Aaj News

ہفتہ, جولائ 20, 2024  
14 Muharram 1446  

تنخواہ داروں پر ٹیکس میں اضافہ، ڈیڑھ لاکھ لینے والا کتنی رقم گھر لے جائے گا

حکومت نے تنخواہ دار طبقے کیلئے چھ ٹیکس سلیب پیش کردیئے
اپ ڈیٹ 13 جون 2024 12:31am

حکومت کی جانب سے بجٹ 25-2024 میں تنخواہ دار طبقے پر بھاری انکم ٹیکس عائد کردیا گیا ہے۔

فنانس بل کے مطابق حکومت کی جانب سے سالانہ 6 لاکھ تک تنخواہ والوں کیلئے انکم ٹیکس چھوٹ برقرار رکھی گئی ہے، لیکن چھ سے 12 لاکھ روپے سالانہ تنخواہ پر انکم ٹیکس شرح دگنی یعنی 5 فیصد کردی گئی ہے۔

سالانہ 12 لاکھ سے 22 لاکھ (ماہانہ ایک لاکھ ایک روپے سے لے کر ایک لاکھ 83 ہزار 344 روپے) تک تنخواہ لینے والے سال میں 12 لاکھ سے زائد آمدن پر15 فیصد کے حساب سے ٹیکس دیں گے اور ساتھ ہی 30 ہزار روپے بھی ٹیکس میں دیں گے۔ یعنی اگر کسی تنخواہ ڈیڑھ لاکھ روپے ماہانہ (18 لاکھ روپے سالانہ) ہے تو وہ ماہانہ دس ہزار ٹیکس دے گا۔

سالانہ 22 لاکھ سے 32 لاکھ روپے ( ماہانہ 2 لاکھ 67 ہزار 667 روپے تک) تنخواہ والے 22 لاکھ سے اوپر کی رقم پر25 فیصد کے حساب سے ٹیکس دیں گے اور ساتھ ہی ایک لاکھ 80 ہزا روپے بھی دیں گے۔ یعنی ڈھائی لاکھ روپے کمانے والا سال میں 3 لاکھ 80 ہزار ٹیکس میں ادا کرے گا۔ ماہانہ کے حساب سے یہ رقم 30 ہزار سے اوپر ہے۔

اسی طرح 32 سے 41 لاکھ سالانہ تنخواہ پر 4 لاکھ 30 ہزار فکسڈ ٹیکس اور32 لاکھ سے اوپر کی رقم پر 30 فیصد ٹیکس عائد ہوگا۔

41 لاکھ سالانہ سے ایک روپیہ زیادہ ہونے پر 7 لاکھ فکسڈ ٹیکس اور 41 لاکھ روپے سے اوپر کی رقم پر اضافی تنخواہ پر 35 فیصد انکم ٹیکس ہوگا۔

حکومت نے تنخواہ دار طبقے کے لیے چھ سلیب برقرار رکھے ہیں لیکن ٹیکس کی شرح میں تبدیلی کی ہے۔ اس سے پہلے 35 فیصد کی شرح ماہانہ 6 لاکھ روپے (سالانہ 72 لاکھ روپے) سے زائد لینے والوں پر لاگو ہوتی تھی۔ جب کہ اس سے نیچے کے سلیب میں 27.5 فیصد ٹیکس عائد تھا۔

مالی سال 2023-24 کے لیے انکم ٹیکس کیلکولیٹر

Income Tax

Budget 2024 25

Tax on Salary