Aaj News

ہفتہ, اپريل 20, 2024  
11 Shawwal 1445  

شمسی توانائی میں چین کی بالادستی، حریفوں نے تکنیکی برتری کی کوششیں تیز کردیں

قابل تجدید توانائی ایک جیو پولیٹیکل آلہ بن گیا، جاپان اپنی برتری کو بحال کرنے کا خواہاں
شائع 13 جنوری 2024 09:51pm
سیکیسوئی کیمیکل ریسرچ لیب میں پیرووسکائٹ شمسی فلمیں تیار کی جا رہی ہیں۔فوٹو:کیوڈونیوز/ زوما پریس
سیکیسوئی کیمیکل ریسرچ لیب میں پیرووسکائٹ شمسی فلمیں تیار کی جا رہی ہیں۔فوٹو:کیوڈونیوز/ زوما پریس

شمسی توانائی کی مارکیٹ پر چین کی تقریبا اجارہ داری نے امریکا اور اس کے اتحادیوں کو اس کا متبادل تلاش کرنے کی کوششیں تیز کرنے پر مجبور کر دیا ہے۔ اس حوالے سے جاپان شمسی توانائی کی ٹیکنالوجی کو سبسڈی اور دیگر معاونت کے ساتھ آگے بڑھا رہا ہے۔

چین کی شمسی بالادستی کو نئے حریف کا سامنا ہے۔ قابل تجدید توانائی ایک جیو پولیٹیکل آلہ بن گیا، جاپان اپنی تکنیکی برتری کو بحال کرنے کا خواہاں ہے۔

خیال رہے کہ امریکا نے 1950 کی دہائی میں شمسی پینل ایجاد کیے تھے۔ لیکن چین نے عالمی منڈیوں میں ٹیکنالوجی پر غلبہ حاصل کر لیا ہے۔ ڈبلیو ایس جے اس بات کا جائزہ لے رہا ہے کہ آیا امریکا اپنا قائدانہ کردار دوبارہ حاصل کر سکتا ہے یا نہیں۔

امریکی اخبار وال اسٹریٹ جرنل کی رپورٹ کے مطابق چینی کمپنیاں سلیکون سولر پینلز کے لیے عالمی سپلائی چین کے 80 فیصد سے زیادہ حصے پر کنٹرول رکھتی ہیں اور پینلز کے بنیادی مواد پولی سلیکون میں چین کا حصہ اس سے بھی زیادہ ہے۔

بین الاقوامی توانائی ایجنسی کا کہنا ہے کہ “دنیا 2025 تک شمسی پینل کی پیداوار کے لئے کلیدی بلڈنگ بلاکس کی فراہمی کے لئے تقریبا مکمل طور پر چین پر انحصار کرے گی۔

رپورٹ کے مطابق امریکا میں بائیڈن انتظامیہ سولر پینلز کے لیے مقامی سپلائی چین بنانے کی کوشش کر رہی ہے۔

دوسری طرف جاپان، جو گھریلو شمسی حل کی بھی تلاش میں ہے، پیرووسکائیٹ شمسی خلیات پر توجہ مرکوز کر رہا ہے۔

جاپانی سائنسدان سوتومو میاساکا کی ایجاد کردہ یہ خلیات معدنیات کا استعمال کرتے ہوئے ”پیرووسکیٹ“ نامی کرسٹل ساخت بناتے ہیں جسے سورج کی شعاعوں کو بجلی میں تبدیل کرنے کے لیے ایک آلے میں استعمال کیا جاسکتا ہے۔

پیرووسکیٹ کی مینوفیکچرنگ میں ایک اہم عنصر آیوڈین ہے۔ چلی کے بعد جاپان آیوڈین پیدا کرنے والا دنیا کا دوسرا سب سے بڑا ملک ہے ، جو عالمی پیداوار کا تقریبا ایک تہائی ہے۔

رپورٹ کے مطابق امریکی محکمہ توانائی کے اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ اب، صرف پیرووسکیٹ ہی سلیکون حریفوں سے مقابلہ کررہا ہے یا ان سے بھی آگے نکل گیا ہے، جس میں تبدیلی کی شرح 25٪ یا اس سے زیادہ ہے۔ اس کا موازنہ روایتی تجارتی سلیکون پینلز کے لئے تقریبا 18٪ سے 22٪ کی شرح سے کیا جاتا ہے۔ تاہم اس حوالے سے جو اہم چیز ہے وہ اب سلیکون خلیوں کے ساتھ اخراجات کو مسابقتی بنانا اور نمی کے مسئلے سے نمٹنا ہے۔

china

Energy sector

Japan

USA

Solar panels

ALTERNATIVE ENERGY

Comments are closed on this story.

تبصرے

تبولا

Taboola ads will show in this div