Aaj News

جامعہ کراچی: سندھ ہائی کورٹ کا سینئر پروفیسر کو قائم مقام وائس چانسلر تعینات کرنے کا حکم

عدالت نے حکومت کو وائس چانسلرز کی تقرری کے لیے سفارشات پیش کرنے کے لیے 2 سال کی مدت کے لیے سرچ کمیٹی تشکیل دینے کی بھی ہدایت کی۔
شائع 02 فروری 2022 08:16pm
فائل فوٹو
فائل فوٹو

سندھ ہائی کورٹ نے جامعہ کراچی کے قائم مقام وائس چانسلر کے خلاف سنگین الزامات کا نوٹس لیتے ہوئے جامعہ کو ہدایت کی کہ سنیارٹی لسٹ کے مطابق 10 پروفیسرز کے نام وزیراعلیٰ کو بھجوائے، تاکہ مستقل تقرری تک قائم مقام وائس چانسلر کے طور پر وہ سینئر ترین پروفیسر کو مطلع کرسکیں۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق عدالت نے سندھ حکومت کو یہ بھی ہدایت کی کہ وہ دو سال کی مدت کے لیے ایک سرچ کمیٹی تشکیل دے جو جامعہ کراچی میں وائس چانسلرز کی تقرری کے لیے سفارشات پیش کرے۔

واضح کیا گیا کہ سرچ کمیٹی کم از کم تین اور پانچ سے زیادہ ارکان پر مشتمل نہیں ہوگی اور کمیٹی کی تشکیل نو کا عمل دو ماہ میں مکمل کرنا ہوگا۔

یہ ہدایات پروفیسر محمد احمد قادری اور دیگر کی طرف سے دائر کردہ ایک جیسی درخواستوں کی سماعت کے دوران سامنے آئیں، جنہوں نے مستقل اور قائم مقام وائس چانسلرز کی تقرریوں کے لیے سرچ کمیٹی کے انتخاب کے معیار کو چیلنج کیا تھا۔

جسٹس آفتاب احمد گورڑ اور جسٹس عدنان الکریم میمن پر مشتمل ڈویژن بینچ نے وکیل کے دلائل سننے کے بعد مشاہدہ کیا کہ سرچ کمیٹی کا بنیادی مقصد امیدواروں کے قانون کے تحت طے شدہ اہلیت کے معیار کو جانچنا اور ناموں کی سفارش کرنا ہے۔

عدالت نے مشاہدہ کیا کہ اگر وزیراعلیٰ سرچ کمیٹی کے نتائج سے متفق نہیں ہیں تو وہ درست وجوہات درج کریں گے۔ اس کے علاوہ اگر وہ وائس چانسلر کے عہدے کے لیے کسی امیدوار کے ساتھ ٹھیک نہیں ہے، تو اسے تحریری طور پر درست وجوہات درج کرنی ہوں گی۔

بینچ نے حکومت سے مزید کہا کہ وہ اپنی نئی تشکیل شدہ سرچ کمیٹی کے ذریعے اس عہدے کے لیے امیدواروں کا انٹرویو کرے اور اگر عدالت کو ضرورت ہو تو اس کی ریکارڈنگ کرے مزید کہا کہ ریکارڈنگ کو حکومت کی ویب سائٹ پر بھی اپ لوڈ کیا جائے گا۔

بینچ نے مشاہدہ کیا کہ تقرری کو چیلنج کرنے کی صورت میں ریکارڈنگ کو تباہ نہیں کیا جائے بلکہ اسے ایک سال کے لئے محفوظ کیا جائے جب تک کہ مجاز عدالت کے ذریعہ اس مسئلے کو نمٹا نہ دیا جائے۔

karachi universtiy

Sindh HighCourt

Comments are closed on this story.

مقبول ترین