Aaj News

کرناٹک حکومت مسلم طلباء سے متعلق ڈیٹا اکٹھا کر رہی ہے: رپورٹ

حاصل کردہ اعداد و شمار کے مطابق ریاست بھر میں مختلف سرکاری اسکولوں میں 17 لاکھ سے ذائد مسلم طلبہ زیر تعلیم ہیں
شائع 19 فروری 2022 01:39pm
Edit: Khateeb Ahmed
Edit: Khateeb Ahmed

نئی دہلی: کرناٹک حکومت نے نجی اور سرکاری تعلیمی اداروں میں داخلہ لینے والے مسلم طلباء کے اعداد و شمار جمع کرنے کا عمل شروع کر دیا ہے۔

دکن ہیرالڈ اخبار نے اپنی رپورٹ میں پرائیویٹ کالجوں کے انتظامی سربراہوں اور سرکاری عہدیداروں کا حوالہ دیا ہے کہ ریاستی حکومت کی جانب سے اقلیتی طبقے سے تعلق رکھنے والے طلباء، خاص طور پر پہلی سے دسویں جماعت میں پڑھنے والے طلباء کا ڈیٹا اکٹھا کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔

کرناٹک کے وزیر پرائمری اور سیکنڈری ایجوکیشن بی سی ناگیش نے اخبار کو بتایا کہ روزانہ کی میڈیا رپورٹس کا صحیح نمبروں کے ساتھ مقابلہ کرنے کیلئے ڈیٹا اکٹھا کیا جا رہا ہے۔

کرناٹک میں جو مسلم لڑکیوں کے اسکول اور کالج میں حجاب پہننے کی آزادی کے بارے میں ملک گیر اور بین الاقوامی بحث کی شکل اختیار کر گئی ہے۔

اس قبل کالج کی جانب سے حجاب پہننے والی طالبات کو کلاس روم میں داخل ہونے سے روکنے کے فیصلے کے بعد ریاست بھر میں مظاہروں اور جوابی مظاہروں شروع ہوئے جو پورے بھارت میں پھیل گئے۔

کرناٹک ہائی کورٹ نے اپنے عبوری حکم میں تمام طلبہ کو کلاس روم میں مذہبی لباس پہننے سے روک دیا جبکہ اسکول، پری یونیورسٹی کالج اور کالج وقفے وقفے سے بند رہے۔

جمعرات کو محکمہ پبلک انسٹرکشن سے حاصل کردہ اعداد و شمار کے مطابق ریاست بھر میں مختلف سرکاری اسکولوں میں 17,39,742 مسلم طلبہ زیر تعلیم ہیں

بینگلور کے ایک پرائیویٹ کالج کے پرنسپل نے یہ بتایا کہ ان سے مسلم طلبہ کے ڈیٹا جمع کرنے کو کہا گیا تھا۔

پرنسپل نے جن کا نام رپورٹ میں ظاہر نہیں کیا گیا، مشاہدہ کیا کہ اس نے فرض کیا کہ حجاب پر پابندی کو دیکھتے ہوئے ڈیٹا کالج کے علاقوں کو "حساس زون" کے طور پر لیبل کرنے میں جائے گا۔

ڈی ایچ رپورٹ میں کرناٹک حکومت کی طرف سے جمع کردہ ڈیٹا کی تفصیلات شامل ہیں۔

نتائج میں یہ حقیقت بھی ہے کہ جمعرات 18 فروری کو "ریاست میں 14 اسکولوں میں ہائی کورٹ کے عبوری حکم کی خلاف ورزی کرنے پر کل 162 طالبات کو گھر بھیج دیا گیا۔"

16 فروری کو بھارتیہ جنتا پارٹی کے کرناٹک ونگ نے ٹوئٹر پر ریاست کے اسکولوں اور کالجوں میں حجاب پر پابندی کے خلاف درخواستیں دائر کرنے والے طلباء کی ذاتی تفصیلات شیئر کیں۔

بی جے پی ظاہری طور پر اس بات کو اجاگر کرنے کی کوشش کر رہی تھی کہ لڑکیاں نابالغ تھیں لیکن ایک حقیقت جس نے پارٹی کو مزید آگ میں ڈال دیا۔

فی الحال دونوں ٹویٹس کی جگہ یہ پیغام ہے کہ "یہ ٹویٹ اب دستیاب نہیں ہے کیونکہ اس نے ٹویٹر کے قوانین کی خلاف ورزی کی ہے۔ اورجانیے."

ابھی تک یہ اطلاع ملی تھی کہ 6 مسلم طالبہ کے والدین نے پولیس میں شکایت درج کرائی ہے کہ ان کے بچوں کی ذاتی تفصیلات کچھ لوگ سوشل میڈیا پر شیئر کر رہے ہیں۔

BJP

karnataka

Modi Govt

BJP leader

Human Rights Watch

hijab ban

muslim students

Comments are closed on this story.

مقبول ترین