Aaj.tv Logo

اسلام آباد:وزیراعظم عمران خان نے مہنگائی میں پسے عوام کیلئے 120اروپ روپے کے ریلیف پیکج کا اعلان کردیا، پیکج سے 13کروڑ لوگ مستفید ہوں گےجبکہ 6ماہ تک پیکج کے تحت دال، آٹا اور گھی30فیصد سستے نرخوں پر ملے گا۔

وزیراعظم کی طرف سے قوم کے خطاب میں ریلیف دئیے گئے پروگرام کا اعلان کر دیا گیا، حال ہی میں مکمل ہونے والے احساس سروے کے ذریعے شناخت کئے گئے تقریباً 20 ملین خاندان احساس راشن پروگرام سے مستفید ہوں گے،مجموعی طور پر ملک بھر میں 130 ملین افراد مستفید ہوں گے جو کہ آبادی کا 53 فیصد ہے۔

وفاقی کابینہ نے اس پروگرام کو پورے پاکستان میں شروع کرنے کی منظوری دے دی ہے، احساس سروے کے ذریعے شناخت کئے گئے تقریباً 20 ملین خاندان اس پروگرام سے مستفید ہوں گے،مجموعی طور پر ملک بھر میں 130 ملین افراد مستفید ہوں گے جو کہ آبادی کا 53 فیصد ہے۔

گزشتہ روز وفاقی کابینہ نے اس پروگرام کو پورے پاکستان میں شروع کرنے کی منظوری دی تھی، اگرچہ بین الاقوامی منڈی میں قیمتوں میں اضافے کی وجہ سے گھریلو اضافہ ہوا ہے، تاہم افراط زر پر قابو پانا حکومت کیلئے ایک اہم پالیسی مقصد ہے،آٹا، دالوں، گھی اورکھانے کے تیل کی خریداری پر 20 ملین خاندانوں میں سے ہر ایک کو 1000 روپے ماہانہ ان تینوں اشیاء پر فی یونٹ خریداری پر 30 فیصد سبسڈی دی جائے گی۔

پروگرام کو سبسڈی کی فراہمی کے ایک درست ہدف کے نظام کے طور پر ڈیزائن کیا گیا ہے جس میں مستحق مستفید افراد پر توجہ مرکوز کی گئی ہے تاکہ ڈیجیٹل طور پر پروسیس شدہ لین دین کے ذریعے رعایت پر ضروری اشیاء کی خریداری کیلئے مالی مدد فراہم کی جا سکے۔

احساس پروگرام نے نیشنل بینک کے ساتھ مل کر ڈیجیٹل طور پر فعال موبائل پوائنٹ آف سیل سسٹم تیار کیا ہے تاکہ ملک بھر میں نیشنل بنک کے نامزد کردہ کریانہ اسٹورز کے نیٹ ورک کے ذریعے مستفید افراد کی خدمت کی جا سکے۔

احساس پروگرام اور نیشنل بینک نے ٹیکنالوجی کی قیادت میں ٹارگٹڈ سبسڈی کی تقسیم کا پروگرام تیار کیا ہے ،یہ نظام ریٹیل سیکٹر کے حصوں کو ڈیجیٹائز کرے گا،فیصلہ سازی کیلئے ریئل ٹائم ڈیٹا کا استعمال ہوگا۔

اس پروگرام میں ڈیجیٹل پلیٹ فارم کا استعمال پروڈکٹ اور جغرافیائی سطح پر ہر استفادہ کنندہ کے ذریعے سبسڈی کے استعمال کو ٹریک کرنے میں مدد کرے گا جو اس عمل میں انتہائی ضروری شفافیت فراہم کرے گا، اس عمل سے فائدہ اٹھانے والوں اور اسٹور مالکان کو ڈیجیٹل طور پر زیادہ ماہر بنانے میں مدد ملے گی۔

شرکت کرنے والے کریانہ اسٹور مالکان کو بینک اکاؤنٹس کھولنے کی ضرورت ہوگی جس سے مالیاتی شمولیت کو مزید بڑھانے میں مدد ملے گی اور راست سوفٹ ویئرکے ذریعے کی جانے والی ادائیگیوں سے پاکستان میں ڈیجیٹل لین دین کے پیمانے کو بڑھانے میں مدد ملے گی۔

فائدہ اٹھانے والوں کی آن لائن رجسٹریشن کیلئے احساس پروگرام اگلے ہفتے ایک رجسٹریشن پورٹل کھولے گا،پروگرام کے ڈیزائن کے مطابق احساس راشن پاکستان بھر میں 20 ملین گھرانوں کا احاطہ کرے گا جن کا غربت کا اسکور 39 سے کم اورآمدنی31 ہزار 500 روپے ماہانہ ہے۔

شفافیت کے مفاد میں رجسٹرڈ کریانہ اسٹورزاوراستفادہ کنندگان کی تصدیق کے سخت عمل سے گزرنا ہوگا تاکہ دھوکہ دہی کے واقعات کو کم کیا جاسکے،وفاقی اورصوبائی لاگت کے اشتراک کے انتظام کے تحت اگلے 6 ماہ کیلئے رواں مالی سال میں 120 ارب روپے اس پروگرام کیلئے رکھے گئے ہیں۔

وفاقی حکومت اور تمام شریک وفاقی یونٹس 35/65 کے تناسب سے مالی وسائل کا اشتراک کریں گے،پنجاب، خیبرپختونخوا، گلگت بلتستان اور آزاد جموں و کشمیر کی حکومتیں پہلے ہی اس پروگرام میں شرکت پر رضامند ہو چکی ہیں۔