Aaj News

ہفتہ, جون 22, 2024  
15 Dhul-Hijjah 1445  

پاک امریکہ تعلقات کو نقصان پہنچانے کے ساتھ عمران خان نے فوج پر جھوٹے الزامات عائد کیے، سائفر کیس فیصلہ

'فیئر ٹرائل کا حق چالاک ملزم کیلئے نہیں، ہمدردیاں لینے کے لئے بےیارومددگار بننے کی کوشش کی گئی
اپ ڈیٹ 01 فروری 2024 01:20pm

آفیشل سیکرٹ ایکٹ کے تحت قائم خصوصی عدالت کے جج ابوالحسنات ذوالقرنین نے سائفر کیس کا تفصیلی فیصلہ جاری کردیا ہے۔ جس میں کہا گیا کہ فیئر ٹرائل کا حق چلاک ملزم کیلئے نہیں، پاک امریکہ تعلقات کو نقصان پہنچانے کے بعد عمران خان نے پاکستانی فوج پر جھوٹے الزامات عائد کیے۔

سائفر کیس کی خصوصی عدالت نے کیس میں بانی پی ٹی آئی عمران خان اور شاہ محمود قریشی کو 10،10 سال قید کی سزا سنائی ہے۔

سائفر کیس کا تفصیلی فیصلہ 77 صفحات پر مشتمل ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ بانی پی ٹی آئی نے سائفر وزارت خارجہ کو واپس نہیں بھیجا۔

فیصلے میں کہا گیا کہ سائفر کے معاملے سے دیگر ممالک کے ساتھ تعلقات پر اثر پڑا، جس سے دشمنوں کو فائدہ ہوا۔

فیصلے میں کہا گیا کہ سماعت کے دوران وکلاء صفائی غیرسنجیدہ دکھائی دیے۔

فیصلے کے مطابق 17 ماہ کی تحقیقات سے ثابت ہوا کہ سائفر کیس تاخیر سے دائر نہیں کیا گیا۔

فیصلے میں کہا گیا کہ دوران سماعت بانی پی ٹی آئی عمران خان اور شاہ محمود قریشی نے خود ساختہ پریشانیاں بنائیں اور ہمدردیاں لینے کے لئے بےیارومددگار بننے کی کوشش کی۔ فیئر ٹرائل کا حق چالاک ملزم کے لیے نہیں۔

عدالت نے فیصلے میں کہا کہ سائفر کو اپنے لیے استعمال کیا گیا، عمران خان اور شاہ محمود قریشی نے بطور وزیراعظم اور وزیر خارجہ اپنے عہد کی خلاف وزری کی جس سے پاکستان اور امریکا کے تعلقات کو نقصان پہنچا۔

عدالت نے اپنے فیصلے میں لکھا کہ عمران خان اور شاہ محمود قریشی کی وجہ سے پاکستان کے سائفر سسٹم کو نقصان پہنچا، یہ جان بوجھ کر اور باقاعدہ منصوبہ بندی سے بولا کا ایک جھوٹ تھا جس کا مقصد عوامی جذبات کو ابھارنا تھا اور اس کے پاکستان کے خارجہ تعلقات پر نتائج کی پرواہ نہیں کی گئی، 31 مارچ 2022 کو جب عمران خان بدستور وزیراعظم تھے، انہوں نے امریکہ کا نام لے کر کہا کہ اس نے دھمکی آمیز میمو بھیجا ہے۔ اس پر امریکہ نے مختصر وقت میں تین سطح پر جواب دیا اور کہا کہ عمران خان کے الزامات میں کوئی سچائی نہیں۔

عدالتی فیصلے میں تحریر کیا گیا کہ ”پاک امریکہ تعلقات اعتماد اور بھروسے کے حوالے سے کو خاصا نقصان پہنچانے کے بعد اور جب انہیں (عمران خان کو) اپنی امریکہ مخالف مہم کے ی اپنے سیاسی مستقل کے حوالے سے نتائج کا اندازہ ہوا تو ملزم عمران احمد خان نیازی نے پاکستانی فوج کی قیادت پر خود کو اقتدار سے نکالنے کے جھوٹے الزامات عائد کرنا شروع کردیئے۔“

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ بانی پی ٹی آئی اور شاہ محمود قریشی نے جان بوجھ کر جھوٹ بولا، اعظم خان کا بیان سچائی پر مبنی تھا جس نے پراسیکیوشن کے دلائل کو مضبوط بنایا، سائفر کے ذریعے دیگر ممالک سے رابطے کے سسٹم کی سالمیت پر سمجھوتا کیا گیا، سائفر کے معاملے سے دیگر ممالک کے ساتھ تعلقات پر اثر پڑا جس سے دشمنوں کو فائدہ ہوا۔

عدالت کے تفصیلی فیصلے میں کہا گیا ہے کہ بانی پی ٹی آئی نے سائفر وزارتِ خارجہ کو واپس نہیں بھیجا، سائفر کیس 17 ماہ کی تحقیقات کے بعد دائر کیا گیا، 17 ماہ کی تحقیقات سے ثابت ہوا کہ مقدمہ تاخیر سے دائر نہیں کیا گیا، بطور وزیراعظم عمران خان کی ذمہ داری تھی کہ سائفر واپس لوٹاتے، وزارت خارجہ وزیراعظم سے سائفر واپس نہیں مانگ سکتی، اب تک عمران خان نے سائفر واپس نہیں کیا۔

عدالت نے فیصلے میں لکھا کہ کیس سائفر سے متعلق ہے جو وزارتِ خارجہ کو واشنگٹن سے موصول ہوا، سائفر بہت حساس دستاویز ہے جس سے امریکا پاکستان کا ایک دوسرے پر بھروسا بھی جڑا ہے، 25 گواہان کے بیانات قلمبند کیے گئے لیکن وکلاء صفائی غیر سنجیدہ دکھائی دیے، 27 جنوری کو وکلاء صفائی غیر حاضر تھے، سرکاری وکیل موجود تھا۔

تحریری فیصلے میں لکھا گیا ہے کہ عمران خان اور شاہ محمود قریشی نے سرکاری وکیل کے ساتھ بدتمیزی کی اور فائلیں پھینکیں، وکلاء صفائی عثمان گل، علی بخاری کے پہنچنے پر جرح کی تیاری کے لیے وقت دیا، جب جرح کا کہا تو وکلاء صفائی نے انکار کر دیا، جس کے بعد سرکاری وکیل نے جرح کی، پراسیکیوشن نے ناصرف گواہان بلکہ دستاویزات پر مبنی ثبوت بھی پیش کیے، ریکارڈ پر ایسا کچھ نہیں جس سے ثابت ہو کہ پراسیکیوشن کے گواہان میں کمی رہ گئی۔

عدالت کے فیصلے میں کہا گیا ہے کہ عمران خان اور شاہ محمود قریشی کے مختلف وکلاء آئے، درخواستیں دےکر تاخیری حربے اپنائے گئے، دونوں کے وکلاء نے قانون کا مذاق بنایا، عمران خان اور شاہ محمود قریشی کا رویہ عدالت کے سامنے تھا، نقول فراہمی اور فرد جرم پر دونوں نے دستخط نہیں کیے جس سے نامناسب رویہ ثابت ہوا۔

جج ابوالحسنات ذوالقرنین نے فیصلے میں لکھا ہے کہ بانی پی ٹی آئی اور شاہ محمود قریشی نے 342 کے بیان دیے لیکن دستخط نہ کیے، سابق وزیراعظم اور سابق وزیر خارجہ سے ایسے رویے اور تاخیری حربوں کی توقعات نہیں تھیں، فئیر ٹرائل کیا، مجرمان کو جرح کا مکمل موقع دیا گیا لیکن جان بوجھ کر جرح نہیں کی گئی۔

تفصیلی فیصلے میں سزائیں

فیصلے میں کہا گیا کہ عدالت بانی پی ٹی آئی، شاہ محمود قریشی کو آفیشل سیکرٹ ایکٹ کی دفعہ 5 تھری اے، 5 ون سی، 5 ون ڈی، 9 کے تحت قصور وار قرار دیتی ہے۔

فیصلے میں کہا گیا کہ عدالت بانی پی ٹی آئی کو آفیشل سیکرٹ ایکٹ کی دفعہ 5 تھری اے کے تحت 10 سال قید بامشقت کی سزا سناتی ہے، عدالت بانی پی ٹی آئی کو آفیشل سیکرٹ ایکٹ کی دفعہ 5 ون سی کے جرم میں دو سال قید بامشقت اور 10 لاکھ جرمانے کی سزا سناتی ہے، عدالت بانی پی ٹی آئی کو آفیشل سیکرٹ ایکٹ کی دفعہ 5 ون ڈی کے جرم میں بھی دو سال قید بامشقت اور 10 لاکھ جرمانے کی سزا سناتی ہے۔

فیصلے کے مطابق عدالت نے دونوں ملزمان بانی پی ٹی آئی اور شاہ محمود قریشی کو آفیشل سیکرٹ ایکٹ کی دفعہ 5 تھری اے اور تعزیرات پاکستان کی دفعہ 34 کے تحت مجرم قرار دیا۔

عدالت نے شاہ محمود قریشی کو بھی 10 سال قید بامشقت کی سزا سنائی اور فیصلے میں کہا کہ تمام دفعات کے تحت دی گئی سزاؤں کی مدت فوری اور ایک ساتھ تصور ہوگی۔

Cypher Investigations

cypher case Imran Khan

Cypher case

CIPHER CASE

Imran Khan Shah Mehmood Qureshi Convicted

Imran Khan sentencing