Aaj News

جمعہ, مارچ 01, 2024  
19 Shaban 1445  

پاکستان کا خاتمہ اور نیوکلئیر ہتھیاروں کا استعمال، اگلے دس سالوں میں کیا ہونے والا ہے؟

اگلے دس سالوں میں کونسے ممالک ختم ہوجائیں گے اور کونسے نئے ملک ایٹمی طاقت بنیں گے؟ امریکہ کا کیا ہوگا؟
اپ ڈیٹ 10 دسمبر 2023 08:34am

امریکا میں قائم تھنک ٹینک ”اٹلانٹک کونسل“ نے اگلے دس سالوں میں دنیا میں ممکنہ طور پر رونما ہونے والی تبدیلیوں کا اندازہ پیش کیا ہے، جس میں کئی بڑے عالمی واقعات کی پیشگوئی کی گئی ہے۔

اٹلانٹک کونسل کے تحت کام کرنے والے ادارے ”اسکیوکرافٹ سینٹر فار اسٹریٹجی اینڈ سیکیورٹی“ نے دنیا بھر کے معروف عالمی حکمت کاروں اور دور اندیش ماہرین سے پوچھا کہ وہ دنیا بھر میں اگلے دس سالوں میں کیا تبدیلیاں دیکھ رہے ہیں۔

اس حوالے سے مجموعی طور پر 167 ماہرین نے اپنی بصیرت کا اشتراک کیا کہ جغرافیائی سیاست، موسمیاتی تبدیلی، تکنیکی رکاوٹ، عالمی معیشت، سماجی اور سیاسی تحریکیں، اور دیگر ڈومینز اب سے ایک دہائی کی طرح کیسے نظر آئیں گے۔

تو 2033 میں دنیا کیسی نظر آئے گی؟ اس حوالے سے کیے گئے سروے کے دس سب سے بڑے نتائج یہ ہیں۔

روس کا خاتمہ

سب سے حیران کن باتوں میں سے ایک یہ تھی کہ متعدد جواب دہندگان نے اگلی دہائی میں ممکنہ روسی خاتمے کی طرف اشارہ کیا۔

ماہرین نے تجویز کیا کہ یوکرین کے خلاف کریملن کی جنگ کرہ ارض پر بہت زیادہ نتیجہ خیز ہلچل پیدا کر سکتی ہے۔

تقریباً نصف (46 فیصد) جواب دہندگان توقع کرتے ہیں کہ روس یا تو ایک ناکام ریاست بن جائے گا یا 2033 تک ٹوٹ جائے گا۔

اس سے بھی زیادہ حیران کن، 40 فیصد جواب دہندگان توقع کرتے ہیں کہ روس انقلاب، خانہ جنگی، سیاسی ٹوٹ پھوٹ یا کسی اور وجہ سے 2033 تک اندرونی طور پر ٹوٹ جائے گا۔

چودہ فیصد جواب دہندگان کا خیال ہے کہ روس کی جانب سے اگلے دس سالوں میں جوہری ہتھیار استعمال کیے جانے کا امکان ہے۔

جبکہ 10 فیصد کا خیال ہے کہ اس مدت کے اختتام تک کسی بھی موجودہ مطلق العنان ملک کے جمہوری بننے کا سب سے زیادہ امکان ہے۔

اگلے دس سالوں میں ناکام ریاستیں کونسی ہوں گی؟

اس سوال کے جواب میں 21 فیصد رائے دہندگان نے روس کا نام لیا، جبکہ 10 فیصد نے افغانستان اور 8 فیصد نے پاکستان کا نام لیا۔ دیگر ملکوں میں امریکہ ، ہیٹی ، لبنان، افریقہ، وینزویلا، میانمار اور نائجیریا شامل تھے۔

مزید جوہری طاقتیں

تقریباً 678 فیصد جواب دہندگان کا کہنا تھا کہ 2033 تک ایران ایک جوہری ہتھیاروں سے لیس ملک بن چکا ہوگا۔ جبکہ کچھ کا خیال ہے کہ جاپان، جنوبی کوریا اور سعودی عرب بھی نیوکلئیر پاور بن جائیں گے۔

تقریباً ایک تہائی جواب دہندگان (31 فیصد) اگلی دہائی میں جوہری ہتھیار استعمال کیے جانے کی توقع رکھتے ہیں۔

جوہری ہتھیاروں کا استعمال کرنے کی پیش گوئی کرنے والوں کے جوابات سے پتہ چلتا ہے کہ ہتھیاروں کو عالمی تنازعہ کے بجائے علاقائی سطح پر تعینات کیا جا سکتا ہے۔

جوہری ہتھیاروں کا استعمال

رائے دہندگان کی اکثریت (58 فیصد) کا خیال ہے کہ جوہری ہتھیار اگلے دس سالوں میں غیر استعمال شدہ رہیں گے۔

تاہم، تقریباً ایک تہائی (31 فیصد) اگلی دہائی میں جوہری ہتھیار استعمال کیے جانے کا امکان ہے۔

ماہرین کے مطابق روس کی جانب سے 14 فیصد، شمالی کوریا کی جانب سے 10 فیصدر،اسرائیل، امریکہ اور پاکستان کی جانب سے 3 فیصد جبکہ بھارت اور چین کی جانب سے جوہری ہتھیاروں کے استعمال کا ایک فیصد امکان ہے۔

تائیوان کے خلاف چینی فوجی حملہ

حال ہی میں، امریکی حکام نے انتباہ کیا ہے کہ چین اب اور 2027 کے درمیان تائیوان کو سرزمین کے ساتھ دوبارہ جوڑنے کے لیے ایک فوجی مہم شروع کر سکتا ہے اور سروے کے نتائج اس سنگین تشخیص کی حمایت کرتے ہیں۔ اس حوالے سے مکمل طور پر 70 فیصد جواب دہندگان متفق ہیں۔ حالانکہ صرف 12 فیصد اس بات پر متفق ہیں کہ چین اگلے دس سالوں میں زبردستی تائیوان پر دوبارہ قبضہ کرنے کی کوشش کرے گا۔

امریکہ طاقتور رہے گا لیکن تسلط کھو بیٹھے گا

جواب دہندگان نے عام طور پر اگلے دس سالوں میں امریکہ کے سپر پاور بنے رہنے کی طاقت پر یقین کا اظہار کیا۔ دس میں سے سات نے پیش گوئی کی ہے کہ امریکہ 2033 تک دنیا کی غالب فوجی طاقت بنا رہے گا، تقریباً نصف کے خیال میں امریکہ چین پر اپنا تکنیکی غلبہ برقرار رکھے گا۔ باقی تمام میں سے صرف تین کو یقین ہے کہ امریکہ سفارت کاری میں دنیا کا غالب کھلاڑی ہوگا اور دس میں سے صرف تین سے زیادہ کا خیال ہے کہ وہ دنیا کی غالب اقتصادی طاقت ہوگا۔

عالمی اتار چڑھاؤ کے لیے تیار ہو جائیں

چھہتر فیصد ماہرین نے 2033 تک 2008 سے 2009 کے مالیاتی بحران کے پیمانے پر ایک اور عالمی معاشی بحران کی پیش گوئی کی ہے۔ 19 فیصد کا کہنا ہے کہ اس طرح کے دو یا زیادہ بحران ہوں گے۔ انتالیس فیصد نے 2033 تک کورونا وبا کے پھیلاؤ اور اس کے اثرات کے ساتھ ایک اور عالمی وبائی بیماری کی پیش گوئی کی، اضافی 16 فیصد اس طرح کی دو یا اس سے زیادہ وبائی امراض کی توقع کر رہے ہیں۔

جمہوریت اور آمریت کے درمیان کشمکش

جواب دہندگان کو مجموعی طور پر اگلے دس سالوں میں جمہوریت پسندوں یا آمریت پسندوں کی واضح فتح کی توقع نہیں ہے۔

دنیا میں جمہوریتوں کی تعداد بڑھنے (29 فیصد) کے مقابلے میں (37 فیصد) سکڑنے کی زیادہ توقع ہے۔

جمہوریتوں کو نظامی خطرات کی ایک مشکل دہائی کا سامنا کرنا پڑے گا

جمہوریتیں ایک خطرناک دہائی میں داخل ہو رہی ہیں جس میں انہیں قوم پرست اور پاپولسٹ قوتوں اور تیزی سے ترقی پذیر ٹیکنالوجی سے وابستہ تمام چیلنجز کا مقابلہ کرنے کی ضرورت ہوگی۔

جب ماہرین سے پوچھا گیا کہ کون سی سماجی تحریکیں اگلے دس سالوں میں دنیا بھر میں سب سے زیادہ سیاسی اثر و رسوخ کی توقع رکھتی ہیں، تو جواب دہندگان میں سے صرف 5 فیصد نے جمہوریت کے حامی تحریکوں کا انتخاب کیا- جب کہ اکثریت نے قوم پرست یا عوامی تحریکوں کا انتخاب کیا۔

جواب دہندگان کا ایک تہائی حصہ جمہوری معاشروں سے وابستہ دیگر وجوہات کی وکالت کرنے والی تحریکوں ماحولیات، نوجوانوں کے مسائل اور خواتین کے حقوق کے ساتھ گیا۔

ماہرین کے مطابق ماس کمیونیکیشن اور نئی ٹیکنالوجیز کے رجحانات بھی جمہوریتوں کے لیے ممکنہ خطرات پیش کرتے ہیں۔

ماہرین کے مطابق سوشل میڈیا 2033 تک جمہوریتوں کے لیے خالص منفی ثابت ہوگا۔ اٹھارہ فیصد کا کہنا ہے کہ اگلے دس سالوں میں سوشل میڈیا اتنا ترقی کر چکا ہو گا کہ سوال کا جواب دینا ناممکن ہو جائے گا۔

ماہرین کے مطابق اگلے دس سالوں میں کمرشل کوانٹم کمپیوٹنگ، لیول 5 خود مختار گاڑیاں (جہاں گاڑی انسانی ان پٹ کی ضرورت کے بغیر ڈرائیونگ کے تمام حالات میں تمام کام انجام دیتی ہے) اور مصنوعی جنرل انٹیلی جنس (جہاں کمپیوٹر اور مشینیں انسان جیسی ذہانت اور تخلیقی صلاحیتوں کی نمائش کرتی ہیں) تیار کی جائیں گی۔

russia

Russia Ukraine War

Use of Nuclear weapons

World prediction

Comments are closed on this story.

تبصرے

تبولا

Taboola ads will show in this div