Aaj News

آپریشن لندن برج: ملکہ برطانیہ کی موت کے بعد کیا ہوگا؟

ملکہ برطانیہ کی موت کے فوراً بعد "آپریشن لندن برج" کے نام سے ایک پیچیدہ منصوبہ بندی کا آغاز ہوجائے گا۔
اپ ڈیٹ 08 ستمبر 2022 11:04pm
<p>آرٹ ورک: سفیرالہٰی قریشی</p>

آرٹ ورک: سفیرالہٰی قریشی

ملکہ برطانیہ الزبتھ دوم 96 سال کی عمر میں انتقال کرچکی ہیں اور بکنگھم پیلس کی جانب سے سرکاری سطح پر تصدیق کی جاچکی ہے، اس صورتِ حال سے پیدا ہونے والے بحران سے نمٹنے کیلئے پہلے سے ہی تیاری کی جاچکی ہے۔

ملکہ برطانیہ کی موت کے فوراً بعد “آپریشن لندن برج” کے نام سے ایک پیچیدہ منصوبہ بندی کا آغاز ہوجائے گا۔

1960 کی دہائی میں ترتیب دیا گیا “آل ہینڈ پروٹوکول” اس بارے میں تفصیلی ہدایات دی گئی تھیں کہ مملکت کے سربراہ کے انتقال کے بعد پہلے 10 دنوں کو کس طرح سنبھالنا ہے، جس سے ان کے بڑے بیٹے شہزادہ چارلس کو تخت کی ہموار منتقلی کو یقینی بنایا جائے۔

آپریشن کا نام ایک خفیہ کوڈ کی نمائندگی کرتا ہے جو بکنگھم پیلس کے سب سے سینئر عملے اور حکومت کے ارکان کو افسوسناک خبر پہنچانے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے، اس سے پہلے کہ اس کا اعلان باقی دنیا میں کیا جائے۔

خبر کو خفیہ رکھنے کے لیے سب سے پہلے اطلاع موصول کئے جانے والوں کو بتایا جائے گا، “لندن برج اِز ڈاؤن”۔

1952 میں برطانیہ کے بادشاہ اور ملکہ الزبتھ کے والد کنگ جارج ششم کی موت پر کوڈ “ہائیڈ پارک کارنر” کا استعمال کیا گیا تھا۔

اسی طرح، اپریل 2021 میں ملکہ کے 99 سالہ شوہر شہزادہ فلپ کی موت کو “آپریشن فورتھ برج” کے تحت شیئر کیا گیا تھا، جب کہ 2002 میں 101 سال کی عمر میں ملکہ کی والدہ کی موت کو “ٹے برج” کا نام دیا گیا تھا۔

لیکن منصوبہ بند رازداری کے باوجود، ملکہ کا کوڈ ورڈ طویل عرصے سے بالکل اسی طرح عوامی ہے جیسے ان کے جنازے سے پہلے 10 دن کے لیے تفصیلی، بہت زیادہ مشق کیے گئے منصوبے ہیں۔

پولیٹیکو نے 2021 میں اعلیٰ سطحی دستاویزات حاصل کرنے کے بعد مزید تفصیلات کا بھی انکشاف کیا تھا، بشمول اگر لندن میں سوگواران کی بھیڑ حد سے تجاوز کر جائے تو مکنہ بحران میں برطانوی حکام کا پلان کیا ہوگا۔

تاہم، گارڈین نے بتایا کہ گزشتہ کئی سالوں کے دوران منصوبوں کا بار بار جائزہ لیا گیا اور اسے اپ ڈیٹ کیا گیا ہے، جس کا مطلب ہے کہ آپریشن لندن برج میں آخری لمحات میں تبدیلیاں ہوسکتی ہیں۔

لیکن اگر کوئی تبدیلی نہیں کی گئی تو ملکہ کی موت کو اندرونی طور پر “D-Day” کہا جائے گا، جوکہ ایک بڑے نئے آپریشن کے لیے فوجی اصطلاح ہے اور 1944 میں نارمنڈی پر اتحادیوں کے مشہور ترین حملے کے بعد دوسری جنگ عظیم کے خاتمے کے اعلان کیلئے استعمال کیا جاتا ہے۔

ملکہ کی موت کے اگلے دن “D+1” ہو گا اور “D+10” پر ان کی آخری رسومات ادا کی جائیں گی، جسے منصوبے کے مطابق “یومِ قومی سوگ” قرار دیا جائے گا۔

ملکہ کے پرائیویٹ سیکرٹری مبینہ طور پر پہلے شخص ہوں گے جنہیں ان کی موت کی خبر دی جائے گی، اس سے پہلے کہ “کال کیسکیڈ” وزیر اعظم اور برطانیہ کے سب سے سینئر وزراء اور عہدیداروں کے ساتھ اس خبر کا اشتراک کرے۔

پولیٹیکو کی طرف سے شئیر کردہ ایک اپ ڈیٹ کال اسکرپٹ کے مطابق اس کے بعد محکمانہ مستقل سیکرٹریز حکومتی وزراء کو بتائیں گے، “ہمیں ابھی ابھی محترمہ ملکہ کی موت کی اطلاع ملی ہے۔”

انہیں بتایا جائے گا کہ عالمی اعلان سے پہلے “صوابدید کی ضرورت ہے”۔

اسی وقت، دفتر خارجہ کا گلوبل رسپانس سینٹر دولت مشترکہ کے ممالک اور ان ممالک کو خبردار کرے گا جہاں ملکہ ریاست کی سربراہ تھیں۔

ایک بار جب تمام اعلیٰ سرکاری حکام کو الرٹ کر دیا جائے گا، تو وائٹ ہال میں، جو برطانوی حکومت کے مرکزی دفاتر کا گھر ہے، میں پرچم سرنگوں کر دیا جائے گا اور پارلیمنٹ کو بلایا جائے گا۔

دریں اثنا، بی بی سی کے ان براڈکاسٹرز کے ساتھ نیوز میڈیا کو بھی الرٹ کیا جائے گا جو پہلے شاہی موت کا اعلان کر چکے ہوں گے۔ سبھی خبروں کے لیے کالی ٹائی کے ساتھ تیار ہوں گے۔

“آپریشن لندن برج” کے تحت طویل عرصے سے 73 سالہ کنگ چارلس کے لیے “ڈی ڈے” پر قومی نشریات پیش کرنے کا منصوبہ بنایا ہے۔

منصوبے کے مطابق وزیر اعظم اور سینئر وزراء کی ایک چھوٹی سی تعداد کو سینٹ پال کیتھیڈرل میں ایک یادگاری خدمت میں شرکت کے لیے بھی تیار کیا جائے گا۔

اس کے بعد آپریشن میں اگلے 10 دنوں میں ہونے والے متوقع واقعات کی تفصیلات بتائی گئی ہیں۔

“D-Day+1” کو صبح 10 بجے افشا ہونے والے منصوبوں کے مطابق الحاق کونسل سینٹ جیمز پیلس میں کنگ چارلس کو نئے خودمختار کا اعلان کرنے کے لیے میٹنگ کرے گی۔

اس کے بعد اعلان سینٹ جیمز پیلس اور لندن شہر کے رائل ایکسچینج میں پڑھا جائے گا، جس میں چارلس کے بادشاہ ہونے کی تصدیق کی جائے گی۔

پولیٹیکو کے مطابق پارلیمنٹ تعزیتی پیغام پر اتفاق کرنے کے لیے اجلاس کرے گی، جس میں دیگر امور 10 دنوں کے لیے معطل کر دئے جائیں گے۔ اس کے بعد نئے بادشاہ منصوبے کے مطابق وزیراعظم اور ان کی کابینہ کے سینئر عہدیداروں سے ملاقات کریں گے۔

گارڈین کے مطابق “D-Day+2” کو ملکہ کا تابوت بکنگھم پیلس واپس لایا جائے گا اور کراؤن روم میں رکھا جائے گا۔ جہاں ایک قربان گاہ، پال، شاہی اسٹینڈرڈ، اور چار گرینیڈیئر گارڈز کھڑے نظر آئیں گے۔

پانچویں دن، لندن کے راستے ایک جلوس ملکہ کے تابوت کو بکنگھم پیلس سے ویسٹ منسٹر کے محل تک لے جائے گا۔

ملکہ تین دن تک وہاں اپنے تابوت کے ساتھ ویسٹ منسٹر ہال کے وسط میں ایک اٹھے ہوئے باکس پر رہیں گی، اور جگہ کو عوام کے لیے دن میں 23 گھنٹے کھلا رکھا جائے گا۔

آنے والے دنوں میں جنازے کے لیے بے تحاشہ تیاری کی جائے گی، جس میں باقاعدہ مشق اور عالمی رہنماؤں کی آمد بھی شامل ہے۔

اگر اس منصوبے پر عمل کیا جاتا ہے، تو جنازہ 10ویں دن ویسٹ منسٹر ایبی میں ادا کیا جائے گا، یہ 1760 کے بعد سے وہاں کسی برطانوی حکمران کا پہلا جنازہ ہوگا۔

دوپہر کے وقت ملک بھر میں دو منٹ کی خاموشی کے ساتھ ملک کا بیشتر حصہ بند ہو جائے گا۔ لندن اسٹاک ایکسچینج کاروبار بند کر دے گا اور برطانیہ کے بینک بند ہو جائیں گے۔

ونڈسر کیسل میں سینٹ جارج کے چیپل میں ایک پرعزم تدفین کی تقریب ہوگی، اور ملکہ کو قلعے کے کنگ جارج ششم میموریل چیپل میں دفن کیا جائے گا۔

تقریباً 60 سال کی منصوبہ بندی کے ساتھ یہ یقینی ہونا چاہئیے کہ “آپریشن لندن برج” کے تحت ملکہ کا آخری سفر بغیر کسی رکاوٹ کے ختم ہو۔

Queen Elizabeth

Funeral

weird

Operation London Bridge

London bridge is down

Death of Queen

Comments are closed on this story.