Aaj News

اتوار, جولائ 14, 2024  
08 Muharram 1446  

’50 ہزار روپے سے زائد کی ادائیگیوں کیلئے طریقہ کار میں تبدیلی‘، سینیٹ کمیٹی نے فنانس بل میں ترامیم کیلئے تجاویز کو حتمی شکل دیدی

30 ہزار روپے سے زیادہ کی خریداری کی ادائیگی کیلئے کیا لازمی ہوگا؟
شائع 23 جون 2024 07:13pm
فائل فوٹو
فائل فوٹو

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ اور محصولات نے ہفتے کو فنانس بل 2024 میں بڑی تبدیلیوں کے لیے سفارشات کو حتمی شکل دے دی ہے، تاکہ بجٹ دستاویزات کی حمایت کے ساتھ ساتھ عام لوگوں کو سہولت بھی فراہم کی جا سکے۔

بزنس ریکارڈر کے مطابق کمیٹی نے تجویز پیش کی کہ یوٹیلٹی بلوں کی ادائیگیوں کو چھوڑ کر 50 ہزار روپے سے زائد کی تمام ٹرانزیکشنز کراس چیک، بینک ڈرافٹ، پے آرڈر یا دیگر کراسڈ بینکنگ انسٹرومنٹ کے ذریعے کی جائیں، تاکہ خریدار کے بزنس بینک اکاؤنٹ سے سیلز ٹیکس انوائس کی رقم سپلائر کو منتقل کی جائے۔

کمیٹی نے ٹیکس ادائیگی یا غلط ری فنڈ کی ذمہ داری سے متعلق ترمیم پر بھی نظر ثانی کی، جس میں کائی بور کی شرح سے ڈیفالٹ سرچارج اور سالانہ تین فیصد (دونوں میں سے جو بھی زیادہ ہو) شامل کیا گیا۔

کمیٹی نے مالیاتی بل 2024 پر غور و خوض کیلئے نو روزہ اجلاس کے اختتام پر عوام کو فائدہ پہنچانے کے مقصد سے سفارشات جاری کیں۔

اہم سفارشات میں اقتصادی دستاویزات کو فروغ دینے کے لئے 30,000 روپے سے زیادہ کی خریداری کے لئے کریڈٹ یا ڈیبٹ کارڈ ٹرانزیکشن کو لازمی بنانا ، سولر انڈسٹری کے اجزاء پر یکساں سیلز ٹیکس کی شرح، فنانس بل 2024 کے تحت آٹھ مخصوص اسٹیشنری اشیاء پر ٹیکس واپس لینا اور باخبر خریداری کے فیصلوں کے لئے تمام صارفین کی اشیاء پر پرائس لیبل لگانا شامل ہے۔

ہم قانون نافذ کرنے والا ادارہ نہیں، سمیں بند کرنے کا معاملہ واپس لیا جائے، ٹیلی کام سیکٹر

مزید برآں خیراتی حیثیت کی آڑ میں ٹیکس چھوٹ کا فائدہ اٹھانے والی تنظیموں کی نشاندہی کرنے، معذور افراد (جس میں افرادی قوت کا دو فیصد سے بھی کم شامل ہے) کے لئے بنیادی تنخواہ کے 100 فیصد کے برابر اضافی الاؤنس فراہم کرنے اور ٹیکس مقاصد کے لئے ریموٹ ورکرز کو فری لانسرز سے الگ کرنے کی سفارشات کی گئیں۔

کمیٹی نے کارپوریٹ ڈیبٹ کارڈ ٹرانزیکشنز کو اضافی پانچ فیصد ٹیکس سے استثنیٰ دینے کی بھی تجویز پیش کی تاکہ دوہرے ٹیکس کو روکا جاسکے اور اسپیشل فارن کرنسی اکاؤنٹ (ای ایس ایف سی اے) کے ذریعے غیر ملکی زرمبادلہ کی آمدنی کی حوصلہ افزائی کی جاسکے۔

کمیٹی کے ممبران نے اسٹیشنری اور روزمرہ اشیاء پر ٹیکسوں پر عدم اطمینان کا اظہار کیا، خاص طور پر نوزائیدہ بچوں کے دودھ پر ٹیکس پر اعتراض کیا گیا۔

کمیٹی نے بجٹ 2025 کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے افسوس کا اظہار کیا کہ بجٹ قومی مفادات کے بجائے عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کی ترجیحات سے زیادہ مطابقت رکھتا ہے۔

آئی ایم ایف اہداف کے حصول سے متعلق کےپی حکومت نے وفاق کے سامنے 2 شرائط رکھ دیں

خاص طور پر کمیٹی نے کلر پنسلز، پنسلوں اور جیومیٹری سیٹوں جیسی اسٹیشنری اشیاء پر ٹیکسوں کی سختی سے مخالفت کی اور بجٹ 2025 کو ٹیکسوں کا بوجھ قرار دیتے ہوئے کہا کہ ہر شے پر 18 فیصد جی ایس ٹی کا نعرہ لگایا گیا ہے، جس سے زندگی گزارنے کی لاگت میں مزید اضافہ ہوا ہے اور عوام کے حوصلے پست ہو رہے ہیں۔

سینیٹ انوشہ رحمان نے طبی سازوسامان پر ٹیکس پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے اینڈوسکوپی، آنکولوجی، یورولوجی، گائناکولوجی اور ڈسپوزایبل اشیاء سمیت صحت کی دیکھ بھال کے اخراجات کے اثرات پر زور دیا۔

کمیٹی نے بعض خیراتی اسپتالوں کو ٹیکس استثنیٰ دینے کی بنیاد پر بھی سوال اٹھایا، ایف بی آر نے وضاحت کی کہ پاکستان سینٹر فار فلانتھروپی (پی سی پی) کو یہ استثنیٰ دینے کا اختیار حاصل ہے۔

سینیٹ فنانس کمیٹی نے پراپرٹی پر ٹیکس کی تجویز مسترد کردی، نان فائلرز کی موبائل سمز، بجلی اور گیس کنکشن بھی منقطع کیے جائیں گے

کمیٹی نے یہ بھی سفارش کی کہ غیر منافع بخش اداروں کے زیر انتظام چلنے والے ہسپتالوں کو عطیہ کردہ سامان کو اسی طرح کی کسٹم ڈیوٹی کی شرائط کے تابع کیا جائے جیسا کہ زیرو ریٹڈ کسٹم ڈیوٹی والی اشیا پر لاگو ہوتا ہے۔

سینیٹر انوشہ رحمان نے ٹیلی کام سیکٹر کے لیے مجوزہ ٹیکس ڈھانچے بالخصوص سیلولر اور سیٹلائٹ فونز کے حوالے سے مجوزہ ٹیکس ڈھانچے کی مخالفت کرتے ہوئے تجویز دی کہ درآمد یا رسد کی قدروں کی بنیاد پر ٹیکس کی شرحوں میں فرق کیا جائے۔

سینیٹر شیری رحمٰن کی سفارشات میں برآمدی ٹیکسوں میں مجوزہ اضافے کی وضاحت اور غربت اور بے روزگاری کے خاتمے کے لیے اقدامات متعارف کرانے پر توجہ مرکوز کی گئی، بجٹ میں خاص طور پر غربت کی لکیر سے نیچے زندگی بسر کرنے والے چار فیصد پاکستانیوں اور 6.3 فیصد بے روزگاری کی شرح سے 45 لاکھ سے زائد افراد متاثر ہوئے۔

انہوں نے ٹارگٹڈ پروگراموں اور ضروری خدمات کی ضرورت پر زور دیا۔

سینیٹر ذیشان خانزادہ نے تجویز پیش کی کہ فاٹا اور پاٹا میں مقامی رسد پر سیلز ٹیکس کی شرح کو معیاری 18 فیصد کے بجائے کم کرکے 16 فیصد کیا جائے اور ان علاقوں میں درآمدی رسد پر ٹیکس کو 30 جون 2025 تک کم کرکے 3 فیصد اور یکم جولائی 2025 سے 30 جون 2026 تک 6 فیصد کردیا جائے۔

Senate Finance Committee

Finance Bill 2024 25

Amendments in Finance Bill