Aaj TV News

BR100 4,671 Increased By ▲ 6 (0.13%)
BR30 18,834 Increased By ▲ 160 (0.86%)
KSE100 45,369 Increased By ▲ 297 (0.66%)
KSE30 17,576 Increased By ▲ 146 (0.84%)
COVID-19 TOTAL DAILY
CASES 1,285,254 414
DEATHS 28,737 9
Sindh 475,820 Cases
Punjab 443,185 Cases
Balochistan 33,484 Cases
Islamabad 107,722 Cases
KP 180,075 Cases

چین کے صدر شی جن پنگ نے ملکی فوج پیپلز لبریشن آرمی کو ممکنہ جنگ کے لیے تیار رہنے کا حکم دے دیا۔

خبر رساں ادارے کے مطابق صدر شی جن پنگ نے گوانگ ڈونگ صوبے کے ایک فوجی اڈے کے دورے کے موقع پر پیپلز لبریشن آرمی کی میرین کور سے جارحانہ خطاب کرتے ہوئے کہا کہ فوج ہائی الرٹ پر رہے اور دشمن کے ممکنہ وار کے منہ توڑجواب کے لیے خود کو تیار رکھے۔

امریکی خبر رساں ادارے سی این این کے مطابق صدر شی پنگ کا یہ فوجی دورہ اس وقت ہوا جب چین اور امریکا کے مابین کئی دہائیوں کے دوران تائیوان اور کورونا وائرس کے پھیلاؤ کے معاملے پر اختلافات کے باعث تناؤ عروج پر ہے اور اس میں مسلسل اضافہ ہورہا ہے۔

یاد رہے کہ وائٹ ہاؤس نے امریکی کانگریس کو مطلع کیا کہ وہ تائیوان کو جدید ہتھیاروں کے3 نظاموں کی فروخت کا منصوبہ آگے بڑھا رہا ہے، جس میں جدید اعلیٰ متحرک آرٹلری راکٹ سسٹم بھی شامل ہے۔

اس پربیجنگ کی جانب سے سخت ردعمل میں وزارت خارجہ کے ترجمان ژا لی جیان نے واشنگٹن سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ تائیوان کو ہتھیاروں کی فروخت کے کسی بھی منصوبے کو فی الفور منسوخ کرے اورامریکا تائیوان فوجی تعلقات کو ختم کیا جائے۔

اگرچہ تائیوان کو کبھی بھی چین کی حکمران کمیونسٹ پارٹی کے زیر کنٹرول نہیں رکھا گیا، تاہم بیجنگ اس جزیرہ نما خطے کا دعوے دار رہا ہے۔ البتہ چین کا کہنا ہے کہ وہ تائیوان پر قبضے کے لیے فوجی طاقت استعمال کرنے کا کوئی ارادہ نہیں رکھتا۔

چند ہفتے قبل ایک تقریر میں امریکی وزیر دفاع مارک ایسپر کا کہنا تھاکہ چین بحری طاقت میں امریکا کا مقابلہ نہیں کرسکتا۔