Aaj News

اتوار, جون 23, 2024  
16 Dhul-Hijjah 1445  

ایرانی صدر ابراہیم رئیسی کے انتقال پر پاکستان کا یوم سوگ کا اعلان، ایرانی سفارتخانے پر ایرانی پرچم سرنگوں

صدرمملکت اوروزیراعظم نے ایرانی صدرابراہیم رئیسی کے انتقال پرگہرے دکھ اورافسوس کا اظہار کیا۔
اپ ڈیٹ 20 مئ 2024 01:13pm

صدرمملکت اوروزیراعظم نے ایرانی صدرابراہیم رئیسی کے انتقال پرگہرے دکھ اورافسوس کا اظہارکرتے ہوئے پاکستان میں یوم سوگ کا اعلان کردیا جبکہ قومی پرچم سرنگوں رہے گا۔

صدرآصف علی زرداری نے کہاکہ مسلم امہ کیلئے خدمات کو خراج تحسین پیش کیا۔ امت مسلمہ کے اتحاد کے بڑے حامی کے انتقال سے عالم اسلام ایک عظیم رہنما سے محروم ہوگیا۔

ایرانی صدر ابراہیم رئیسی اور وزیر خارجہ ہیلی کاپٹر حادثے میں جاں بحق

انہوں نے کہا کہ ایرانی صدر فلسطینی اور کشمیری عوام سمیت عالمی سطح پر مسلمانوں کے درد کودل سے محسوس کرتے تھے۔

وزیراعظم شہبازشریف نے یوم سوگ کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ گذشتہ ماہ ایرانی ایرانی صدراوروزیرخارجہ کی میزبانی قابل مسرت تھی وہ پاکستان کے اچھے دوست تھے۔

علاوہ ازیں وزیر خارجہ اسحاق ڈار، وزیر اطلاعات عطا تارڑ،وزیرداخلہ محسن نقوی سمیت دیگروفاقی کایبنہ اراکین نے بھی گھرے دکھ کا اظہارکیا۔

ہیلی کاپٹر حادثے میں ایرانی صدر کی موت کے بعد اب آگے کیا ہوگا؟

چئیرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو نے المناک موت پراظہارافسوس کرتے ہوئے کہا کہ ہرپاکستانی غمزدہ ہے۔ اسپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق اورچیئرمین سینیٹ یوسف رضا گیلانی نے ایرانی پارلیمان، حکومت اورعوام سے یکجہتی کا اظہارکیا کہاکہ مشکل کے گھڑی میں پاکستان ایرانی حکومت اورعوام کے ساتھ کھڑی ہے۔

مرحوم سید ابراہیم رئیسی کا اہلیہ کے ہمراہ دورہ پاکستان

واضح رہے کہ 8 سال بعد کسی ایرانی صدرنے دورہ پاکستان کیا۔ اپریل 2024 میں ایرانی صدرڈاکٹر سید ابراہیم رئیسی اہلیہ کے ہمراہ دورہ پراسلام آباد پہنچے تھے۔

صدر مملکت، وزیراعظم سمیت کئی اہم شخصیات سے ملاقاتیں کیں۔ اس تین روزہ دورہ میں ایرانی صدر نے کراچی ، لاہوراوراسلام آبادکا سفرکیا تھا۔

پاک ایران 8 مفاہمتی یادداشتوں پردستخط اور دو طرفہ تجارت کو10ارب ڈالرتک لے جانے پر اتفاق ہوا۔ 24 اپریل کوایرانی صدرابراہیم رئیسی سرکاری دورہ مکمل کرکے کراچی سے تہران روانہ ہوئے تھے۔

پاکستان

Iran

iranian president

Iran Helicopter Crash

Iran President Helicopter Crash