Aaj News

پیر, جولائ 15, 2024  
08 Muharram 1446  

تمباکو مصنوعات پر ڈیوٹی میں اضافے سے لاکھوں لوگوں کو سگریٹ نوشی چھوڑنے پر مجبور کیا جانا ممکن

اس طرح حکومت لاکھوں شہریوں کی جانیں بچانے کے ساتھ ساتھ 37.7 ارب روپے کی اضافی آمدن بھی حاصل کر سکتی ہے
شائع 05 مئ 2024 06:41pm

سوشل پالیسی ڈویلپمنٹ سینٹر (ایس پی ڈی سی) نے تمباکو کی مصنوعات پر فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی (FED) میں 37 فیصد اضافے کی تجویز دی ہے تاکہ محصولات وصولی میں مزید اضافہ کر کے اس آمدن کو صحت عامہ کے اخراجات پر لگایا جاسکے۔

عالمی ادارہ برائے صحت اور سی ٹی ایف کے کے اشتراک سے تیار کیے گئے انسٹیٹیوٹ کے جاری کردہ پالیسی پیپر میں کہا گیا ہے کہ ایف ای ڈی میں 37 فیصد اضافہ کر کے 757,000 لوگوں کو سگریٹ نوشی چھوڑنے پر مجبور کیا جاسکتا ہے، اس طرح حکومت پاکستان 265,000 شہریوں کی جانیں بچانے کے ساتھ ساتھ 37.7 ارب روپے کی اضافی آمدن بھی حاصل کر سکتی ہے۔

یہ تجویز ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب حکومت اپنے بجٹ کے ایجنڈے کی تیاری کر رہی ہے، جس میں تمباکو پر ٹیکس اصلاحات کے ذریعے صحت عامہ اور معاشی خوشحالی کو ترجیح دی جائے گی۔

ایس پی ڈی سی کا کہنا ہے کہ اگر ایف ای ڈی شرح میں اضافہ کا رجحان برقرار نہیں رکھا گیا تو یہ آمدنی اور صحت عامہ کی کوششوں دونوں پر منفی اثر ڈال سکتا ہے۔

بین الاقوامی معیارات کے مطابق قیمتوں پر ٹیکس کا شئیر 70 فیصد تک لے جانے کے لیے ایف ای ڈی کو مزید ایڈجسٹ کیا جانا چاہیے، ساتھ ہی ساتھ اکانومی اور پریمیم برانڈز کے لیے بالترتیب ایف ای ڈی کا حصہ 54 فیصد یا 154 روپے اور 72.1 فیصد یا 452 روپے تک لے جانے تجویز بھی پالیسی پیپر کا حصہ ہے۔

ٹیکس کی سابقہ ایڈجسٹمنٹ سے تمباکو نوشی کی شرح میں واضح کمی آئی ہے اور حکومت کو مالی فوائد ملے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق جولائی 2023 سے جنوری 2024 تک محصولات وصولی 122 ارب روپے تک پہنچ گئی ہے اور سال کے آخر تک یہ وصولی 200 ارب روپے سے زائد ہونے کی توقع ہے۔

ریونیو اکٹھا کرنے کے علاوہ تمباکو نوشی کی شرح کو کم کرنے اور پاکستان میں تمباکو نوشی سے متعلق بیماریوں کی وجہ سے صحت پر آنے والے کل اخراجات کے 17.8 فیصد کی ممکنہ طور پر تلافی کرنے میں مدد ملی ہے۔

یہ دلیل کہ ایف ای ڈی میں اضافے سے غیر قانونی تجارت میں اضافہ ہوگا، اس کا جواب دیتے ہوئے ایس پی ڈی سی نے کہا کہ تحقیق سے ثابت ہوتا ہے کہ اس دلیل میں تجرباتی حمایت کا فقدان ہے جس کا ثبوت یہ ہے کہ تمباکو کمپنیاں ٹیکس پالیسیوں پر اثر انداز ہونے اور ٹیکس سے بچنے کے لیے پیداواری اعداد و شمار میں ہیرا پھیری کرتی ہیں۔

اس کے علاوہ، ٹریک اینڈ ٹریس سسٹم سے جعل سازی کو کم کرنے، غیر قانونی تجارت کو روکنے کی توقع ہے۔

واضح رہے کہ پاکستان ان ممالک میں شامل ہے جہاں تمباکو نوشی بہت زیادہ ہے اور 31.6 ملین بالغ افراد جو کہ بالغ آبادی کے تقریباً 20 فیصد کے برابر ہیں تمباکو نوشی کرتے ہیں۔

تمباکو نوشی سے سالانہ تقریباً 160,000 اموات ہو رہی ہیں جو کہ ہر سال صحت کی دیکھ بھال کے اخراجات میں ملک کیجی ڈی پی کا 1.4 فیصد سے زائد ہے۔

cigarettes

Tax on Cigarettes

cigarettes tax

Cigarette Brands

Federal Excise Duty on Cigarettes

10 stick Cigarette Pack