Aaj TV News

BR100 4,597 Increased By ▲ 11 (0.24%)
BR30 17,781 Increased By ▲ 212 (1.21%)
KSE100 45,018 Increased By ▲ 192 (0.43%)
KSE30 17,748 Increased By ▲ 82 (0.46%)
COVID-19 TOTAL DAILY
CASES 1,367,605 7,586
DEATHS 29,097 20
Sindh 523,774 Cases
Punjab 462,323 Cases
Balochistan 33,910 Cases
Islamabad 117,436 Cases
KP 184,455 Cases

لاہور ہائیکورٹ نے آمدن سے زائد اثاثہ جات کیس میں مسلم لیگ نون کے رہنما رانا ثنا اللہ کی عبوری ضمانت کی توثیق کردی۔ رانا ثنا اللہ کو پچاس لاکھ روپے کے دو مچلکے جمع کروانے کا حکم دے دیا۔

لاہور ہائیکورٹ کے دو رکنی بنچ نے لیگی رہنما رانا ثناءاللہ کی آمدن سے زائد اثاثہ جات کیس میں درخواست ضمانت پر سماعت کی۔

نیب پراسکیوٹر فیصل بخاری نے عدالت کو بتایا کہ رانا ثنا اللہ نے 1990 سے 2019 تک عوامی عہدوں پر کام کرتے ہوٸے ایک کروڑ 27 لاکھ روپے تنخواہ وصول کی، اس کے علاوہ ان کی آمدن کا کوئی اور ذریعہ نہیں ہے جبکہ والد سے انہیں دس کنال زرعی زمین اور دو مکان وراثت میں ملے۔

رانا ثنا اللہ نے اپنے اثاثوں کی قیمت کم ظاہر کی۔ انکی تمام جائیدادیں اے این ایف نے منجمد کیں، پندرہ جائدادوں کا رانا ثناءاللہ نے کہیں ذکر نہیں کیا، تحقیقات کے لیے ملزم کی گرفتاری ضروری ہے۔

رانا ثناء اللہ کے وکیل امجد پرویز نے دلائل دیئے کہ نیب ابھی تک ان کیخلاف کوئی ثبوت پیش نہیں کر سکا، رانا ثناء اللہ نے تمام جائیدادیں انکم ٹیکس ریٹرن میں ظاہر کر دی ہیں۔

عدالت نے وکلا کے دلاٸل مکمل ہونے پر رانا ثناءاللہ کی پچاس پچاس لاکھ روپے کے دو مچلکوں کے عوض ضمانت کی توثیق کردی۔