Aaj.tv Logo

لاہور ہائی کورٹ میں ایک رٹ پٹیشن جمع کرائی گئی ہے جس میں مشہور ویڈیو گیم پلیئر اننونز بیٹل گراؤنڈز (پب جی) پر پابندی کے لیے درخواست دائر کی گئی ہے۔

میڈیا رپوٹ کے مطابق دائر کردہ پٹیشن پنجاب میں پرتشدد واقعات، خاص طور پر حال ہی میں کاہنہ نو میں ایک خاندان کے قتل کو پب جی سے جوڑتی ہے۔

اس سے قبل صوبے میں پولیس نے ایک 18 سالہ "پب جی کے عادی" نوجوان کو حراست میں لیا جب اس نے مبینہ طور پر اپنی ماں، بہن اور بھائی کو نیند میں گولی مار کر ہلاک کر دیا۔

پولیس نے دعویٰ کیا کہ نوجوان نے پرتشدد حرکت کا ارتکاب اس وقت کیا جب وہ ویڈیو گیم میں بار بار ہارنے اور والدہ کی طرف سے ضرورت سے زیادہ ڈانٹنے سے "اداس" ہو گیا۔

درخواست گزار کے وکیل ندیم سرور نے موقف اختیار کیا کہ ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) نے 2018 میں گیمنگ کی لت کو ذہنی صحت کی خرابی قرار دیا تھا کیونکہ اس سے ڈپریشن اور پریشانی کی سطح میں اضافہ ہوتا ہے۔

وکیل نے مزید استدعا کی کہ یہ ویڈیو "صارفین کے لیے زندگی اور صحت کے لیے سنگین خطرہ" بن چکی ہے اور اس سے کھلاڑیوں کے اہل خانہ کو مشکلات کا سامنا ہے اور اگر جلد پابندی نہ لگائی گئی تو یہ "نوجوان نسل کو تباہ" کر دے گی۔

درخواست گزار نے استدعا کی کہ "قتل کے خوفناک واقعات کے باوجود پب جی پر پابندی لگانے کے ریاستی اہلکاروں کی طرف سے کارروائی اسلامی جمہوریہ پاکستان 1973 کے آئین کے آرٹیکل 9 (زندگی کا حق)، 37 اور 38-D کی خلاف ورزی ہے، لہذا اس پر پابندی عائد کرنے کی ضرورت ہے۔ نوجوان نسل کی زندگیوں کے تحفظ کے لیے بغیر کسی تاخیر کے اس گیم پر جلد از جلد مسلط کیا جائے‘‘۔

وکیل ندیم سرور نے مزید کہا کہ پاکستان میں آن لائن گیمز کو ریگولیٹ کرنے کے لیے کوئی قانون موجود نہیں تھا جب کہ پڑوسی ملک انڈیا میں آن لائن گیمنگ کو ریگولیٹ کرنے کے لیے قوانین بنائے گئے تھے۔

وکیل نے مزید کہا کہ "وقت کی ضرورت تھی کہ آن لائن گیمنگ کو ریگولیٹ کرنے کے لیے قانون نافذ کیا جائے اور جواب دہندہ (سیکرٹری قانون کے ذریعے فیڈریشن آف پاکستان) کو دیگر ممالک کی طرح آن لائن گیمنگ کو ریگولیٹ کرنے کے لیے قوانین وضع کرنے کی ہدایت جاری کی جا سکتی ہے"۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہندوستان ان بہت سے ممالک میں سے ایک ہے جنہوں نے مشہور جنگی شاہی کھیل پر پابندی عائد کی ہے جبکہ دیگر ممالک جہاں اس گیم پر پابندی عائد ہے ان میں چین، اردن، نیپال، اسرائیل اور عراق شامل ہیں۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ بہت سے دوسرے ممالک مستقبل قریب میں اس گیم پر پابندی لگانے کا ارادہ رکھتے ہیں جبکہ پب جی کھیلنے کے معلوم نتائج آنکھوں پر دباؤ، جھرجھری، درد شقیقہ، موٹاپا، کم نیند، تشدد اور بہت کچھ ہیں۔

اس کے علاوہ نفسیاتی صحت کے مسائل بھی ہیں، جیسے کہ واپسی (چڑچڑاپن، کم نیند، غصہ) ڈپریشن، بے خوابی اور یہاں تک کہ مجبوری کی خرابی کے نتیجے میں مادے کا استعمال۔

ندیم سرور نے یہ بھی دعویٰ کیا کہ اس طرح کے گیمز کی لت غیر قانونی مادے کے استعمال کو جنم دے سکتی ہے اور بالآخر صحت کی خرابی کا باعث بن سکتی ہے۔

اس کے باوجود، نوجوان اور بالغ لوگ PUBG کھیلنے میں کافی وقت صرف کرتے ہیں۔

درخواست گزار نے سیکرٹری قانون کے ذریعے فیڈریشن آف پاکستان، پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹر اتھارٹی (پیمرا) کو اپنے چیئرمین کے ذریعے اور پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی (پی ٹی اے) کو اپنے چیئرمین کے ذریعے مدعا بنایا۔