Aaj.tv Logo

اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف کی رہنما اور سابق وزیر انسانی حقوق شیریں مزاری کو محکمہ اینٹی کرپشن پنجاب کی ٹیم نے ان کی رہائش گاہ کے باہر سے گرفتار کر لیا۔

ٹیم بظاہر شیریں مزاری کا اس کے گھر کے باہر انتظار کر رہی تھی اور باہر آتے ہی ان کو گرفتار کر لیا۔

اس حوالے سے ایمان زینب مزاری نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ "مجھے نہیں معلوم کہ میری والدہ کہاں ہیں اور انہیں زبردستی اغوا کیا گیا تھا۔"

انہوں نے کہا کہ میں صرف اتنا کہنا چاہتا ہوں کہ اگر میری والدہ کو کچھ ہوا تو میں کسی کو نہیں چھوڑوں گی۔

ایمان مزاری شیریں کی بیٹی، وکیل اور انسانی حقوق کی کارکن ہیں۔

اس سے قبل ایمان مزاری نے اپنے ٹویٹ میں کہا کہ پولیس والوں نے اس کی ماں کو مارا پیٹا اور گھسیٹ کر لے گئے۔

دوسری جانب پی ٹی آئی رہنما فواد چوہدری نے اسلام آباد کے کوہسار تھانے کے باہر میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ شیریں دنیا کی ایک قابل احترام شخصیت ہیں اور وہ جنرل ضیاءالحق کے دور سے ہی ملک میں انسانی حقوق کے لیے کام کر رہی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ "حکومت کے غنڈوں نے اس کو مارا پیٹا، اس کے کپڑے پھاڑ دیے اور اسے گھسیٹ کر لے گئے۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہ ہماری تحریک کے لیے پہلی بڑی گرفتاری ہے اور ہم اس حوالے سے اسلام آباد ہائی کورٹ سے رجوع کریں گے، پولیس ہمیں ملی جلی معلومات دے رہی ہے اور بتا رہی ہے کہ اسے ڈی جی خان یا لاہور منتقل کیا جا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ شیریں کو بدعنوانی کے الزام میں گرفتار کرنے سے زیادہ ظالمانہ کوئی چیز نہیں ہو سکتی۔

پی ٹی آئی رہنما شبلی فراز نے کہا کہ شیرین مزاری ہماری پارٹی کا اٹوٹ انگ ہونے کے ساتھ ساتھ ہمارے ملک کا اثاثہ بھی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہم ملک میں انسانی حقوق کو مزید آگے بڑھانے کے لیے اس نے جو کردار ادا کیا ہے اس سے انکار نہیں کر سکتے اور ہم اسے جس طرح سے اغوا کیا گیا اس کی مذمت کرتے ہیں۔

ذرائع کے مطابق شیریں مزاری کو رہائشگاہ کے باہرسےحراست میں لیا گیا، شیریں مزاری کواینٹی کرپشن پنجاب کی ٹیم نے گرفتار کیا۔

پی ٹی آئی رہنما افتخاردرانی نے ٹویٹ کردیا، کارکنوں کو تھانہ کوہسار پہنچنے کی ہدایات کردی۔