ہی کرنا ہے، واپس آنے کے بارے میں مناسب وقت پر تفصیل بتاؤں گا۔

عشرت العباد نے کہا کہ دو راستے ہیں یا خاموش تماشائی بن جاؤں یا کچھ کروں، موجودہ حالات میں ملک کے لیے کچھ کرنا چاہتا ہوں، ملاقاتیں جاری ہیں اور سنجیدگی سے بات چیت چل رہی ہے جبکہ شاہد خاقان عباسی اور مفتاح اسماعیل سے بات ہوئی ہے۔

ایک سوال پر ان کا کہنا تھا کہ جلا وطن نہیں ہوں اپنی مرضی سے ملک سے باہر ہوں، میرے دوبارہ سیاست میں واپس آنے سے دوستوں کو خوف ہے، بابر غوری کی واپسی سے دوستوں کو پروجیکٹ خراب ہونے کا خدشہ تھا، ایم کیو ایم گروپوں کے ضم ہونے سے کئی لوگ غیر فعال ہوگئے، میں آتا تو دوست پتا نہیں کیا کیا سوچتے اس لیے نہیں آیا، وہ نہیں چاہ رہے تھے کہ میں ایم کیو ایم میں شامل ہوں۔

سابق گورنر سندھ نے کہا کہ ’پی ایس پی بنانے میں کوئی کردار نہیں، اتنا غلط مشورہ نہیں دے سکتا، ایم کیو ایم میری منزل نہیں ہے، نہ اسٹیبلشمنٹ کی مجھے کوئی ضرورت جبکہ واپسی کا مقصد سیاسی استحکام، ترقیاتی کام اور بیرونی سرمایہ کاری لانا ہے۔‘

انہوں نے کہا کہ ’2016 میں آصف زرداری نے کہا ہمارا پلیٹ فارم حاضر ہے، معذرت کی کہ پیپلزپارٹی میں آیا تو نہ آپ کے کام کا رہوں کا نہ اپنے کام کا جبکہ کسی کو ناراضی ہے تو دور کرلے، معافی درکار ہے تو وہ بھی مانگ لوں گا۔‘

ان کا کہنا تھا کہ پی ٹی آئی، حکومت، عدلیہ اور اسٹیبلشمنٹ کی اپنی اپنی پوزیشن ہے، دیکھنا ہے کہ کون اپنی پوزیشن میں تبدیلی لاتا ہے، اسٹیبلشمنٹ ملک کی اندرونی اور بیرونی سیکیورٹی کو دیکھتی ہے اور ملک کے لیے کہیں بھی ضرورت نظر آتی ہے تو اسٹیبلشمنٹ مداخلت کرتی ہے۔

ڈاکٹر عشرت العباد نے کہا کہ اسٹیبلشمنٹ پرو ریاست ہے اور صرف ریاست کا سوچتی ہے، میں نے اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ کام کیا ہے، اسٹیبلشمنٹ کے لیے کام نہیں کیا۔

ایک سوال پر انہوں نے مزید کہا کہ الیکشن 2024کے نتائج الارمنگ ہیں، پی ٹی آئی تحفظات کے باوجود ملک کا سوچے اور آگے بڑھے کیونکہ جہاں عدم استحکام ہو وہاں غیر سیاسی عناصر جگہ بنالیتے ہیں۔

karachi

former governor sindh

ishrat ul ebad