Aaj News

سائفر کیس: عمران اور شاہ محمود کی درخواست ضمانت سننے والے جج رخصت پر چلے گئے

ڈیوٹی جج سائفر کیس میں درخواست ضمانت سن سکتا ہے یا نہیں دلائل طلب
اپ ڈیٹ 04 ستمبر 2023 05:08pm

خصوصی عدالت کے جج ابو الحسنات محمد ذوالقرنین آج چھٹی پر ہیں جس کے باعث چیئرمین پی ٹی آئی اور شاہ محمود قریشی کی درخواست ضمانت پر سماعت نہیں ہوگی، جب کہ پی ٹی آئی نے ڈیوٹی جج سے درخواستیں سننے کی اپیل کردی ہے۔

آفیشل سیکرٹ ایکٹ کے تحت سائفر کیس کی سماعت کرنے والے خصوصی عدالت کے جج ابو الحسنات محمد ذوالقرنین آج چھٹی پر ہیں، جس کے باعث چیئرمین پی ٹی آئی اور شاہ محمود قریشی کی درخواست ضمانت پر آج سماعت نہیں ہوگی۔

چیئرمین پی ٹی آئی اور شاہ محمود کے وکلا عدالت پہنچے تو عدالتی عملے نے انہیں مطلع کیا کہ جج ابو الحسنات ذوالقرنین 8 ستمبرتک رخصت پر ہیں۔

پی ٹی آئی وکلاء نے درخواست کی کہ ہمیں کوئی راستہ دکھائے کہ ہم کیا کریں۔

چیئرمین پی ٹی آئی اورشاہ محمود کے وکلا ڈیوٹی جج راجا جواد عباس کی عدالت میں پیش ہوگئے اور درخواست سننے کی اپیل کی۔

ڈیوٹی جج راجا جواد عباس نے کہا کہ آفیشل سیکریٹ ایکٹ کا کوئی نوٹیفکیشن نہیں، آپ ہائیکورٹ سے مارک کرادیں تو میں بھی کیس سن سکتا ہوں، دو طریقے ہیں یا رجسٹرار ہائیکورٹ سے رجوع کریں یا 9 ستمبر تک انتظار کرلیں۔

پی ٹی آئی کے وکیل بابر اعوان نے کہا کہ ہم ایک درخواست دیتے ہیں آپ جو بھی آرڈرکریں گے، ہمیں منظور ہے۔

مزید پڑھیں: اٹک جیل میں سائفر کیس کی سماعت ، عمران خان کے جوڈیشل ریمانڈ میں توسیع

پی ٹی آئی کی جانب سے ڈیوٹی جج کو ضمانتیں سننے کی درخواست دائر کردی گئی، جس میں استدعا کی گئی کہ ضمانت کا معاملہ ہے آپ ڈیوٹی جج ہیں اسی لئے ہمیں سن لیں۔

ڈیوٹی جج راجا جواد عباس نے کہا کہ رجسٹرار اسلام آباد ہائی کورٹ کے پاس چھٹی کی درخواست گئی ہے، یہاں 24 عدالتیں ہیں، ان سب کو میں سن سکتا ہوں، باقی عدالتوں کے لیے میں ڈیوٹی جج ہوں، میری غیر موجودگی پرشاہ رخ ارجمند جج ہوں گے، مگر یہاں معاملہ الگ ہیں، یہ انسداد دہشت گردی عدالت کا معاملہ نہیں ہے، یہ کیس آفیشل سیکرٹ ایکٹ کے تحت چل رہا ہے۔

راجا جواد عباس نے کہا کہ آفیشل سیکریٹ ایکٹ کے علاوہ باقی عدالتوں میں اختیار استعمال کرسکتا ہوں، ایڈمن جج ہونے کی وجہ سے 24 عدالتوں پر میرا دائرہ اختیار استعمال ہوسکتا ہے۔

ایف آئی اے پروسکیوٹر نے اعتراض اٹھایا کہ یہ کس طرح اس عدالت میں درخواست دائر کرسکتے ہیں۔

پی ٹی آئی وکلا نے مؤقف اختیار کیا کہ بطور ڈیوٹی جج آپ درخواست سن سکتے ہیں، آپ اگر کہیں کہ میرا اختیار نہیں میں مجبور ہوں تو ہم ہائی کورٹ چلے جائیں گے۔

جج راجا جواد عباس نے کہا کہ آپ مجھے جانتے نہیں ہیں ورنہ لفظ مجبور نہ استعمال کرتے، میں کوئی مجبور نہیں۔

بیرسٹرسلمان صفدر نے کہا کہ ڈیوٹی جج عدم پیروی پر ضمانت مسترد کرسکتا ہے تو اب ڈیوٹی جج کیوں نہیں سن سکتے۔

جج نے کہا کہ نوٹیفکیشن ہوتا کہ جج کی رخصت کے باعث ڈیوٹی جج سن سکتا ہے تو پھرسن لیتے۔

پی ٹی آئی وکیل نے کہا کہ آپ لکھ دیں کہ آپ یہ کیس نہیں سن سکتے۔

عدالت نے چیئرمین پی ٹی آئی کی درخواست سننے کے لئے 12 بجے تک نوٹس جاری کردیا۔ کیا ڈیوٹی جج سائفر کیس میں درخواست ضمانت سن سکتا ہے یا نہیں دلائل طلب کرلئے گئے۔

شعیب شاہین کی میڈیا سے گفتگو

تحریک انصاف کے رہنما شعیب شاہین نے جوڈیشل کمپلیکس کے باہر میڈیا سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ جج ابو الحسنات ایک ہفتے کی چھٹی پر چلے گئے ہیں، گزشتہ تاریخ پر بھی ڈھائی گھنٹے کی بحث کے بعد درخواست نہیں سنی گئی۔

شعیب شاہین نے کہا کہ ڈیوٹی جج کی عدالت میں سماعت کے لیے درخواست دائر کی ہے، لیکن فاضل جج کہتے ہیں یہ میرا اختیار نہیں، عدالت نے 12 بجے دلائل طلب کئے ہیں کہ وہ کیس پر سماعت کریں گے یا نہیں۔

واضح رہے کہ چیئرمین پی ٹی آئی اٹک جیل جبکہ شاہ محمود اڈیالہ جیل میں قید ہیں، عدالت نے آج فریقین سے دلائل طلب کر رکھے تھے۔

مزید پڑھیں: سائفر کیس کی اٹک جیل منتقلی کیخلاف درخواست پر اعتراضات دور

30 اگست کو ڈسٹرکٹ جیل اٹک میں ہونے والی سائفر کیس کی سماعت میں چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کے جوڈیشل ریمانڈ میں 13 ستمبرتک توسیع کردی گئی تھی۔

عمران خان کو جج ابوالحسنات کے روبرو پیش کیا گیا، عدالت نے چیئرمین پی ٹی آئی کی حاضری لگانے کے بعد اُن کے جوڈیشل ریمانڈ میں 14 روز کی توسیع کردی تھی۔

imran khan

pti chairman

Cypher

Cypher Investigations

cypher case Imran Khan

Comments are closed on this story.

تبصرے

تبولا

Taboola ads will show in this div