Aaj TV News

BR100 4,607 Decreased By ▼ -61 (-1.3%)
BR30 20,274 Decreased By ▼ -618 (-2.96%)
KSE100 44,629 Decreased By ▼ -192 (-0.43%)
KSE30 17,456 Decreased By ▼ -66 (-0.38%)
COVID-19 TOTAL DAILY
CASES 1,265,650 603
DEATHS 28,300 20
Sindh 466,154 Cases
Punjab 438,133 Cases
Balochistan 33,133 Cases
Islamabad 106,504 Cases
KP 176,950 Cases

تحریک انصاف کی حکومت نے ایک اور یوٹرن لیتے ہوئے آئی ایم ایف کے دباؤ میں آکر مزید کڑی شرائط قبول کرلی ہیں۔

حکومت نے مبینہ طور پر بجلی کے نرخ میں 1.39 روپے فی یونٹ اضافہ کرنے پر اتفاق کیا ہے۔

بزنس ریکارڈر نے ذرائع کے حوالے سے دعویٰ کیا کہ مبینہ طور پر یہ سمجھوتہ پاکستانی حکام، بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف)، ورلڈ بینک اور ایشیائی ترقیاتی بینک (اے ڈی بی) کے درمیان طے پایا ہے۔

ذرائع نے بتایا کہ وزیر خزانہ شوکت ترین، جو آئی ایم ایف کے ساتھ مذاکرات کے لیے واشنگٹن پہنچ رہے ہیں، یہ پیغام لے کر جائیں گے کہ حکومت ٹیرف بڑھا دے گی۔

اس سے قبل، وزیر اعظم عمران خان اور شوکت ترین نے سرعام بیس ٹیرف میں اضافے کی مخالفت کی تھی کیونکہ ان کے مطابق نہ تو انڈسٹری اور نہ ہی دیگر زمرے کے صارفین اس کا نقصان برداشت کر سکیں گے۔

تاہم آئی ایم ایف اور ورلڈ بینک کے سخت مؤقف نے حکومت کو اپنے پہلے مؤقف سے پیچھے ہٹنے پر مجبور کر دیا۔

ذرائع نے بتایا کہ حکومت ڈسکوز کی سالانہ ٹیرف درخواستوں کے تعین کا انتظار کر رہی ہے جس کے بعد یہ فیصلہ کرے گی کہ بیس ٹیرف میں کتنا اضافہ صارفین کو دیا جائے گا۔

ذرائع نے بتایا کہ حکومت کو نئے کوئلے سے چلنے والے بجلی گھروں کی 200 ارب روپے کی گنجائش کی ادائیگی کی وجہ سے بیس ٹیرف میں 1.50 روپے فی یونٹ اضافہ کرنا ہوگا۔

ذرائع کے مطابق، جیسا کہ حکومت اور آئی ایم ایف کے درمیان واشنگٹن میں معاہدہ طے پایا ہے ، نئے سرکلر ڈیٹ مینجمنٹ پلان (سی ڈی ایم پی) کو حتمی شکل دی جائے گی۔

پاکستان نے فروری 2021 میں ہونے والے دوسرے سے پانچویں جائزہ سٹاف لیول مذاکرات کے دوران وعدہ کیا تھا کہ 1 جون 2021 سے نرخوں میں 1.39 فیصد اضافہ کیا جائے گا کیونکہ نیپرا کے طے شدہ ٹیرف کے دوسرے مرحلے میں 2.34 روپے فی یونٹ ہے جس میں سے 1.95 روپے فی یونٹ اس سال کے شروع میں پہلے ہی مطلع کیا جا چکا ہے۔

ملک کا گردشی قرضہ 21 اگست تک 2.234 کھرب روپے تک پہنچ گیا۔

ذرائع نے بتایا کہ آئی ایم ایف نے مالی سال 2019-20 کے مقابلے میں مالی سال 2020-21 میں ریکوری میں کمی پر بھی برہمی کا اظہار کیا ہے۔

پچھلی سی ڈی ایم پی میں ، حکومت نے قرض دہندگان سے وعدہ کیا تھا کہ وہ 2022 تک ٹیرف میں 5 روپے فی یونٹ اضافہ کرے گی۔

پاور ڈویژن نے مالی سال 2021-22 کے لیے 501 ارب روپے کی سبسڈی دی تھی لیکن وزارت خزانہ نے 330 ارب روپے مختص کیے ، جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ 171 ارب روپے کا فرق اب سرکلر ڈیٹ کا حصہ بن جائے گا۔

پی ٹی آئی حکومت نے پچھلے تین سالوں میں پہلے ہی ٹیرف میں 40 فیصد سے زیادہ اضافہ کیا ہے جس سے عام آدمی کی پریشانیوں میں کئی گنا اضافہ ہوا ہے۔ اگست 2021 میں 44 ارب روپے سرکلر ڈیٹ میں شامل کیے گئے ہیں ، جن میں سے 21 ارب روپے غیر ادا شدہ سبسڈی سے متعلق ہیں، 10 ارب روپے غیر بجٹ سبسڈی سے، 5 ارب روپے آئی پی پیز پر تاخیر سے ادائیگی پر سود چارجز، 3 ارب روپے پی ایچ پی ایل مارک اپ، زیر التواء پیداواری لاگت کے لیے 16 ارب روپے، کے ای کی طرف سے عدم ادائیگی کے لیے 13 ارب روپے، ڈسکوز کے نقصانات/ ناکامی پر 27 ارب روپے اور وصولی کے تحت ڈسکو کو 40 ارب روپے ہیں۔