Aaj News

امریکا کا روسی تیل کی درآمد پر پابندی لگانے پر غور

امریکی وزیر خارجہ اینٹونی بلنکن نے کہا کہ م اپنے یورپی شراکت داروں کے ساتھ روسی تیل کی درآمد پر پابندی لگانے کے بارے میں بہت فعال بات چیت کر رہے ہیں
شائع 07 مارچ 2022 12:53pm
امریکی وزیر خارجہ اینٹونی بلنکن
امریکی وزیر خارجہ اینٹونی بلنکن

واشنگٹن: امریکا نے کہا کہ وہ یوکرین پر حملہ کرنے پر روس کے خلاف مزید اقتصادی سزا کے طور پر روسی تیل کی درآمدات پر پابندی لگانے کے بارے میں یورپی ممالک کے ساتھ "فعال بات چیت" کر رہا ہے لیکن اس نے مکمل بائیکاٹ کا اعلان کرنے سے روک دیا۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق مغربی ممالک کے بائیکاٹ کے امکان پر غور کرنے کے ساتھ، یوکرین کے وزیر خارجہ دیمیٹرو کولیبا نے اس طرح کی درآمدات پر پابندی کا سختی سے مطالبہ کرتے ہوئے بحث میں حصہ لیا اور کہا کہ روسی تیل سے "یوکرین کے خون کی بو آ رہی ہے۔"

دریں اثنا گزشتہ ہفتے وائٹ ہاؤس نے کہا تھا کہ وہ امریکی خاندانوں کو قیمتوں میں اضافے سے بچانے کے ساتھ ساتھ روسی تیل کی امریکی کھپت کو کم کرنے کے طریقے تلاش کر رہا ہے، لیکن مغربی ممالک پر دباؤ بڑھ گیا ہے کہ وہ روسی توانائی کی درآمدات کو بند کر دیں تاکہ اس پر پیچ کو سخت کیا جا سکے۔

امریکی وزیر خارجہ اینٹونی بلنکن نے این بی سی کے ٹاک شو کو بتایا کہ "اب ہم اپنے یورپی شراکت داروں کے ساتھ روسی تیل کی درآمد پر پابندی لگانے کے بارے میں بہت فعال بات چیت کر رہے ہیں جبکہ یقیناً اسی وقت تیل کی عالمی سپلائی کو بھی برقرار رکھا جائے گا"۔

اینٹونی بلنکن نے کہا کہ "ہم نے آج تک جو اقدامات کیے ہیں اس کا روسی معیشت پر پہلے ہی تباہ کن اثر پڑا ہے" تاہم انہوں نے سخت پابندیوں کا حوالہ دیتے ہوئے کہا جس نے روس اور اس کے صدر ولادیمیر پوتن کو اقتصادی طور پر الگ تھلگ کر دیا ہے۔

یوکرین کے کولیبا نے تاہم اس بات پر زور دیا کہ روس کی تیل کی برآمدات کو روکنا بہت ضروری ہے۔

یورپی اور برطانوی گیس کی قیمتیں سپلائی میں خلل کے خدشات کے باعث گزشتہ ہفتے قیمتوں میں اضافہ ہوا ہے جبکہ برینٹ فیوچر آئل 118.11 ڈالر فی بیرل تک پہنچ گیا ہے جو 2008 کے بعد سے بلند ترین سطح ہے۔

اس کے علاوہ امریکی قانون سازوں نے براہ راست مکمل بائیکاٹ کا مطالبہ کیا ہے، گزشتہ ہفتے ریپبلکن اور ڈیموکریٹک سینیٹرز نے صدر جو بائیڈن پر زور دیا تھا کہ وہ روس سے تیل کی درآمد پر پابندی لگائیں۔

Vladimir Putin

United States

crude oil hike

Europe

russia sanctions

Comments are closed on this story.