Aaj News

ہفتہ, اپريل 13, 2024  
04 Shawwal 1445  

سولرپینلز اب سورج کے بجائے ’چندا ماما‘ کی بدولت روشنی پیدا کریں گے

ایلون مسک نے ٹیسلا لونا روف کے نئے شمسی ماڈیولز متعارف کروادیے ہیں، اپریل فول کی دلچسپ ترین خبر
شائع 02 اپريل 2024 10:58am
تصویر: اے آئی جنریٹڈ
تصویر: اے آئی جنریٹڈ

سولر پینلز کی روشنی اب تک تو سورج کی مرہون منت ہے لیکن اب اس کار خیرمیں’چنداماما’ بھی شامل ہو گئے ہیں کیونکہ ایلون مسک نے ٹیسلا لونا روف کے نئے شمسی ماڈیولز متعارف کروادیے ہیں اور مصنوعی ذہانت سے بنے یہ سولر پینلز اندھیرے میں بھی بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

اسٹینفورڈ یونیورسٹی نے مصنوعی ذہانت کے روبوٹ ہرمیون جی کو استعمال کرتے ہوئے مصنوعی کرونولیسٹ کرسٹل سے بنائے گئے شمسی خلیات کے لیے نئی کوٹنگ تیار کی ہے جو ٹرا وائلٹ اور انفراریڈ میں فوٹون کےجذب کی اجازت دیتی ہے اورچاند کی چمکدار روشنی میں بھی بجلی پیدا کی جاسکتی ہے۔

ایلون مسک نے گزشتہ روز امریکا کے شہر نیواڈا میں واقع ٹیسلا گیگا فیکٹری میں نئے شمسی پینلز کا اعلان کیا جو رات کے وقت بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ نئی شمسی ٹیکنالوجی ایک ایسی پیش رفت ہے جو توانائی کی منتقلی کو نمایاں طور پر تیز کرسکتی ہے ، کیونکہ خصوصی پینل نہ صرف سورج کی روشنی کو تبدیل کرسکتے ہیں بلکہ مصنوعی ذہانت ٹیکنالوجی اور شمسی خلیات کے امتزاج کی بدولت کرونولیسٹ کرسٹل کی لیبارٹری میں تیارکردہ کوٹنگ کے ساتھ چاند کی روشنی کو بھی قابل استعمال بجلی میں تبدیل کیا جاسکتا ہے۔

روایتی شمسی توانائی کے نظام کے ساتھ ایک بڑا مسئلہ یہ ہے کہ وہ صرف دن کے مخصوص اوقات میں شمسی توانائی پیدا کرنے کے قابل ہے، اور صرف اس وقت جب آسمان بادلوں سے جتنا ممکن ہو آزاد ہو. غروب آفتاب کے بعد،پی وی سسٹم اور بالکونی پاور پلانٹس کے صارفین کو یا تو گرڈ آپریٹر سے بجلی خریدنی ہوگی یا اپنے اسٹوریج سسٹم کا استعمال کرنا ہوگا۔ تاہم اسٹوریج کی لاگت اب بھی بہت زیادہ ہے لہذا بہت سے لوگ اسے استعمال نہیں کرتے ہیں۔

بعض موسموں میں جیسے خزاں اور موسم سرما میں بیٹری اکثر پوری طرح چارج نہیں ہوتی کیونکہ دن بہت مختصر ہوتے ہیں اور آسمان بہت ابر آلود ہوتا ہے۔

اسٹینفورڈ یونیورسٹی میں پہلی کامیابی

بہت سے شکوک و شبہات کے باوجود کئی سائنسدان کچھ عرصے سے چاند کے فوٹو وولٹک پر کام کر رہے ہیں اور 2023 میں اسٹینفورڈ یونیورسٹی کے محققین نے اپنی پہلی کامیابی کا اعلان کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ شمسی خلیات کو اس طرح تبدیل کرنے میں کامیاب ہوگئے ہیں کہ بعض حالات میں وہ رات کے وقت بجلی بھی پیدا کرنے کے قابل ہو جاتے ہیں۔

مصنوعی ذہانت والا روبوٹ روشنی بڑھانے والا کرونولیتھیسٹ کرسٹل تیار کرتا ہے۔

ایلون مسک نے گزشتہ سال ریمس لوپن کی تحقیق کے بارے میں سنا اور 128 ملین ڈالر کے منصوبے کی حمایت کی۔ فراخدلانہ سرمایہ کاری نے ایک نئے اے آئی روبوٹ ، ہرمیون-جی کے استعمال کو ممکن بنایا جس نے ایک خود مختار کیمسٹ کے طور پر کام کیا اور مصنوعی کرسٹل کرونولیتھسٹ کی اہم دریافت کی۔

لیبارٹری میں تیار کردہ کرسٹلائن مواد میں روشنی بڑھانے کی خصوصیات ہیں اور اس کی مالیکیولر ساخت الٹرا وائلٹ اور انفراریڈ میں فوٹون کے گونجدار جذب کا سبب بنتی ہے۔ یہ خصوصیت شمسی پینل کی حساسیت کو نمایاں طور پر بڑھاتی ہے ، جس سے وہ چاند کی روشنی کا استعمال کرسکتے ہیں ، جو عام طور پر بجلی پیدا کرنے کے لئے توانائی میں بہت کم ہوتا ہے۔ اس عمل میں ، مصنوعی ذہانت ایک مرکزی کردار ادا کرتی ہے۔ یہ حقیقی وقت میں روشنی کے حالات کا تجزیہ کرتا ہے اور شمسی ماڈیولز کے رخ کو بہتر بناتا ہے۔ چاند کی روشنی کے جذب کو زیادہ سے زیادہ کرنے کے لئے ، الگورتھم متحرک طور پر کوٹنگ کو ایڈجسٹ کرتے ہیں۔

پورے چاند کی رات کتنی بجلی مل سکتی ہے

اب تک کم از کم آدھے چاند نےقابل قبول بجلی کی پیداوار پیدا کی ہے، اگر ہلال پتلا یا کم مدت کا ہے تو یہ کافی نہیں ہوگا. تاہم، مکمل چاند والی رات میں نیا پینل فی رات تقریبا 0.5 سے 1.2 کلو واٹ بجلی پیدا کرسکتا ہے.

ابھی تک اس بارے میں کچھ نہیں کہا گیا ہے کہ نیا پینل کب تیار ہوگا یا اس کی قیمت کتنی ہوگی ، لیکن ایلون مسک کو توقع ہے کہ پہلی ترسیل 2025 کے آغاز میں ہوگی۔

اب یہ بھی پڑھ لیجئے

وہ تمام قارئین جنہوں نے پوری خبر دلچسپی کے ساتھ پڑھی، انہیں ایک بار پھر یکم اپریل یاد دلاتے چلیں کیونکہ یہ خبر صرف ایک مذاق ہے لیکن پھر بھی ہم کہیں گے کہ ’خواب دیکھنے پر کوئی پابندی نہیں ہے۔‘

Elon Musk

Solar panels

april fool

Tesla LunaRoof

AI solar panel

generate electricity from moonlight

Comments are closed on this story.

تبصرے

تبولا

Taboola ads will show in this div