Aaj News

پیر, جولائ 15, 2024  
08 Muharram 1446  

’حکومت تمباکو ٹیکسیشن بہتر بنا کر آمدنی میں 40 ارب کا اضافہ کر سکتی ہے‘

عمران احمد نے کہا کہ ملٹی نیشنل کمپنیوں کی جانب سے غیر قانونی مارکیٹ شیئر بڑھا چڑھا کر پیش کیا جاتا ہے
شائع 01 جون 2024 09:21pm

ماہرین صحت نے پاکستان میں تمباکو کی مصنوعات پر ٹیکسوں میں 37 فیصد اضافے کی تجویز دی ہے تاکہ اس کی کھپت میں کمی، محصولات میں اضافہ اور تمباکو نوشی سے وابستہ صحت کے اخراجات میں فرق کو کم کیا جاسکے۔

اس مجوزہ اضافے سے حکومتی محصولات میں خاطر خواہ اضافہ ہوگا جس کا تخمینہ موجودہ 240 ارب روپے سے بڑھ کر 336 ارب روپے تک پہنچ جائے گا۔ اس اقدام سے تمباکو نوشی سے وابستہ صحت کے اخراجات پر بھی نمایاں اثر پڑے گا، جسے 615 ارب روپے سے کم کرکے 418.2 ارب روپے کرنے کا تخمینہ لگایا گیا ہے، جس سے آمدنی اور صحت کے اخراجات کے درمیان فرق 82 ارب روپے تک کم ہوجائے گا۔

ملک عمران احمد، کنٹری نمائندہ مہم برائے تمباکو فری کڈز (سی ٹی ایف کے) نے کہا کہ عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) کی وکالت کے مطابق تمباکو کے استعمال کو روکنے کے لئے تمباکو پر زیادہ ٹیکس ایک اہم اقدام ہے۔

انہوں نے کہا کہ یہ صنعت ٹیکسوں میں کم از کم 40 فیصد اضافے کو برداشت کر سکتی ہے۔

ملک عمران احمد نے کہا کہ آئی ایم ایف اور ورلڈ بینک نے پاکستان کو سگریٹ کے لئے سنگل ٹیئر ٹیکس ڈھانچہ متعارف کرانے کی سفارش کی ہے۔ ٹیکسوں میں اضافے کی کوششوں کے باوجود، سگریٹ کی کم قیمتیں برقرار ہیں، جو مسلسل اعلی کھپت کی سطح میں حصہ ڈالتی ہیں۔ ان اصلاحات کو اپنا کر پاکستان سگریٹ ٹیکس وں کو زیادہ موثر بنا سکتا ہے اور اسے بین الاقوامی بہترین طریقوں کے ساتھ زیادہ قریب سے ہم آہنگ کر سکتا ہے۔

عمران احمد نے کہا کہ ملٹی نیشنل کمپنیوں کی جانب سے غیر قانونی مارکیٹ شیئر بڑھا چڑھا کر پیش کیا جاتا ہے۔ یہ صنعت ٹیکسوں سے بچنے، ٹیکس قوانین کی خلاف ورزی کرنے اور عوامی صحت پر منافع کو ترجیح دینے کے لئے پیداوار کو کم رپورٹ کرتی پائی گئی ہے۔

ہیومن ڈیولپمنٹ فاؤنڈیشن (ایچ ڈی ایف) کے چیف ایگزیکٹو آفیسر محبوب الحق نے تمباکو ٹیکس کو فروغ دینے کے بے پناہ فوائد پر زور دیتے ہوئے کہا، ’تمباکو ٹیکس سستی اور کھپت کو کم کرنے کے لئے عالمی سطح پر تسلیم شدہ اور مؤثر آلہ ہے‘۔

انہوں نے تمباکو کی تمام مصنوعات کی سخت ریگولیشن کی فوری ضرورت پر زور دیتے ہوئے ایک صحت مند اور زیادہ خوشحال پاکستان کی تعمیر کے لئے ایچ ڈی ایف کے پختہ عزم کا اعادہ کیا جہاں ہمارے نوجوانوں کی فلاح و بہبود اولین ترجیح ہے۔

سوشل پالیسی اینڈ ڈویلپمنٹ سینٹر (ایس پی ڈی سی) کے منیجنگ ڈائریکٹر محمد آصف اقبال نے کہا کہ تمباکو نوشی کرنے والوں کا قیمتوں میں تبدیلیوں پر ردعمل ظاہر کرتا ہے کہ پاکستان میں تمباکو نوشی کی حوصلہ شکنی کے لئے ٹیکس لگانے کے وسیع امکانات موجود ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ سگریٹ پر ایف ای ڈی میں حالیہ اضافے اور قیمتوں میں اسی طرح کے اضافے کے نتیجے میں سگریٹ کی کھپت میں 19.2 فیصد کی کمی واقع ہوئی ہے۔

وہ ایس پی ڈی سی کی جانب سے 5 ہزار سے زائد تمباکو نوشی کرنے والوں کے ملک گیر سروے کے ابتدائی نتائج پیش کر رہے تھے۔

cigarettes

Tax on Cigarettes

cigarettes tax

Cigarette Brands

Federal Excise Duty on Cigarettes

10 stick Cigarette Pack

Malik Imran Ahmed

Cigarette quitting cause Obesity

ciggerate