Aaj News

ایل ای ڈی لائٹس کا بڑھتا استعمال صحت کیلئے کتنا خطرناک ہے؟

کہیں آپ بھی ایل ای ڈی لائٹوں اور بلب سے اپنی جان خطرے میں تو نہیں ڈال رہے؟
شائع 19 ستمبر 2022 05:40pm
<p>تصویر بزریعہ گیٹی امیجز</p>

تصویر بزریعہ گیٹی امیجز

مصنوعی ذرائع سے حاصل کی جانے والی نیلی روشنی کے استعمال میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے جس کے انسانی صحت اور ماحول پر وسیع تر منفی اثرات مرتب ہو سکتے ہیں۔

ایکسیٹر یونیورسٹی کے ماہرین تعلیم نے اس قسم کی لائٹنگ ٹیکنالوجیز میں تبدیلی کی نشاندہی کی ہے جو یورپی ممالک رات کے وقت سڑکوں اور عمارتوں کو روشن کرنے کے لیے استعمال کر رہے ہیں۔

بین الاقوامی خلائی اسٹیشن (آئی ایس ایس) سے لی گئی تصاویر کا استعمال کرتے ہوئے، انہوں نے پایا کہ ایل ای ڈی کی سفید لائٹس تیزی سے پرانی سوڈیم لائٹس کی نارنجی روشنیوں سے تبدیل ہوتی جارہی ہیں۔

اگرچہ ایل ای ڈی لائٹنگ زیادہ توانائی کی بچت کیلئے استعمال کی جاتی ہیں اور اس کے استعمال میں کم لاگت آتی ہے، محققین کا کہنا ہے کہ اس سے منسلک نیلی روشنی کی بڑھتی ہوئی تابکاری پورے براعظم میں “منفی حیاتیاتی اثرات” کا باعث بن رہی ہے۔

مطالعے میں یہ بھی دعویٰ کیا گیا کہ روشنی کی آلودگی کے اثرات کے بارے میں ماضی میں کی گئی تحقیقات نے نیلی روشنی کی تابکاری کے اثرات کو نظر انداز کیا ہے۔

نیلی روشنی کے صحت پر اثرات میں سب سے اہم چیز میلاٹونن کی پیداوار کو روکنے کی صلاحیت ہے، یہ ہارمون انسانوں اور دیگر جانداروں میں نیند کے انداز کو منظم کرتا ہے۔

متعدد سائنسی مطالعات نے متنبہ کیا ہے کہ مصنوعی نیلی روشنی کی بڑھتی ہوئی نمائش لوگوں کی نیند کی عادات کو خراب کر سکتی ہے، جس کے نتیجے میں آہستہ آہستہ صحت کے مختلف مسائل پیدا ہو سکتے ہیں۔

یوروپ میں نیلی روشنی کی شعاعوں میں اضافے نے رات کے آسمان پر ستاروں کی مرئیت کو بھی کم کر دیا ہے، جس کے بارے میں تحقیق میں کہا گیا ہے کہ “لوگوں کی فطرت کے احساس پر اثرات پڑ سکتے ہیں”۔

نیلی روشنی چمگادڑوں اور پتنگوں سمیت جانوروں کے طرز عمل کو بھی بدل سکتی ہے، کیونکہ یہ روشنی کے ذرائع کی طرف یا اس سے دور ان کی حرکت کو تبدیل کر سکتی ہے۔

LED Lights

Negative Impact on Health

Comments are closed on this story.