Aaj News

ہفتہ, مارچ 02, 2024  
20 Shaban 1445  

خصوصی عدالتوں پر بینچ بننے سے پہلے دو سینئر وکلا چیف جسٹس سے ملے، رانا ثناء اللہ

سماعت کے دوران وکیل کے منہ سے نکلا،"چیف جسٹس صاحب ہم نے آپکو پہلے ہی کہا تھا فل بینچ بنا دیں"
اپ ڈیٹ 23 جون 2023 04:40pm
رانا ثنا اللہ
رانا ثنا اللہ

وفاقی وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ نے کہا ہے کہ آئین کے تحت خصوصی عدالتوں کے قیام کیخلاف درخواستوں پر سماعت سے پہلے دو سینئر وکلا چیف جسٹس آف پاکستان سے ملے اور اس بات کا ثبوت یہ ہے کہ جمعرات کو سماعت کے دوران جب ججز نے بینچ میں بیٹھنے سے انکار کیا تو وکیل کے منہ سے نکلا کہ، ”چیف جسٹس صاحب ہم نے پہلے ہی آپ سے کہا تھا کہ فل بینچ بنا دیں۔“

پارلیمنٹ میں اظہارخیال کرتے ہوئے رانا ثناء اللہ نے کہا کہ سینئر وکلا اور چیف جسٹس کی ملاقات کے دوران مبینہ طور پر اس بات پر تبادلہ خیال ہوا کہ کون سا بینچ بنایا جائے اور اسی ملاقات میں یہ بھی طے پایا کہ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی چونکہ ملٹری کورٹس کے بارے میں رائے پائی جاتی ہے لہذا انہیں بھی بینچ میں شامل کرلیا جائے، ورنہ پچھلے 16 ماہ میں انہیں چیف جسٹس نے اپنے ساتھ بینچ میں کبھی شامل نہیں کیا۔

رانا ثناء االلہ نے کچھ عرصہ قبل سامنے آنے والی آڈیو لیکس کا بھی حوالہ دیا جس میں پی ٹی آئی کے وکیل خواجہ طارق رحیم اور صحافی قیوم صدیقی ایک دن بعدآنے والے فیصلے کے بارے میں بات کر رہے ہیں اور فیصلہ وہی آتا ہے جو خواجہ طارق رحیم بتاتے ہیں۔

رانا ثنا اللہ نے ایک اور آڈیو کا حوالہ بھی دیا جس میں چیف جسٹس کی ساس عمران خان کے لیے دعا کا ذکر کررہی ہیں۔ انہوں نےکہا کہ، ’حالانکہ عمران خان کے جلسے میں کبھی دعائیں نہیں کی گئیں، صرف ڈانس کیے گئے ہیں۔‘

وفاقی وزیرداخلہ نے 14 مئی کو پنجاب میں الیکشن کے حوالے سے فیصلے پر بھی سوال اٹھایا اور کہاکہ سپریم کورٹ کے فیصلوں پر عمل ہونا چاہیے لیکن جب مرضی کے بینچ بنا کر مرضی کے فیصلے کرائے جائیں گے تو ان فیصلوں کی اخلاقی قوت نہیں ہوتی۔ عدلیہ کے فیصلوں کی طاقت شفافیت، غیرجانبداری اور اس میں ہے کہ پوری قوم یہ سمجھے کہ یہ فیصلے انصاف کی بنیاد پر ہو رہے ہیں۔

انہوں نے کہاکہ 14 مئی کے فیصلے سے پہلے پورے ملک کے ہر ادارے نے ہاتھ جھوڑ کر چیف جسٹس سے استدعا کی کہ فل بینچ بنا دیں اور فل بینچ میں جو فیصلہ کیا جائے اس کو پوری قوم تسلیم کرے گی لیکن فل بینچ نہیں بنایا گیا۔

وزیر داخلہ نے کہا کہ جمعرات کو 9 رکنی بینچ بیٹھا، دو سینئر ججز نے اعتراض کیا اور واضح کیا کہ وہ اس بینچ سے الگ نہیں ہو رہے لیکن جب تک پریکٹس اینڈ پروسیجر بل کا فیصلہ نہیں ہوتا تو وہ بینچ میں نہیں بیٹھیں گے لیکن ٹھیک 31 منٹ بعد 7 رکنی بینچ دیا گیا، حالانکہ ایک مرتبہ بینچ بننے کے بعد چیف جسٹس کسی جج کو الگ نہیں کر سکتے۔

رانا ثناء للہ نے اس حوالے سے عجلت پر سوال اٹھائے۔

انہوں نے کہاکہ ماضی کے بابا رحمتے نشان عبرت بنے ہوئے ہیں، ان کے بیٹے نے ٹکٹوں کی تقسیم میں رقم لی اور جب پارلیمانی کمیٹی نے انہیں طلب کیا تو اس کے خلاف حکم امتناع جاری کردیا گیا اور 16 اگست کی تاریخ ڈالی گئی۔

رانا ثنا اللہ نے کہاکہ ہم آج جس بحران سے دوچار ہیں اس سے نہ نکلنے کی ایک وجہ یہ ہے کہ ہماری عدالتیں اور ججز انصاف نہیں کر رہے بلکہ وہ ’ان لاز (سسرالیوں) ’ کا شکار ہیں۔ کسی جگہ مدر ان لا کا معاملہ ہے اور کسی جگہ سن ان لا (داماد) ہے۔

رانا ثنا للہ نے پنجاب میں ہونے والے فیصلوں کا حوالہ دیا جہاں ان کے بقول ایک سن ان لا موجود تھے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ’جب یہ معاملات ہوں گے تو پھر یہ بات کہ ملٹری کورٹس میں سویلین کا ٹرائل نہیں ہوسکتا، بھئی اگر آرمی ایکٹ کے تحت کسی کا ٹرائل نہیں ہوسکتا تو اس کو ختم کردیں۔‘

وزیر داخلہ نے کہاکہ جب کوئی شخص خواہ وہ یونیفارم میں ہو یا سویلین جب وہ کسی دفاعی تنصیبات پر حملہ آور ہوگا تو اس کا ٹرائل آرمی ایکٹ کے تحت ہوگا۔

رانا ثنا اللہ نے کہاکہ ایک ایسا بینچ جو یہ فیصلہ کرنے جا رہا ہے، اس کے متعلق اسی عدالت کے دو سینئر ججز اور نامزد چیف جسٹس نے کہا ہے کہ یہ عدالت نہیں ہے، یہ قانون اور عدالت کے مطابق بینچ نہیں ہے، یہ بینچ غیر قانونی، غیرآئینی ہے۔

وزیرداخلہ نے کہاکہ ہوسکتا ہے بینچ کے مزید اراکین الگ ہوجائیں لیکن بینچ بضد ہے کہ اس نے فیصلہ کرنا ہے۔

کھیل میں بچوں کے رونا ڈالنے کا حوالہ دیتے ہوئے رانا ثنا اللہ نے کہا کہ اس طرح تو بچے بھی ’روند‘ نہیں مارتے۔

وزیرداخلہ رانا ثناء اللہ نے ایوان کوبتاہا کہ یونان میں ڈوبنے والی کشتی میں 700 نوجوانوں کو سوار کروایا گیا تھا جبکہ گنجائش 400 افراد کی تھی، حادثے میں جاں بحق ہونے والے پاکستانیوں کی تعداد 350 ہے جبکہ 281 خاندانوں نے حکومت سے رابطہ کیا، متاثرہ خاندانوں کی مدد کیلئے ڈیسک قائم کر دیے گئے، وزیراعظم شہباز شریف نے معاملے پر کمیٹی تشکیل دے دی ہے۔

Chief Justice

Rana Sanaullah

Supreme Court of Pakistan

Comments are closed on this story.

تبصرے

تبولا

Taboola ads will show in this div