Aaj News

پیر, اپريل 22, 2024  
13 Shawwal 1445  

غیرقانونی افغانوں کی وطن واپسی: سپریم کورٹ نے لارجر بینچ کی تشکیل کیلئے معاملہ کمیٹی کو بھجوا دیا

درخواست گزاروں نے آرٹیکل 224 کے تحت نگراں حکومت کے اختیارات پر سوال اٹھایا ہے، عدالت
شائع 13 دسمبر 2023 04:48pm
فوٹو ــ فائل
فوٹو ــ فائل

سپریم کورٹ آف پاکستان نے غیر قانونی افغانوں کی وطن واپسی کے خلاف درخواست پر سماعت کے لیے معاملہ لارجر بینچ کی تشکیل کے لیے کمیٹی کو بھجوا دیا۔

جسٹس سردار طارق مسعود کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3 رکنی بینچ نے غیر قانونی افغانوں کی وطن واپسی کے خلاف درخواست پر سماعت کی۔

سپریم کورٹ نے ریمارکس دیے کہ درخواست گزاروں نے آرٹیکل 224 کے تحت نگراں حکومت کے اختیارات پر سوال اٹھایا ہے، پریکٹس اینڈ پروسیجر ایکٹ کے تحت آئین کی تشریح کے لیے معاملات لارجر بینچ میں جانے چاہئیں۔

عدالت نے ریمارکس دیے کہ افغان باشندوں کی بے دخلی کیس میں آرٹیکل 9، 10 اور 24 سمیت بنیادی حقوق کی تشریح درکار ہے اور سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر ایکٹ کے تحت آئینی تشریح کا معاملہ لارجر بینچ سن سکتا ہے اس لیے کیس لارجربینچ کی تشکیل کے لیے ججزکمیٹی کو بھیجا جاتا ہے۔

دوران سماعت، ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے کہا کہ وفاقی حکومت اور وزارت خارجہ نے اپنے جوابات جمع کرا دیے، درخواست گزاروں نے اپنی درخواستوں میں افغان باشندوں سے متعلق کہا حقیقت اس کے برعکس ہے۔

جسٹس سردارطارق مسعود نے ریمارکس دیے کہ حکومت تو صرف ان لوگوں کو واپس بھیج رہی ہے جو غیرقانونی طور پر مقیم ہیں۔

درخواست گزار کے وکیل سمیع الدین نے کہا کہ قانونی دستاویزات نہ بھی ہوں تب بھی بنیادی حقوق کو مد نظر رکھنا لازم ہے۔

جسٹس سردار طارق مسعود نے ریمارکس دیے کہ غیر ملکیوں کے پاس قانونی دستاویزات نہیں ہیں تب بھی ان کو انسانی حقوق کے تحت ملک میں رہنے دیا جائے؟

وکیل درخواست گزار نے کہا کہ غیر قانونی طور پر مقیم غیر ملکیوں کے ساتھ قانون اور آئین پاکستان کے مطابق سلوک ہونا چاہیئے۔

جسٹس سردار طارق مسعود نے ریمارکس میں کہا کہ پاکستان کے قانون کے مطابق تو غیر قانونی مقیم غیر ملکیوں کو پہلے جیل ہونی چاہیئے، کیا یہ چاہتے ہیں کہ ان غیر ملکیوں کو پہلے جیل ہو پھر بے دخل کیا جائے؟ حکومت کے مطابق 90 فیصد غیر قانونی مقیم غیر ملکی رضاکارانہ طور پر واپس جا رہے ہیں، کیا پاکستان میں کوئی جاسوس آ کر بیٹھ جائے اور دو سال بعد کہے کہ اسے گرفتار نہ کیا جائے تو پھر کیا ہوگا؟

وکیل درخواست گزار نے دلائل میں کہا کہ کلبھوشن جادیو کا کیس ہو چکا اورغیر ملکیوں سے متعلق پاکستان بین الاقوامی قوانین کا رکن ملک ہے۔

جسٹس عائشہ ملک نے ریمارکس دیے کہ یہ کیس آئینی تشریح کا ہے اور سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر قانون کے بعد لارجر بینچ کو سننا چاہیے، درخواست گزاروں نے نگراں حکومت اور اپیکس کمیٹی کے اختیار کو چیلنج کیا ہے۔ جسٹس یحییٰ آفریدی نے کہا کہ کیا حکومت بھی یہی سمجھتی ہے کہ یہ کیس لارجر بینچ کی تشکیل کے لیے واپس کمیٹی کو جانا چاہیے؟

ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے کہا کہ حکومت سمجھتی ہے کہ اس کیس کو لارجر بینچ کی تشکیل کے لیے کمیٹی کو بھجوایا جائے۔

مزید پڑھیں

افغان شہریوں کی وطن واپسی کےخلاف کیس کھلی عدالت میں لگانے کاحکم

غیر قانونی غیرملکیوں کی بے دخلی ریاست کی پالیسی ہے، عدالت مداخلت نہیں کرسکتی، سندھ ہائیکورٹ

غیر قانونی غیر ملکیوں کی بے دخلی کیخلاف سپریم کورٹ میں درخواست دائر

وکیل عمر گیلانی نے کہا کہ ہر گزرتے دن کے ساتھ افغان شہریوں کی واپسی ہو رہی ہے تو کیس کو جلد سماعت کے لیے مقرر کیا جائے۔

بعدازاں عدالت عظمیٰ نے کیس کی مزید سماعت موسم سرما کی تعطیلات کے بعد تک ملتوی کردی۔

Afghan refugees

Supreme Court

اسلام آباد

justice sardar tariq masood

SUPREME COURT OF PAKISTAN (SCP)

Illegal Afghan Residents

Illegal immigrants

Illegal Afghan Immigrants

Afghan Refugees Returning

AFGHAN REFUGEES EXPULSION

Comments are closed on this story.

تبصرے

تبولا

Taboola ads will show in this div