Aaj News

منگل, مئ 28, 2024  
19 Dhul-Qadah 1445  

’سمندر میں دفن مردہ مخلوق زلزلے پیدا کرسکتی ہے‘

ٹیکتونک پلیٹوں کے بیچ پھنسے یہ جاندار کتنی شدت کا زلزلہ پیدا کرسکتے ہیں؟
شائع 15 اکتوبر 2022 08:28pm
تصویر: شٹر اسٹاک
تصویر: شٹر اسٹاک

آٹھ یا اس سے اوپر کی شدت کے زلزلے ’میگا تھرسٹ‘ کہلاتے ہیں اور نئی تحقیق سے پتہ چلا ہے کہ چھوٹی، قدیم سمندری حیاتیات ان زلزلوں پر بڑا اثر ڈال سکتے ہیں۔

نیوزی لینڈ کے ہیکورنگی سبڈکشن زون کا مطالعہ کرنے والے محققین نے پایا ہے کہ دسیوں ملین سال پہلے واحد خلیے والے سمندری جانداروں کے پیچھے چھوڑے گئے کیلسائٹ کے ذخائر بحرالکاہل اور آسٹریلیا کی پلیٹ کے درمیان حرکت اور رگڑ کی سطح کو کنٹرول کر سکتے ہیں۔

اس کا انحصار اس بات پر ہے کہ آیا یہ کیلسائٹ قابل تحلیل ہیں یا نہیں، اگر یہ کیلسائٹ چائے میں چینی کی طرح حل پذیر ہوتے ہیں تو ٹیکٹونک پلیٹیں ایک دوسرے پر زیادہ آسانی سے پھسل سکتی ہیں۔ اگر ایسا نہیں ہوتا تو یہ پلیٹ کی نقل و حرکت کو روک دیتے ہیں اور انرجی کو بند کر دیتے ہیں جو بعد میں اچانک پھٹ جانے سے خارج ہوتی ہے۔

کیلسائٹ کیا ہوتے ہیں؟

کیلسائٹ اکثر سمندری جانداروں کے خولوں کا بنیادی جزو ہوتا ہے، جیسے کہ پلانکٹن (مثلاً کوکولیتھس اور پلانکٹک فورامینیفیرا)، سرخ طحالب کے سخت حصے، کچھ سپنج، بریچیپوڈس، ایکینوڈرمز، کچھ سرپولڈس، زیادہ تر برائوزووا، اور خول کے کچھ حصے۔ کچھ بائی والوز (جیسے سیپ اور روڈسٹ) وغیرہ۔

کیلسائٹ کس طرح زلزلوں کو متاثر کرتے ہیں؟

نیوزی لینڈ کی وکٹوریہ یونیورسٹی آف ویلنگٹن کی ٹی ہیرینگا واکا سے تعلق رکھنے والی ساختی ماہر ارضیات کیرولین بولٹن کا کہنا ہے کہ ”کیلسائٹ اس وقت تیزی سے گھلتی ہیں جب ان پر بہت زیادہ دباؤ ہوتا ہے اور جب درجہ حرارت ٹھنڈا ہوتا ہے۔“

”یہ کم درجہ حرارت پر زیادہ آسانی سے پگھلتی ہے، لیکن درجہ حرارت بڑھنے کے ساتھ ساتھ اس کا گھلنا مشکل ہو جاتا ہے، جسیے کہ زمین کی گہرائی میں۔“

سبڈکشن زون کی گہرائیوں میں، درجہ حرارت بتدریج گہرائی کے ساتھ بڑھتا ہے، جو ہر کلومیٹر کے لیے تقریباً 10 ڈگری سینٹی گریڈ تک گرم ہوتا جاتا ہے۔

کیلسائٹ کے گولے جو سطح کے نیچے تک تحلیل ہونے میں ناکام رہتے ہیں، فالٹ لائن (دو زمینی پلیٹوں کے ملاپ کی جگہ) کی نقل و حرکت پر اہم اثر ڈال سکتے ہیں۔ فالٹ تک پہنچنا خود مشکل ہے اور اس تک رسائی کے لیے ڈرلنگ کے مہنگے آلات کی ضرورت ہوتی ہے، اس لیے محققین ایک مقامی ساحلی پٹی پر چونے کے پتھر، مٹی کے پتھر اور سلٹ اسٹون کی بے نقاب تہوں کو ایک پراکسی کے طور پر استعمال کر رہے ہیں۔

نیوزی لینڈ کے شمالی جزیرے پر مارٹنبرو کے جنوب مشرق کی چٹانوں میں سمندری جانداروں کے کیلسائٹ ہوتے ہیں جو بنیادی طور پر ایک قسم کی سیپی ہوتے ہیں جسے فورامنیفیرا کہا جاتا ہے۔

بولٹن کہتی ہیں کہ ان کیلسائٹ کا کتنا حصہ سبڈکشن زون میں ہے اور ان جانداروں سے کیلسائٹ کی مقدار اور سلوک اس پہیلی کا ایک بڑا حصہ ہے کہ اگلا زلزلہ کتنا بڑا ہو سکتا ہے۔“

ماہرین ارضیات ہیکورنگی سبڈکشن زون کے بارے میں نیوزی لینڈ کے دیگر فالٹس کے مقابلے میں کم جانتے ہیں کیونکہ اس کا قریب سے جائزہ نہیں لیا جا سکتا۔

پچھلے زلزلوں کا ریکارڈ اتنا جامع نہیں ہے، اور اس کی حالت کا علم اتنا مکمل نہیں ہے، جس کی وجہ سے اگلے بڑے زلزلے کی پیش گوئی کرنا مشکل ہو جاتا ہے۔

محققین کا کہنا ہے کہ اس فالٹ کے ساتھ اگلے 50 سالوں میں ایک بڑے زلزلے کے 26 فیصد امکانات ہیں، جو ایک بڑا سونامی پیدا کر سکتا ہے۔

تمام قسم کے عوامل کام کر رہے ہیں، لیکن مطالعہ سے پتہ چلتا ہے کہ پلیٹ کی حرکت کس طرح سست اور ہلکی، یا تیز اور بڑی ہو سکتی ہے اور ہم پانی کے اندر کیلسائٹس کی تعمیر کے بارے میں جتنا زیادہ جانتے ہیں، ہم اتنا ہی بہتر طریقے سے پتہ لگانے کے قابل ہو جائیں گے کہ آگے کیا ہونے والا ہے۔

ڈاکٹر کیرولین بولٹن کا کہنا ہے کہ ”ذرا سوچیں، یہ چھوٹے، لمبے مردہ جاندار اس بات کو متاثر کر سکتے ہیں کہ کس طرح دو بڑی ٹیکٹونک پلیٹیں میکانکی طور پر بات چیت کرتی ہیں۔“

Calcite

Earthquakes