Aaj News

ہفتہ, اپريل 13, 2024  
04 Shawwal 1445  

اسرائیل غزہ جنگ شروع ہونے کے بعد امریکہ میں مسلمانوں پر حملوں میں ریکارڈ اضافہ

8061 میں سے تقریباً 3600 حملے کے واقعات اکتوبر سے دسمبر تک یعنی اسرائیل کے غزہ پر حملے کے بعد رونما ہوئے
شائع 02 اپريل 2024 10:13pm

امریکہ میں مسلمانوں اور فلسطینیوں کے خلاف رپورٹ شدہ امتیازی سلوک اور حملے 2023 میں تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچنے کا انکشاف ہوا ہے، جو کہ بڑھتے ہوئے اسلامو فوبیا اور تعصب کی نشانی ہے۔

امریکہ میں2023 میں اس طرح کی شکایات کی کل تعداد 8,061 تھی، جو پچھلے سال کے مقابلے میں 56 فیصد زیادہ ہے۔ یہ تعداد تقریباً 30 سال قبل کونسل آن امریکن اسلامک ریلیشنز (سی اے آئی آر) کے ریکارڈ کے آغاز کے بعد سے بھی سب سے زیادہ ہے۔

”سی اے آئی آر“ کا کہنا ہے کہ ان 8061 میں سے تقریباً 3600 واقعات اکتوبر سے دسمبر تک یعنی اسرائیل کے غزہ پر حملے کے بعد رونما ہوئے ہیں۔

انسانی حقوق کے حامیوں نے اسی طرح مشرق وسطیٰ میں تازہ ترین تنازعات کے پھوٹ پڑنے کے بعد سے اسلامو فوبیا، فلسطین مخالف تعصب اور سام دشمنی میں عالمی سطح پر اضافے کی اطلاع دی ہے۔

امریکی واقعات میں اکتوبر میں الینوائے میں چھ سالہ فلسطینی نژاد امریکی وڈیہ الفیوم کو چاقو مارنا، نومبر میں ورمونٹ میں تین فلسطینی نژاد طالب علموں کو گولی مار کر ہلاک کرنا اور فروری میں ٹیکساس میں ایک فلسطینی امریکی شخص کو چھرا گھونپنا شامل ہیں۔

”سی اے آئی آر“ کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ 2022 میں شکایات میں پہلی بار سالانہ کمی کے بعد 2023 میں ”مسلم مخالف نفرت کی بحالی“ دیکھنے میں آئی۔ 2023 کے پہلے نو مہینوں میں، اس طرح کے واقعات اوسطاً 500 ماہانہ تھے، اس سے پہلے کہ یہ تعداد تقریباً 1200 ماہانہ تک پہنچ گئی تھی۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اسلامو فوبیا کی اس لہر کے پیچھے بنیادی محرک اکتوبر 2023 میں اسرائیل کے فلسطین میں حملوں میں اضافہ تھا۔

”سی اے آئی آر“ نے کہا کہ 2023 میں سب سے زیادہ شکایات امیگریشن اور پناہ، روزگار میں امتیاز، نفرت پر مبنی جرائم اور تعلیمی امتیاز کے زمرے میں تھیں۔

”سی اے آئی آر“ نے کہا کہ اس نے عوامی بیانات اور ویڈیوز کے ساتھ ساتھ عوامی کالز، ای میلز اور ایک آن لائن شکایتی نظام کی رپورٹس کا جائزہ لے کر نمبر مرتب کیے ہیں۔ اس نے ان لوگوں سے رابطہ کیا جن کے واقعات میڈیا میں رپورٹ ہوئے۔

US

Gaza

Anti Muslim Incidents

Comments are closed on this story.

تبصرے

تبولا

Taboola ads will show in this div