Aaj News

شمالی کوریا کی “خودکار اور فوری” جوہری حملے کی وارننگ

دنیا بھر کے رہنماؤں کے اندیشوں کی تصدیق ہو گئی ہے کہ اگر شمالی کوریا اکسایا گیا تو وہ اپنے بڑے ہتھیاروں کو استعمال کرے گا۔
شائع 10 ستمبر 2022 06:45pm
<p>تصویر بزریعہ جاپان ٹائمز</p>

تصویر بزریعہ جاپان ٹائمز

خفیہ ریاست شمالی کوریا کے سربراہ کِم جونگ اُن کی جانب سے ایک خوفناک “نیوکلئیر جنگ” کی وارننگ جاری کی گئی ہے، جس سے دنیا بھر کے رہنماؤں کے اندیشوں کی تصدیق ہو گئی ہے کہ اگر شمالی کوریا اکسایا گیا تو وہ اپنے بڑے ہتھیاروں کو استعمال کرے گا۔

پیانگ یانگ کی پارلیمنٹ نے حکم دیا ہے کہ شمالی کوریا کو اپنے سپریم لیڈر کم جونگ اُن کی حفاظت کے لیے “خودکار اور فوری طور پر” جوہری حملوں کا استعمال کرنے کا حق حاصل ہے۔

مذکورہ نئی قانون سازی امریکہ کی طرف سے کئی دہائیوں سے ریاست پر اپنے جوہری ہتھیاروں کو ترک کرنے کے لیے دباؤ ڈالنے کی کوشش کے باوجود منظور کی گئی ہے۔

اس قانون کا مقصد جنوبی کوریا کی “کِل چین” حکمت عملی کا مقابلہ کرنا بھی ہے، جو سیول کو اجازت دیتا ہے کہ اگر شمالی کوریا کو کسی جوہری حملے کا شبہ ہو تو وہ پہلے ہی حملہ کر سکتا ہے۔

کم جونگ ان نے سپریم پیپلز اسمبلی کو بتایا کہ، “امریکہ کا مقصد صرف ہمارے جوہری ہتھیاروں کو ختم کرنا نہیں، بلکہ شمالی کوریا کو جوہری ہتھیار ترک کرنے پر مجبور کرکے کسی بھی وقت ہماری حکومت کو گرانا ہے، جس سے ہمارے دفاع کو استعمال کرنے کی طاقت کمزور ہوجائے۔”

“جوہری ہتھیاروں کی پالیسی کی قانون سازی کرنے کی سب سے زیادہ اہمیت یہ ہے کہ ایک ناقابل واپسی لکیر کھینچی جائے تاکہ ہمارے جوہری ہتھیاروں پر کوئی سودے بازی نہ ہو سکے۔”

تاہم، یہ اقدام اس وقت سامنے آیا ہے جب ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ شمالی کوریا جوہری تجربہ دوبارہ شروع کرنے کے لیے تیار نظر آرہا ہے، جس سے پیانگ یانگ 2017 کے بعد پہلی بار اپنے ہتھیاروں کی صلاحیتوں میں اضافہ کرے گا۔

2018 میں سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور دیگر عالمی رہنماؤں کے ساتھ تاریخی سربراہی ملاقاتیں کِم کو اپنے ہتھیاروں کی تیاری کو آگے بڑھانے سے روکنے میں ناکام رہیں۔

یہ قانون 2013 کی پچھلی پالیسی کی جگہ لیتا ہے، جو بہت کم وسیع تھی، جس کے مطابق شمالی کوریا کسی دشمن جوہری ریاست کے حملے یا حملے کو پسپا کرنے کے لیے صرف جوہری ہتھیاروں کو تعینات کرے گا۔

ایسا لگتا ہے کہ یہ قانون ملک کو بغاوت کرنے اور حکومت کی تبدیلی کے لیے بیرونی ممالک کی کوششوں سے بچانے کے لیے لکھا گیا ہے۔

امریکی فوج کے مطابق، شمالی کوریا کے پاس 60 تک جوہری ہتھیار اور 5000 ٹن کیمیائی ہتھیاروں کا ذخیرہ ہے۔

یہ حسابات 2020 میں امریکی فوج کے محکمہ کی ایک رپورٹ کے حصے کے طور پر کیے گئے تھے، جسے شمالی کوریا کی حکمت عملی کہا جاتا ہے۔

تحقیق میں مزید کہا گیا ہے کہ شمالی کوریا 2,500 سے 5,000 ٹن اور 20 مختلف اقسام کے ساتھ مبینہ طور پر کیمیائی ایجنٹس کا تیسرا سب سے بڑا مالک ہے۔

North Korea

Kim Jong Un

nuclear weapons

Nuclear war

Comments are closed on this story.