Aaj News

’شاہنواز نے سارہ کی نرم دلی کا فائدہ اٹھایا، سزا سے بچ جائے گا‘

شاہنواز امیر نے سارہ سے زندگی چھین لی، ایک درندہ جو اس کے لائق نہیں تھا، رائن فین وک
شائع 03 اکتوبر 2022 04:03pm

صحافی ایاز امیر کی بہو سارہ انعام کے قتل کو ایک ہفتہ گزر چکا ہے، پاکستان میں ان کے صرف تین ماہ قیام کے انتہائی افسوس ناک انجام پر بیرون ملک زیرِ تعلیم رہنے اور ملازمت کرنے والی سارہ کے قریبی دوست نے انہیں خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے اپنے جذبات کا اظہار کیا ہے۔

عالمی سطح پر معروف ”ٹیک برانڈز“ کے مواصلاتی مشیر رائن فین وک نے اپنی سلسلہ وار ٹویٹس میں بتایا کہ سارہ سے ان کی ملاقات ابوظہبی میں ہوئی تھی اورپہلی ہی گفتگو میں انہوں نے تعلیمی پالیسی اور فکشن بمقابلہ نان فکشن پرتبادلہ خیال کیا۔

ان کی دانش مندی نے مجھے ان کا گرویدہ کردیا۔ سارہ ہی نے انہیں بتایا کہ وہ عربی پڑھ رہی ہیں، اور واضح طور پر ان سے متاثر ہو کر میں نے اگلے ہفتے عربی اسباق کے لیے رابطہ کیا۔

رائن نے بتایا کہ سارہ کا دل صاف تھا۔ وہ قدرتی اور صاف ستھری چیزوں سے محبت کرتی تھیں۔ وہ نامیاتی روئبوس چائے اور سبز اسموتھیز پیا کرتی تھیں، جب بھی کھانا بناتیں، تازہ ہلدی اور لہسن کو ضرور کترتیں۔ انہوں نے ایلو جیل نہیں خریدا، اس کے بجائے ان کا اپنا ایلو پلانٹ تھا۔ صرف شریف ترین لوگوں کے پاس ایلو کا پودا ہوتا ہے۔

سارہ نے رائن کو ایک ایسے علاقے میں زندگی کو راستہ دکھانے میں مدد کی جس سے وہ ناواقف تھے۔

رائن نے لکھا کہ انہوں نے مجھے مزید پڑھنے اور اپنے تجسس کو بڑھانے کی ترغیب دی، صرف یہ دکھا کر کہ وہ بہت سی مختلف چیزوں کے بارے میں کتنی متجسس تھیں۔

ہماری سب سے زایدہ بحث اس بارے میں ہوتی تھی کہ آیا کنڈل واقعی کسی کتاب کی جگہ لے سکتا ہے؟ میں ایک ٹیک مرصع ہوں اور اپنے کنڈل سے محبت کرتا ہوں۔ وہ ایک دانشور اور روایت پسند تھیں، اس لیے ان کے ہاتھ میں کتاب کے احساس سے بہتر کوئی چیز نہیں تھی۔

سارہ کیلئے یہ بہت ہی عام رویہ تھا۔ مضبوط ارادے اور ذہانت والی سارہ جو چٹ چیٹ کو گہری گفتگو اور بحث میں تبدیل کردیا کرتی تھی۔ لیکن اس میں کافی حد تک بے وقوفی کا عنصر بھی ہوا کرتا تھا۔

لیکن دلوں کی سرد مہری نے سب کچھ بدل دیا۔ شاہنواز امیر نے سارہ سے زندگی چھین لی، ایک درندہ جو اس کے لائق نہیں تھا۔ ایک مراعات یافتہ کمینہ جس نے اس کی مہربان شخصیت کا فائدہ اٹھایا۔ ایک سرد خون قاتل جو انصاف کے نام پر سخت ترین سزاؤں کا مستحق ہے۔

انہوں نے مزید لکھا کہ سارہ اس طرح مرنے کی مستحق نہیں تھی۔ اس کے پاس کرنے کے لیے بہت کچھ تھا، بہت سارے نظام بدلنے، بہت سارے لوگوں کو متاثر کرنے کے لیے بہت کچھ تھا۔ اس کے پاس یہ سب کرنے کے لیے وقت بھی کافی ہوتا، لیکن ایک آدمی نے اپنے ہاتھوں سے اس کا وقت کم کر دیا۔

رائن بتاتے ہیں کہ اگرچہ سارہ اور میرا تین سال سے بھی زیادہ عرصہ قبل رابطہ منقطع ہوچکا تھا، لیکن اس کا مجھ پر بہت مضبوط اور دیرپا اثر پڑا جس کا اسے شاید کبھی احساس نہیں ہوا۔ میں اب بھی اکثر اس کے بارے میں سوچتا تھا، سوچتا تھا کہ وہ کہاں ہے، کیا کر رہی ہے، کیا پڑھ رہی ہے۔

حقیقت اب عیاں ہونے لگی ہے، جب بھی میں نے اپنے خیالات کو لکھنے کی کوشش کی، آنسو بہنے لگتے ہیں اور میرا دماغ دھندلا جاتا ہے۔ میں نے اب جاکر مزید وضاحت کے ساتھ اس بات پر غور کرنا شروع کیا ہے کہ سارہ کا میرے اور بہت سے دوسرے لوگوں کی زندگی میں کیا مقام تھا۔

“میں تصور بھی نہیں کر سکتا کہ ان کا خاندان اپنی خوبصورت اور کامیاب بیٹی، اپنی بے وقوف اور پرجوش بہن، اپنی زندگی کی روشنی کو کھونے پر کیا محسوس کر رہے ہیں۔ انہیں ہماری دعاؤں اور تعاون کی ضرورت ہے۔ انہیں انصاف کی فراہمی کی ضرورت ہے۔

آخر میں انہوں نے لکھا کہ سارہ کی موجودگی کے بغیر دنیا بہت تاریک جگہ ہے۔ لیکن جنت اس سے زیادہ روشن ہے۔

Shahnawaz Amir

Sara Inam

Ryan Fenwick

Tribute

Comments are closed on this story.

مقبول ترین