Aaj News

یورپی پارلیمنٹ کی رکن نے تقریر کے دوران اپنے بال کاٹ دیے

رکن پارلیمنٹ نے حجاب نہ پہننے پرپولیس کی حراست میں ہلاک ایرانی خاتون سے اظہار یکجہتی کی
شائع 06 اکتوبر 2022 02:59pm

یورپی پارلیمنٹ کی سویڈش رکن عبیرالسحلانی نے ایرانی پولیس کی حراست میں ہلاکت ہونے والی خاتون سے اظہار یکجہتی کرتے ہوئے دورانِ تقریر اپنے بالوں کو کاٹ دیا۔

عبیرالسحلانی کا کہنا ہے کہ ”جب تک ایران آزاد نہیں ہوتا، ہمارا غصہ ظالموں کےلئے بڑھے گا“ ، انہوں نے فرانس کے شہر اسٹراسبرگ میں پارلیمنٹ سے خطاب میں مزید کہا جب تک ایران کی خواتین آزاد نہیں ہوتیں ہم آپ کے ساتھ کھڑے رہیں گے۔

ایران میں اخلاقی اقدارکے امورکی نگرانی کرنے والی پولیس نے ایرانی خاتون مہساامینی کو حجاب نہ پہننے پرحراست میں لیا تھا، جہاں وہ چل بسی تھیں۔

سوشل میڈیا پرمتعدد ویڈیوز گردش کررہی ہیں جس میں دیکھا جاسکتا ہے کہ کہیں سڑکوں پرخواتین احتجاج رہی ہیں، حتی کہ کئی خواتین نے اپنے سَروں کے بال بھی کاٹ دیے اور حکومت کے خلاف نعرے بازی کی ہے۔

تعلیمی اداروں میں ایرانی طالبات حکومت کیخلاف کھڑی ہوگئیں

ایرانی خاتون مہساامینی ہلاکت کے بعد ایران میں پھیلنے والے احتجاج کو قابو کرنے کے لئے حکومت نے ملک کے متعدد تعلیمی اداروں میں سیکیورٹی فورسز تعینات کردی ہے۔

برطانوی صحافی نے ایک ٹویٹ کی جس میں انہوں نے بتایا لڑکیوں کے ایک اسکول میں عسکری فورس کے ایک رکن کو مدعو کیا تو وہاں موجود لڑکیوں نے اپنے سر سے حجاب (اسکارف) اتار کرنعرے لگا کر استقبال کیا۔

یورپی یونین کا ایران پر پابندیاں لگانے کا فیصلہ

جرمن وزارت خارجہ کے مطابق جرمنی، فرانس، ڈنمارک، اسپین، اٹلی اور جمہوریہ چیک نے مہساامینی کے حق میں ہونے والے مظاہروں کے خلاف پرتشدد کریک ڈاؤن کرنے پرایران کے خلاف یورپی یونین میں نئی پابندیوں کے لیے 16 تجاویز پیش کی ہیں۔

ذرائع نے مزید کہا کہ مجوزہ اقدامات ان لوگوں اور اداروں کو نشانہ بنائیں گے جو بنیادی طور پرملک گیر مظاہروں پر پابندی کے ذمہ دارہیں۔

Iran

European Parliament

Mahsa Amini

Iran Protests 2022

Comments are closed on this story.

مقبول ترین