Aaj News

جمعرات, اپريل 25, 2024  
16 Shawwal 1445  

’کبھی نہیں کہا اسٹیبلشمنٹ اپنا راستہ پکڑے مگرسول ملٹری تعلق میں توازن ناگزیرہے‘

چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کا جرمن نشریاتی ادارے کو انٹرویو
شائع 05 اپريل 2023 11:43am
تصویر: اے ایف پی
تصویر: اے ایف پی

سابق وزیر اعظم اورچیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کا کہنا ہے کہ الیکشن سے متعلق سپریم کورٹ کا فیصلہ حتمی ہے ، حکومت نے یہ فیصلہ تسلیم نہ کیا تو یہ توہین عدالت کے زمرے میں لیا جائے گا۔ کبھی نہیں کہا کہ اسٹیبلشمنٹ اپنا راستہ پکڑے۔

جرمن نشریاتی ادارے ڈی ڈبلیو کو ویڈیو انٹرویو میں عمران خان نے کہا کہ حکومت کو اختلاف کا کوئی حق نہیں، یہ ’سیپریشن آف پاور‘ ہے جہاں حکومت، سپریم کورٹ اور پارلیمنٹ کا اپنا اپنا کردار ہے۔ اسی سپریم کورٹ نے ایک سال پہلے ہماری حکومت کا الیکشن کا فیصلہ مسترد کرکے شہباز شریف کا اقتداردیا تھا وہ بھی از خود نوٹس تھا اور تب انہوں نے یہ فیصلہ قبول کرلیا تھا۔

مارشل لاء سے متعلق سوال پر عمران خان نے کہا کہ انہیں الیکشن میں اپنی موت نظرآرہی ہے،اسٹیبلشمنٹ کی جانب سے الیکشن کمیشن کو پوری سپورٹ کے باوجود پی ٹی آئی نے 37 میں سے 30 ضمنی انتخابات میں کامیابی حاصل کی۔ اب انہیں شکست کا ڈر ہے اس لیے مارشل لاء کی دھمکیاں غیرآئینی ہیں، مارشل لاء کے دن پاکستان سے چلے گئے۔

انہوں نے کہا کہ اگر آپ سپریم کورٹ کے فیصلے تسلیم نہیں کرتے تو اس کا مطلب پاکستان میں قانون ختم ہوگیا۔ جنگل کے قانون کی طرف جا رہے ہیں، یہ ہو ہی نہیں سکتا۔ سیاسی جماعت بیچ کا راستہ ڈھونڈتی ہے مگر الیکشن کے ذریعے سیاسی استحکام کے بغیر معیشت سنبھل نہیں سکے گی، اس کے علاوہ کوئی دوسرا راستہ نہیں۔

انتخابی اخراجات کے حوالے سے سوال پرعمران خان نے کہا کہ میں نے ان سے کہا ہے کہ اگر آپ مجھے دلدل سے نکلنے کا روڈ میپ دے دیں، ہم (اکتوبر میں) الیکشن کا انتظارکرلیں گے۔ اگر یہ وجہ دینی ہے کہ الیکشن کروانے کے پیسے نہیں تو اکتوبر میں کدھر سے پیسے آئیں گے۔ آپ اکتوبر میں بھی کہیں گے کہ تب بھی پیسے نہیں ہیں۔

انہوں نے کہا سب جانتے ہیں کہ پی ٹی آئی نے اگلا الیکشن جیتنا ہے اور یہ بات حکومت کو بھی پتہ ہے۔

سابق وزیر اعظم نے مزید کہا کہ پاکستان میں اسٹیلشمنٹ ایک حقیقت ہے، ہم نے کبھی نہیں کہا کہ 70 ستر سال سے جو ان کا کردار بنا ہوا ہے تو اسٹیبلشمنٹ اپنا راستہ پکڑ لے، ایسے نہیں ہوگا لیکن سول اور ملٹری تعلقات میں ایک توازن ناگزیر ہے۔

انہوں نے کہا کہ کوئی انتظامی نظام اس وقت کام نہیں کرسکتا جب تک کہ ذمہ داری منتخب حکوت کی ہو مگر اختیار کہیں اور ہو۔پاکستان کو ٹھیک کرنے کے لیے سرجری کرنی پڑے گی اور بڑے فیصلے کرنے ہوں گے جس کیلئے بڑا مینڈیٹ چاہیے جو الیکشن سے ہی آئے گا۔

کیا الیکشن ’فری اینڈ فیئر‘ ہوں گے اور آپ اسے قبول کریں گے ؟ اس سوال کے جواب میں عمران خان نے کہا کہ صاف شفاف انتخابات جمہوریت کی بنیاد ہیں اور پاکستان کا مستقبل جمہوریت میں ہی ہے، 1970 کی طرح شفاف الیکشن ہمارے مفاد میں ہیں لیکن بدقسمتی یہ ہوئی تھی کہ تب جو پارٹی جیتی تھی اسے اقتدار ہی نہیں دیا گیا۔ ہم امید لگا رہے ہیں کہ ملک کو بحران سے نکالنے کیلئے صاف شفاف انتخابات ہوں گے۔

imran khan

Establishment

Supreme Court of Pakistan

politics April 5 2023

Comments are closed on this story.

تبصرے

تبولا

Taboola ads will show in this div