Aaj News

مسجد اقصیٰ پر یہودی آباد کاروں کا دھاوا، سعودی عرب کی شدید مذمت

مملکت کی جانب سے اسے "بین الاقوامی قوانین کی سنگین خلاف ورزی" قرار دیا گیا ہے۔
شائع 07 اگست 2022 05:59pm
<p>یہودیوں نے اس کمپاؤنڈ کا دورہ کیا، جسے مسلمان “نوبل سینکچری” اور یہودی “ٹمپل ماؤنٹ” کے نام سے جانتے ہیں۔ اسرائیلی عبرانی مہینے “ایو” کے نویں دن تیشا باؤ مناتے ہیں جو فرسٹ اور سیکنڈ ٹیمپل کی بربادی کی یاد میں منایا جاتا ہے۔ (تصویر: روئٹرز)</p>

یہودیوں نے اس کمپاؤنڈ کا دورہ کیا، جسے مسلمان “نوبل سینکچری” اور یہودی “ٹمپل ماؤنٹ” کے نام سے جانتے ہیں۔ اسرائیلی عبرانی مہینے “ایو” کے نویں دن تیشا باؤ مناتے ہیں جو فرسٹ اور سیکنڈ ٹیمپل کی بربادی کی یاد میں منایا جاتا ہے۔ (تصویر: روئٹرز)

سعودی عرب نے اتوار کے روز اسرائیلی آبادکاروں کی طرف سے مسجد اقصیٰ کے صحن پر دھاوا بولنے کی مذمت کی ہے اور مملکت کی جانب سے اسے “بین الاقوامی قوانین کی سنگین خلاف ورزی” قرار دیا گیا ہے۔

سعودی وزارت خارجہ کی جانب سے جاری ایک بیان میں عالمی برادری سے مطالبہ کیا گیا کہ کشیدگی کو ختم کرنے میں اپنا کردار ادا کرے اور فلسطینی شہریوں کو ضروری تحفظ فراہم کرے۔

ریاستی بیان میں مزید کہا گیا کہ یہ حملہ یروشلم میں مقدس مقامات کے تقدس کی خلاف ورزی ہے، جس سے غزہ میں اس بڑھتی ہوئی کشیدگی کو ہوا دینے اور تشدد کو طول دینے میں مدد ملے گی، جس میں اس ہفتے 29 سے زیادہ فلسطینی شہید اور سینکڑوں زخمی ہوئے۔

اردن نے بھی مسجد اقصیٰ میں اسرائیلی خلاف ورزیوں کی مذمت کرتے ہوئے اسرائیل پر زور دیا کہ وہ “مسجد کے تقدس کا احترام کرے اور تاریخی اور قانونی حیثیت کو تبدیل کرنے کے اقدامات کو روکے”۔

پیٹرا نیوز ایجنسی پر شائع ہونے والے ایک بیان میں اردنی وزارت خارجہ اور تارکین وطن کے ترجمان ہیثم ابو الفول نے اس بات پر زور دیا کہ مقدس مقام کے امور کو چلانا خصوصی طور پر اردن کے زیر انتظام وقف (اوقاف) اور الاقصیٰ امور کی انتظامیہ کے دائرہ اختیار میں ہے۔

  اسرائیلی پولیس یہودی آباد کاروں کے دھاوے کے دوران انہیں تحفظ فراہم کرتے ہوئے (تصویر: روئٹرز)
اسرائیلی پولیس یہودی آباد کاروں کے دھاوے کے دوران انہیں تحفظ فراہم کرتے ہوئے (تصویر: روئٹرز)

انہوں نے اسرائیل کے اقدامات کو “تاریخی اور قانونی حیثیت اور بین الاقوامی قانون کی خلاف ورزی” قرار دیا اور کہا کہ یہ انتظامیہ کے اختیار کی بے عزتی ہے۔

ایک اور مذمتی بیان میں قطر کی وزارت خارجہ نے کہا کہ “اشتعال انگیزی کے طریقے” مسجد اقصیٰ کی تاریخی اور قانونی حیثیت کو تبدیل کرنے کی کوششوں کا حصہ ہیں۔ قطری وزارت خارجہ نے عالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ اسرائیل کی جانب سے جاری تنازعے کو ایک مذہبی جنگ میں تبدیل کرنے کی کوششوں کو روکے۔

وزارت نے کہا کہ اشتعال انگیز خلاف ورزیاں جو غزہ پر حالیہ حملوں سے ہم آہنگ ہیں “تشدد میں خطرناک اضافہ” کا باعث بنیں گی۔

Saudi Arabia

jerusalem

Israeli settlers

Storming of Al-Aqsa Mosque

Comments are closed on this story.