Aaj TV News

BR100 4,822 Decreased By ▼ -37 (-0.75%)
BR30 23,477 Decreased By ▼ -389 (-1.63%)
KSE100 45,597 Decreased By ▼ -412 (-0.89%)
KSE30 18,029 Decreased By ▼ -150 (-0.82%)
COVID-19 TOTAL DAILY
CASES 1,230,238 2,333
DEATHS 27,374 47
Sindh 452,267 Cases
Punjab 424,701 Cases
Balochistan 32,796 Cases
Islamabad 104,472 Cases
KP 171,874 Cases

تھری ڈی پرنٹنگ سے دیگر اشیاء تو بنائی جاہی رہی تھیں، لیکن اب گوشت بھی تھری ڈی پرنٹنگ سے بنایا جانے لگا ہے۔

سائنس دانوں نے دنیا کا پہلا مصنوعی گوشت متعارف کرا دیا ہے جو تھری ڈی پرنٹر کی مدد سے بنایا گیا ہے۔

غیر ملکی ذرائع ابلاغ کے مطابق سائنس دانوں کی ٹیم نے یہ واگیو گائے گوشت لیب میں اسٹیم سیلز کا استعمال کرتے ہوئے بنایا ہے۔

رپورٹ کے مطابق اس سے قبل لیب میں بنائے گئے گوشت کی شکل "قیمے" کی طرز کی ہوتی تھی، تاہم اس بار تھری ڈی پرنٹر کی مدد سے اسٹیک گوشت بنایا گیا ہے۔

تصویر: ڈیلی میل/ اوساکا یونیورسٹی
تصویر: ڈیلی میل/ اوساکا یونیورسٹی

سائنس دانوں کی ٹیم نے تاحال گوشت بنانے کی لاگت اور کمرشل بنیادوں پر اس کے استعمال سے متعلق کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے۔

واگیو بیف جاپانی گائے سے لیا جاتا ہے اور یہ دنیا بھر میں بہت مقبول ہے۔ خاص طور پر یہ یورپ اور امریکا میں اسٹیک پسند کرنے والوں کا پسندیدہ گوشت ہے۔

رپورٹ کے مطابق سائنس دانوں نے تھری ڈی پرنٹر کی مدد سے پٹھوں، چربی اور خون کی نسوں کے امتزاج والا گوشت بنایا ہے۔