Aaj News

بدھ, جولائ 17, 2024  
10 Muharram 1446  

ق لیگ کی عمران خان کو پنجاب اسمبلی تحلیل 2 ماہ کیلئے مؤخر کرنے کی تجویز

عمران خان دونوں وزرائے اعلیٰ کو ساتھ بٹھا کر اپنے فیصلے کا اعلان کریں گے، ذرائع
اپ ڈیٹ 17 دسمبر 2022 06:03pm
عمران خان سے پرویز الٰہی اور مونس الٰہی کی ملاقات۔ فوٹو — اسکرین گریب
عمران خان سے پرویز الٰہی اور مونس الٰہی کی ملاقات۔ فوٹو — اسکرین گریب

مسلم لیگ ق نے چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کو پنجاب اسمبلی کی تحلیل دو ماہ کے لئے مؤخر کرنے کی تجویز پیش کردی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ عمران خان کی زیر صدارت زمان پارک میں اسمبلیاں تحلیل سے متعلق مشاورتی اجلاس ہوا جس میں وزیر اعلیٰ پنجاب پرویز الٰہی، سابق وفاقی وزیر مونس الٰہی اور ایم این اے حسین الٰہی موجود تھے۔

اجلاس میں وزیر اعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان، شاہ محمود قریشی، اسد عمر سمیت فواد چوہدری اور شبلی فراز بھی شریک تھے۔

ذرائع کے مطابق مشاورتی اجلاس میں ق لیگ رہنماؤں نے پی ٹی آئی چیئرمین کو پنجاب اسمبلی کو فروری کے آخری ہفتے میں توڑنے کی تجویز کی جب کہ عمران خان دونوں وزرائے اعلیٰ کو ساتھ بٹھا کر اپنے فیصلے کا اعلان کریں گے۔

ذرائع نے بتایا کہ ق لیگ کا اجلاس کے دوران کہنا تھا کہ ہم نے پنجاب اسمبلی تحلیل کے حوالے سے اپنی رائے سامنے رکھ دی ہے، حتمی فیصلے کا اختیار آپ کے پاس ہے۔

اس موقع پر پرویز الٰہی کا کہنا تھا کہ پنجاب اسمبلی عمران خان کی امانت ہے اور یہ امانت انہیں واپس کر دی ہے، ہم عمران کی آواز پر لبیک کہیں گے جب کہ ہمارا اتحاد پہلے سے زیادہ مضبوط ہے۔

ذرائع نے بتایا کہ مشاورتی اجلاس میں عمران خان نے کہا کہ پنجاب اور کے پی اسمبلی تحلیل کرنا ہمارا آئینی حق ہے، سیاسی و معاشی بحران کے خاتمے کیلئے اقتدار چھوڑ رہے ہیں۔

سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ آج عوام کو واضح لائحہ عمل دے دوں گا، البتہ ق لیگ اتحادی ہے اور مستقبل میں بھی ہم ساتھ رہیں گے۔

عمران خان سے ملاقات کے بعد مونس الٰہی نے اپنی ایک ٹویٹ میں لکھا کہ عمران چندگھنٹوں میں اپنافیصلہ سنادیں گے، ہم ان کے ساتھ مضبوطی سے کھڑے ہیں۔

واضح رہے کہ عمران خان پنجاب اور خیبرپختونخوا اسمبلیاں تحلیل کرنے کی تاریخ کا اعلان آج لاہور میں جلسے سے خطاب کے دوران کریآں گے۔

دوسری جانب وزیراعظم شہباز شریف کی زیر صدارت ماڈل ٹاؤن لاہور میں مسلم لیگ نون کا مشاورتی اجلاس ہوا۔

لیگی ذرائع کے مطابق عدم اعتماد کی تحریک پرارکان سے دستخط کروالئے گئے، لیگی قیادت نے وزیراعلی اور اسپیکر کیخلاف عدم اعتماد کی تحریک جمع کرانے کا گرین سگنل دے دیا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیراعلیٰ اور اسپیکر کے خلاف تحریک عدم اعتماد 36 گھنٹوں میں جمع ہونے کا امکان ہے۔

اجلاس میں یہ فیصلہ بھی کیا گیا کہ اسمبلیوں کی تحلیل روکنے کیلئے پی ٹی آئی سے مذاکرات نہیں کریں گے، عمران خان بیشک اسمبلیاں توڑ دیں، اسمبلیاں ٹوٹیں تو اے، بی اور سی پلان موجود ہیں۔

pti

imran khan

lahore

Chaudhry Pervaiz Elahi

Punjab Assembly dissolve

Politics Dec17 2022