Aaj TV News

BR100 4,112 Decreased By ▼ -52 (-1.26%)
BR30 20,622 Decreased By ▼ -321 (-1.53%)
KSE100 39,633 Decreased By ▼ -555 (-1.38%)
KSE30 16,693 Decreased By ▼ -210 (-1.24%)

اسلام آباد:سپریم کورٹ میں کٹاس راج مندر ازخود نوٹس کیس کی سماعت کے دوران عدالت عظمیٰ کے جج جسٹس یحیٰ آفریدی نے کیس کی سماعت سے معذرت کرلی۔

جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3 رکنی بینچ نے کٹاس راج مندر ازخود نوٹس کیس کی سماعت کی۔

دوران سماعت مندر سے متعلق پنجاب حکومت کی جانب سے رپورٹ جمع کروائی گئی جس پر عدالت نے حکم دیا کہ پنجاب حکومت کی رپورٹ دیگر فریقین کو بھی فراہم کریں۔

سماعت کے دوران جسٹس عمرعطا بندیال نے استفسار کیا کہ کٹاس راج مندر کی کیا حالت ہے؟ کیا ایویکیو ٹرسٹ کا چیئرمین لگا دیا گیا؟،جس پر ایڈیشنل ایڈوکیٹ جنرل پنجاب نے عدالت کو بتایا کہ زیر زمین پانی کی صورتحال کو چیک کرنے کیلئے میٹر لگانے کی سفارش کی ہے۔

اس دوران ڈاکٹر رمیش کمار نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ ایک بیورکریٹ کو چیرمین بنا دیا گیا ہے، مندر کی حالت خراب ہے، وہاں مورتیاں تک نہیں۔

ڈاکٹر رمیش کمار کا کہنا تھا کہ باقی مندرٹرسٹ نے یا تو لیز پر دے دیے یا غیر فعال ہیں یا ان پرقبضہ ہے۔

عدالت نے متروکہ وقف املاک کے چیئرمین کو ذاتی حیثیت میں ریکارڈ کے ساتھ طلب کرتےہوئے کیس کی سماعت 9 نومبر تک ملتوی کردی۔