Aaj News

جمعہ, مارچ 01, 2024  
19 Shaban 1445  

یورپ جانے والے راستوں پر ایک ہزار سے زائد نامعلوم قبریں دریافت

گزشتہ ایک دہائی کے دوران ر ایک ہزار15 مرد، خواتین اور بچوں کو ان کی شناخت سے پہلے ہی دفن کر دیا گیا
شائع 09 دسمبر 2023 01:42pm
تصویر — دی گارڈین
تصویر — دی گارڈین

دی گارڈین اور صحافیوں کے ایک کنسورشیم نے یورپی یونین کی سرحدوں پر گزشتہ ایک دہائی کے دوران ہلاک ہونے والے تارکین وطن اور پناہ گزینوں کی 2,162 نامعلوم لاشوں کی نشاندہی کی ہے۔ 24 قبرستانوں میں ایک ہزار سے زائد بے نام قبریں پائی گئیں جبکہ اس عرصے کے دوران یورپ ہجرت کرنے والے 29 ہزار سے زائد افراد ہلاک ہوئے جن میں سے اکثریت لاپتہ رہی۔

پناہ گزینوں اور تارکین وطن کو یورپی یونین بھر میں بے نشان قبروں میں دفن کیا جا رہا ہے۔ گزشتہ ایک دہائی کے دوران یورپ کی سرحدوں پر ہلاک ہونے والے کم از کم ایک ہزار15 مرد، خواتین اور بچوں کو ان کی شناخت سے پہلے ہی دفن کر دیا گیا۔ یہ قبریں اکثر خالی ہوتی ہیں، یونان میں گھاس سے بھرے سفید پتھر، اٹلی میں خام لکڑی کے کراس، شمالی فرانس میں بے چہرہ سلیب، اور پولینڈ اور کروشیا میں نامعلوم لیے تختوں پر ”این این“ لکھا ہوتا ہے۔

یورپی پارلیمنٹ نے2021 میں ایک قرارداد منظور کی تھی جس میں ایسے افراد کی شناخت کرنے اور لاشوں کی تفصیلات جمع کرنے کے لیے ایک مربوط ڈیٹا بیس کی ضرورت کو تسلیم کرنے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔ یہ مسئلہ یورپی ممالک میں قانون سازی سے خالی ہے، جس میں لاشوں سے نمٹنے کے لئے کوئی مرکزی اعداد و شمار یا یکساں عمل نہیں ہے۔

یورپی کمشنر برائے انسانی حقوق، ڈنجا میجاتووچ نے انسانی حقوق کے بین الاقوامی قوانین کے تحت ذمہ داریاں پوری کرنے میں ناکامی پر یورپی یونین کے ممالک کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ انہوں نے لاپتہ تارکین وطن کے المیے سے نمٹنے کے لیے حکومتوں کو ایجنسیوں اور فرانزک ماہرین کی خدمات حاصل کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔

 نقشہ — گارڈین گرافک
نقشہ — گارڈین گرافک

یورپی یونین میں گمشدہ رشتہ داروں کو تلاش کرنے کے لئے جدوجہد کرنے والے خاندانوں کو مقامی بیوروکریسی کے سامنے مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ آئی سی آر سی جیسی امدادی تنظیمیں خاندانی روابط کو بحال کرکے خاندانوں کی مدد کرتی ہیں۔ سنہ 2013 سے اب تک اس تنظیم کو معلومات کے لیے 16 ہزار 500 درخواستیں موصول ہوئی ہیں جن میں سے سب سے زیادہ درخواستیں افغانوں، عراقیوں، صومالیوں، گنی اور کانگو، اریٹریا اور شام کے لوگوں کی جانب سے موصول ہوئیں۔

صرف 285 کامیاب میچ حاصل کیے گئے ہیں چونکہ حکومتوں نے امداد کے بجٹ میں کٹوتی کی ہے، اس لیے آئی سی آر سی اپنے وسائل پر دوبارہ توجہ مرکوز کر رہا ہے، نیشنل ریڈ کراس ایجنسیاں خاندانی روابط کے پروگرام کو جاری رکھے ہوئے ہیں لیکن پولیس اور مقامی حکام کی تربیت میں کٹوتی کر رہی ہیں۔

وقت کے خلاف دوڑ

دی گارڈین میں ایک 24 سالہ حجام اسامہ طیب نے یورپ میں بہترزندگی کی تلاش میں گزشتہ سال الجزائر چھوڑ دیا تھا۔ اس کے بعد سے اس کے گھر والے اسے تلاش کر رہے ہیں،لیکن اسامہ کے کزن عبداللہ کو ڈر ہے کہ یہ وقت کے خلاف دوڑ ہے۔

ہسپانوی پولیس نے سنہ 2007 میں نامعلوم باقیات کے ڈیٹا اور جینیاتی نمونوں کو لاگ ان کرنے کے لیے ایک ڈیٹا بیس متعارف کرایا تھا لیکن جب اہل خانہ لاپتہ رشتہ داروں کی تلاش کرتے ہیں تو یہ کام کرنا چھوڑ دیتا ہے ۔ طیب کی گمشدگی کے فورا بعد اہل خانہ نے ڈی این اے کا نمونہ فراہم کیا اور دوسری تلاش کے لیے جنوبی اسپین کا سفر کیا۔ المیریا کے مردہ خانے میں ایک فرانزک ڈاکٹر نے طیب کی تصویر کو ایک ہار کی مدد سےشناخت کرتے ہوئےتصدیق کی کہ اس کی موت حادثے میں ہوئی تھی۔

طیب کی لاش ملنے کے باوجود اس کا کزن پولیس افسر کے بغیر لاش دیکھنے سے قاصر تھا۔ ہسپانوی پیتھالوجسٹ مردہ خانے میں لاشوں کو ایک سال تک رکھنے اور پھر دفن کرنے کے عملی دباؤکا سامنا کرنا پڑتا ہے، چاہے ان کی شناخت ہو یا نہ ہو۔ اوسامہ کو فریج میں دیکھنا دل دہلانے والا منظر تھا۔

اسپین کے جزائر کینری میں مقامی حکام اس سال کشتیوں کے ذریعے آنے والے تارکین وطن اور پناہ گزینوں کی بڑھتی ہوئی تعداد سے نمٹنے کے لیے جدوجہد کر رہے ہیں۔ جزیرے ایل ہیرو میں صرف گزشتہ چھ ہفتوں کے دوران سات نامعلوم افراد کو دفن کیا گیا ہے۔ 2020 میں گرین کیناریا کے علاقے اگیمس میں لکڑی کے ایک بحری جہاز پر 15 نامعلوم افراد مردہ پائے گئے تھے۔

لنزاروتے کے تیگوئس قبرستان میں بچوں کی قبروں پر پتھروں کے نشانات ہیں، جن میں ایک بچہ بھی شامل ہے جس کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ وہ مراکش سے ایک مہلک گزرگاہ پر مردہ پیدا ہوا تھا۔ یورپی یونین کی سرحدوں پر بے نشان قبریں بھی موجود ہیں ۔ کروشیا ، پولینڈ اور لیتھوانیا میں کم بے نشان قبریں ہیں لیکن اب بھی تختیوں پر خالی پتھر یا کہیں کہیں ’این این‘ لکھا یےہے۔

فرانس میں ، کیلیس کے قبرستانوں میں گمنام تحریر ’ایکس‘ موجود ہے ، جس میں 2014 کے بعد سے فرانکو - برطانوی سرحد پر ہلاک ہونے والے 242 تارکین وطن اور پناہ گزینوں میں سے 35 کی شناخت نہیں ہوسکی ہے۔

امید کے ٹکڑے

سال 2021 میں پولینڈ بیلاروس سرحد کے قریب سے لاپتہ ہونے والے 22 سالہ عراقی محمد صباح کو 2022 میں سوشل میڈیا پر فوٹیج سامنے آنے تک مردہ سمجھا جاتا تھا۔ اس کے چچا ریکوت رچید سمیت اہل خانہ اس وقت سے اس کی تلاش کر رہے ہیں جب سے وہ سرچ لائٹس میں پکڑا گیا۔ صباح عراقی کردستان سے بیلاروس گیا تھا، جہاں اسمگلروں نے اسے کامیابی کے ساتھ یورپی یونین کی سرحد پار کروا دی تھی لیکن اسے پولینڈ میں تقریبا 50 کلومیٹر کے فاصلے پر حراست میں لے لیا گیا تھا اور واپس بیلاروس بھیج دیا گیا تھا۔

شپنگ کنٹینر مردہ خانے

یونان کے شہر الیگزینڈروپولس میں دو ریفریجریٹڈ شپنگ کنٹینرز میں 40 افراد کی لاشیں موجود ہیں جو موسم گرما کی ہیٹ ویو کے دوران جنگل کی آگ میں ہلاک ہو گئے تھے۔ ترکی سے یونان جانے کا راستہ 10 سے 20 منٹ کا ہوتا ہے لیکن لوگ رات کے وقت اسے عبور کرتے ہیں اور ان کی کشتیاں الٹ بھیجاتی ہیں۔ لاشیں ندی کے کنارے کیچڑ میں تیزی سے سڑ جاتی ہیں، جس سے چہرے کی خصوصیات، لباس اور شناختی دستاویزات تباہ ہو جاتی ہیں۔ مرنے والوں میں سے صرف چار کے نام بتائے گئے ہیں۔ فرانزک پیتھالوجسٹ پروفیسر پاولوس پاولیڈس موت کی وجہ کا تعین کرنے، ڈی این اے کے نمونے جمع کرنے اور ذاتی اثرات کی فہرست تیار کرنے کے لیے کام کررہے ہیں۔

الیگزینڈروپولس اور لیسبوس میں عارضی کنٹینر مردہ خانے آئی سی آر سی سے قرض پر ہیں ، جبکہ لیمپیڈوسا میں ان سہولیات کا فقدان ہے۔ تارکین وطن کی لاشوں کو سسلی منتقل کیا جاتا ہے، جہاں تدفین کا انتظام انفرادی قصبوں کے ذریعہ کیا جاتا ہے۔ اس مسئلے کی شدت کی وجہ سے قبرستان وں کے گوداموں میں چھوڑے گئے تابوت یا اسپتال کے مردہ خانوں میں لاشیں پڑی ہوئی ہیں۔ آئی سی آر سی نے لیسبوس کو ایک اور کنٹینر بھی بطور قرض دیا ہے۔

یہ صرف تکنیکی نہیں سیاسی مسئلہ بھی ہے

یورپی کمیشن تارکین وطن اور پناہ گزینوں سے نمٹنے کے طریقہ کار کو بہتر بنانے کے لئے کام کر رہا ہے ۔

اٹلی دو بڑے پیمانے پر آفات میں ہلاک ہونے والوں کی شناخت کے لیے کام کر رہا ہے، میلان یونیورسٹی میں فرانزک اینتھروپولوجی اینڈ اوڈنٹولوجی کی لیبارٹری کی سربراہ کرسٹینا کیٹانیو 2015 میں ایک بحری جہاز کے حادثے سے لاشیں نکالنے کے لیے برسوں سے کام کر رہی ہیں، جس میں ایک ہزار سے زائد افراد ہلاک ہوئے تھے۔ اس عمل پر 9.5 ملین یورو خرچ ہوئے ہیں اور یہ ایک مشکل کام ہے ، صرف چھ متاثرین کو سرکاری موت کا سرٹیفکیٹ جاری کیا گیا ہے۔ ج

یسے جیسے بے قاعدہ نقل مکانی پر سیاسی موقف سخت ہوتا جا رہا ہے، ماہرین پر ان کے پیچیدہ کام کے لیے سرکاری جوش و خروش کم ہوتاجارہا ہے۔ سسلی میں ویلا اکتوبر 2019 میں ڈوبنے والی ماہی گیروں کی ایک کشتی کی تحقیقات کر رہی ہے جس میں 49 افراد سوار تھے جن میں سے زیادہ تر کا تعلق تیونس سے تھا۔ اطالوی کوسٹ گارڈ نے 22 افراد کو بچا لیا لیکن 27 افراد ہلاک ہو گئے۔ یہ فوٹیج دنیا بھر میں پھیلی اور تیونس کی خواتین جو اپنے بیٹوں کی تلاش میں تھیں، نے اطالوی حکام سے رابطہ کیا۔

نہ جاننے کا عذاب

یونیورسٹی آف مینیسوٹا میں نفسیات کی پروفیسر ڈاکٹر پولین باس کے مطابق اپنے لاپتہ رشتہ داروں کے بارے میں خاندانوں کو جس غم کا سامنا کرنا پڑتا ہے اسے ”مبہم نقصان“ قرار دیا جاتا ہے کجبکہپ اس مبہم نقصان کے عملی نتائج بھی ہیں ، کیونکہ شریک حیات موت کے سرٹیفکیٹ کے بغیر اپنے والدین کے حقوق کا استعمال کرنے ، اثاثوں کو وراثت میں لینے ، یا فلاحی مدد کا دعوی کرنے کے قابل نہیں ہوسکتے ہیں۔ یتیموں کو ایک کے بغیر توسیع شدہ خاندان کے ذریعہ گود نہیں لیا جاسکتا ہے۔

Europe

Comments are closed on this story.

تبصرے

تبولا

Taboola ads will show in this div