Aaj.tv Logo

بھارت روس سے تیل خریدتا رہے گا، بھارتی وزیر خزانہ

03 اپريل 2022
بھارتی وزیر خزانہ نرملا سیتارامن ـــــــ فوٹو، بھارتی وزارت خزانہ
بھارتی وزیر خزانہ نرملا سیتارامن ـــــــ فوٹو، بھارتی وزارت خزانہ

بھارتی وزیر خزانہ نے کہا کہ ہندوستان رعایتی قیمتوں پر روس سے سستا تیل خریدنا جاری رکھے گا۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق نرملا سیتارامن ایک بزنس نیوز چینل کی تقریب کے دوران کہا کہ ہم نے خریدنا شروع کر دیا ہے، ہم نے کم از کم کافی تعداد میں بیرل حاصل کیے ہیں جبکہ سپلائی کے 3-4 دن کے بارے میں سوچوں گا، ان کا کہنا تھا کہ ہندوستان کے مجموعی مفاد کو ذہن میں رکھا گیا ہے۔

تاہم انہوں نے پوچھے گئے سوال کے جواب میں بھی تبصرہ کیا، روس بھارت کو تیل کی خریداری پر گہری چھوٹ دے رہا ہے اور کیا بھارت جغرافیائی سیاسی صف بندی کے پیش نظر اسے خریدنا جاری رکھے گا۔

بھارتی وزیر خزانہ نرملا سیتارامن تبصرہ کیا کہ ایک دن بعد آیا جب امریکی نائب قومی سلامتی کے مشیر برائے بین الاقوامی اقتصادیات دلیپ سنگھ نے نئی دہلی کو روس کے ساتھ تجارتی سودوں میں "تیز رفتاری" کے خلاف خبردار کیا۔

اسی اثنا میں دلیپ سنگھ نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ "ہم جو نہیں دیکھنا چاہتے ہیں، وہ روس سے ہندوستان کی درآمدات میں تیزی سے اضافہ ہے کیونکہ اس کا تعلق توانائی یا کسی دوسری برآمدات سے ہے، جس پر فی الحال امریکہ یا بین الاقوامی پابندیوں کے نظام کے دیگر پہلوؤں کی طرف سے ممانعت ہے۔"

یاد رہے کہ یوکرین جنگ پر امریکہ اور بھارت کے درمیان اختلافات پہلے ہی کھل کر سامنے آ چکے ہیں۔

امریکی صدر جو بائیڈن نے گزشتہ ہفتے کہا تھا کہ بھارت، واشنگٹن کی زیر قیادت کواڈ گروپ کا رکن ہونے کے باوجود، روس کے خلاف کارروائی میں "کچھ متزلزل" ہے۔

بھارتی وزیر خزانہ نے کہا کہ انہوں نے اور وزیر خارجہ سبرامنیم جیش کانکر نے ہندوستان کے موقف کی وضاحت بہت واضح طور پر کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ میں اپنے ملک کے قومی مفاد اور اپنی توانائی کی حفاظت کو اولین ترجیح دوں گی۔

مزید کہا کہ اگر ایندھن دستیاب ہے اوررعائیتی قیمت میں دستیاب ہے تو میں اسے کیوں نہ خریدوں؟ مجھے اپنے لوگوں کیلئے اس کی ضرورت ہے، اس لئے ہم نے خریداری شروع کر دی ہے۔

واضح رہے کہ ہندوستان روس کا تاریخی اتحادی ہے لیکن حالیہ برسوں میں واشنگٹن کے قریب ہوتا جا رہا ہے، جب سے روس نے 24 فروری کو یوکرین کیخلاف جنگ کا اعلان کیا ہے۔

تاہم نئی دہلی نے تنازع کے پرامن حل پر زور دیا ہے لیکن ماسکو پر کھل کر تنقید کرنے سے گریز کیا ہے۔

علاوہ ازیں روسی وزیر خارجہ سرگئی لاوروف نے کہا کہ ماسکو وہ تمام خریداریاں فراہم کرنے کیلئے تیار ہے جو نئی دہلی کر سکتی ہے۔

لاوروف اپنے ہندوستانی ہم منصب سبرامنیم جے شنکر سے ملاقات کیلئے جمعرات کو نئی دہلی پہنچے، جس کے بعد یوکرین کی جنگ پر ہندوستان کے موقف کی وجہ سے دنیا بھر کے معززین کے دوروں میں ہلچل مچ گئی ہے۔