Aaj News

اتوار, مئ 19, 2024  
10 Dhul-Qadah 1445  

سیاسی جماعتوں سے انتخابی نشانات واپس لینے سے متعلق تمام درخواستیں یکجا کرنے کی ہدایت

الیکشن ایکٹ تو تمام سیاسی جماعتوں نے خود بنایا ہے، لاہور ہائیکورٹ
شائع 21 فروری 2024 01:41pm

لاہور ہائیکورٹ نے سیاسی جماعتوں سے انتخابی نشانات واپس لینے سے متعلق تمام درخواستیں یکجا کرنے کی ہدایت کردی۔

لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس علی باقر نجفی کی سربراہی میں 2 رکنی بینچ نے سیاسی جماعتوں سے انتخابی نشانات واپس لینے کے خلاف انٹرا کورٹ اپیل پر سماعت کی۔

درخواست گزار کی جانب سے اظہر صدیق ایڈووکیٹ پیش ہوئے، انہوں نے مؤقف اختیار کیا کہ الیکشن کمیشن نے انٹرا پارٹی الیکشن درست نہ کرانے پرسیاسی جماعتوں سے انتخابی نشانات واپس لیے۔

درخواست گزار کے مطابق الیکشن ایکٹ کا سیکشن 215 آئین کے آرٹیکل 10 سے متصادم ہے۔

دوران سماعت عدالت نے استفسار کیا کہ کیا سیاسی جماعتوں میں انٹرا پارٹی الیکشن نہیں ہونے چاہیئے؟جس پر درخواست گزار کے وکیل نے بتایا کہ انٹرا پارٹی الیکشن بلکل ہونا چاہیئے مگر الیکشن کمیشن انتخابی نشانات واپس نہیں لے سکتا، انٹرا پارٹی الیکشن نہ کرانے پر الیکشن کمیشن جرمانہ کرسکتا ہے۔

عدالت نے ریمارکس دیے کہ الیکشن ایکٹ تو تمام سیاسی جماعتوں نے خود بنایا ہے، ہمارے سامنے کوئی سیاسی جماعت نہیں آئی ۔

لاہور ہائیکورٹ نے درخواست کو اسی نوعیت کی دیگر درخواستوں کے ساتھ یکجا کرنے کی ہدایت کردی۔

مزید پڑھیں

این اے 128 کے ریٹرننگ افسر کیخلاف توہین عدالت کی درخواست پر فیصلہ محفوظ

انٹرا پارٹی الیکشن نہ کرانے پر انتحابی نشان واپس لیا جاسکتا ہے، سپریم کورٹ کا تفصلی فیصلہ

Lahore High Court

Pakistan Politics

Election symbols

Election Symbol

politcal parties