Aaj News

’میزائل لانچز امریکہ اور جنوبی کوریا پر حملے کی تیاری ہیں‘

ان کے پاس ایسے میزائل پہلے کبھی نہیں دیکھے، دفاعی تجزیہ کار
شائع 07 نومبر 2022 05:16pm
<p>تصاویر بزریعہ روئٹرز</p>

تصاویر بزریعہ روئٹرز

شمالی کوریا کی جانب سے پیر کے روز جاری بیان میں کہا گیا کہ حالیہ میزائل لانچ جنوبی کوریا اور امریکہ کی ”خطرناک جنگی مشق“ کے جواب میں دونوں ممالک ”حملوں کی نقالی“ تھے۔

جنوبی کوریا اور امریکہ نے چھ روزہ مشترکہ فضائی مشقیں کی تھیں جو ہفتے کو ختم ہوئیں۔

گزشتہ ہفتے، شمالی کوریا نے متعدد میزائلوں کا تجربہ کیا، جس میں ممکنہ ناکام بین البراعظمی بیلسٹک میزائل (ICBM)، اور سینکڑوں آرٹیلری گولے سمندر میں داغے گئے۔

 تصاویر بزریعہ روئٹرز
تصاویر بزریعہ روئٹرز

شمالی کوریا کی فوج نے کہا کہ ”ویجیلنٹ اسٹورم “ مشقیں ’کھلی اشتعال انگیزی تھی جس کا مقصد جان بوجھ کر کشیدگی کو بڑھانا تھا“ اور ییہ ”انتہائی جارحانہ نوعیت کی ایک خطرناک جنگی مشق“ تھی۔

شمالی کوریا کی فوج نے کہا کہ اس نے فضائی اڈوں اور ہوائی جہازوں کے ساتھ ساتھ جنوبی کوریا کے ایک بڑے شہر پر حملوں کی نقلی سرگرمیاں انجام دی ہیں تاکہ ”دشمنوں کے مسلسل جنگی جنون کو ختم کیا جا سکے۔“

جوہری ہتھیاروں سے لیس شمالی کوریا کی میزائل لانچ کی اس مشق میں ایک ہی دن میں اب تک داغے گئے سب سے میزائل شامل ہے۔

 تصاویر بزریعہ روئٹرز   جنوبی کوریا اور امریکی حکام کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا کہ پیانگ یانگ نے جوہری ڈیوائس کا تجربہ کرنے کے لیے تکنیکی تیاری کر لی ہے اور 2017 کے بعد یہ پہلی بار ہوگا۔

امریکی محکمہ خارجہ کے ایک بیان کے مطابق، امریکہ، جاپان اور جنوبی کوریا کے سینئر سفارت کاروں نے اتوار کو فون پر بات کی اور حالیہ تجربات کی مذمت کی، جس میں ایک میزائل کا ”لاپرواہ“ لانچ بھی شامل ہے جو گزشتہ ہفتے جنوبی کوریا کے ساحل سے گرا تھا۔   جنوبی کوریا کے جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کے ایک اہلکار نے پیر کو بتایا کہ جنوبی کوریا کے ایک جہاز نے ملبہ برآمد کیا ہے جس کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ یہ شمالی کوریا کے مختصر فاصلے تک مار کرنے والے بیلسٹک میزائل (SRBM) کا حصہ ہے۔ یہ پہلا موقع تھا جب شمالی کوریا کا بیلسٹک میزائل جنوبی کوریا کے پانیوں کے قریب گرا تھا۔

اہلکار نے بتایا کہ جنوبی کوریائی بحریہ کے ریسکیو جہاز نے پرزوں کی بازیابی کے لیے زیرِ آب تحقیقات کا استعمال کیا، جن کا تجزیہ کیا جا رہا ہے۔

متنازع دعوے

شمالی کوریا کی فوج نے کہا کہ اس نے 2 نومبر کو جنوبی کوریا کے السان کے پانیوں کی طرف دو ”سٹریٹجک“ کروز میزائل فائر کیے، السان جنوب مشرقی ساحلی شہر ہے جہاں ایک جوہری پاور پلانٹ اور بڑے کارخانے ہیں۔

جنوبی کوریا کے حکام نے اس دعوے کو ”غلط“ قرار دیا اور کہا کہ انہوں نے وہاں قریب میں کوئی میزائل نہیں دیکھا۔

تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ شمالی کوریا کے سرکاری میڈیا کی طرف سے جاری کی گئی کچھ تصاویر سے ایسا لگتا ہے کہ سال کے شروع میں لانچوں سے ری سائیکل کیا گیا تھا۔

ان کارروائیوں میں دو ”تخصیص وار ہیڈز سے لدے ٹیکٹیکل بیلسٹک میزائلوں کا آغاز“، ”دشمن کے آپریشن کمانڈ سسٹم کو مفلوج کرنے والے خصوصی فنکشنل وار ہیڈ“ کا تجربہ اور 500 لڑاکا طیاروں پر مشتمل ”آل آؤٹ کمبیٹ سورٹی“ بھی شامل تھا۔

نیا میزائل؟

تجزیہ کاروں نے کہا کہ سرکاری میڈیا کی طرف سے جاری کی گئی تصاویر ICBM کی پہلے سے غیر رپورٹ شدہ نئی قسم یا مختلف قسم کو ظاہر کرتی ہیں۔

کارنیگی اینڈومنٹ فار انٹرنیشنل پیس کے میزائل ماہر انکیت پانڈا نے کہا کہ ”یہ ان کے بیان میں واضح نہیں ہے، لیکن ڈیزائن اس سے مطابقت نہیں رکھتا جو ہم نے پہلے دیکھا ہے۔“

 تصاویر بزریعہ روئٹرز
تصاویر بزریعہ روئٹرز

انہوں نے کہا کہ دکھایا گیا لانچ، میزائل کے ذیلی نظاموں کا جائزہ لینے کے لیے ایک ترقیاتی پلیٹ فارم ہو سکتا ہے، جس میں ممکنہ طور پر ایک سے زیادہ آزادانہ طور پر ٹارگٹ ایبل ری اینٹری وہیکلز (MIRVs) کے لیے ایک گاڑی بھی شامل ہے، جو ایک ہی میزائل کو مختلف اہداف پر جوہری وار ہیڈز گرانے کی اجازت دیتا ہے۔

پانڈا کا کہنا تھا کہ ”یہ یقینی طور پر ICBM سائز کا میزائل ہے۔“

جارج ولیم ہربرٹ، سینٹر فار نان پرولیفریشن اسٹڈیز کے ایک منسلک پروفیسر اور میزائل کنسلٹنٹ نے کہا کہ تصاویر سے ظاہر ہوتا ہے کہ شمالی کوریا کے Hwasong-15 ICBM، جس کا پہلی بار 2017 میں تجربہ کیا گیا تھا، پر ایک نیا نوزیکون ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس بار میزئال کی ناک کی شکل مختلف ہے، جو سرکاری میڈیا میں دکھائے جانے والے اور بظاہر 2017 میں ٹیسٹ کیے گئے 200 سے 300 کلوٹن کے جوہری آلے کے لیے ضرورت سے بڑا دکھائی دیتا ہے۔

ہربرٹ نے کہا کہ یہ شکل ایک سے زیادہ چھوٹے وار ہیڈز جیسے MIRV کے مقابلے میں ایک بڑے وار ہیڈ کے لیے زیادہ موزوں ہے۔

شمالی کوریا کے سربراہ کِم جون اُن نے بڑے جوہری وارہیڈز کے ساتھ ساتھ چھوٹے ہتھیاروں کی تیاری پر زور دیا ہے، جو MIRVs یا ٹیکٹیکل ہتھیاروں کے لیے استعمال ہو سکتے ہیں۔

South Korea

North Korea

U.S

Missile Launch

Simulated Attack

Comments are closed on this story.

مقبول ترین