Aaj News

اسٹاک مارکیٹ میں شدید مندی، معاشی خدشات بڑھتے ہی 100 انڈیکس 1300 پوائنٹس تک گر گیا

کاروبار کے دوران ہنڈریڈ انڈیکس 38 ہزار 500 پر آگیا۔
اپ ڈیٹ 17 جنوری 2023 10:10pm
<p>فائل فوٹو</p>

فائل فوٹو

پاکستانی معیشت میں بڑے پیمانے پر غیر یقینی صورتِ حال اور مایوس سرمایہ کاروں کے جذبات نے منگل کو پاکستان اسٹاک ایکسچینج کو بھی اپنی لپیٹ میں لے لیا۔ پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں شدید مندی کی لہر دیکھنے میں آئی ہے۔ کاروبارکے دوران ہنڈریڈ انڈیکس 1300 پوائنٹس سے زیادہ گرگیا۔

کاروباری ہفتے کے تیسرے روز کاروبار کے دوران ہنڈریڈ انڈیکس 38 ہزار 500 پر آگیا۔

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے ساتھ بیل آؤٹ پروگرام کو دوبارہ شروع کرنے کے حوالے سے مذاکرات پر تعطل سرمایہ کاروں کے ذہنوں پر حاوی نظر آیا۔

ٹریڈنگ کے اختتام پر KSE-100 انڈیکس 1,378.54 پوائنٹس (3.47 فیصد) گر چکا تھا اور 38,342.21 کے ارد گرد منڈلا رہا تھا۔ کے ایس ای 100، 30 ماہ کی بچلی ترین سطح پر بند ہوا۔ تجارت کا آغاز مثبت ضرور ہوا، لیکن فروخت کے دباؤ نے جلد ہی مارکیٹ کو اپنی گرفت میں لے لیا۔

سرمایہ کاروں کی جانب سے اپنی ہولڈنگز ریلیز کرنے پر آٹوموبائل، سیمنٹ، بینکنگ، کیمیکل، تیل اور دیگر شعبے سرخ رنگ میں رنگے نظر آئے۔ جیسے جیسے دن آگے بڑھتا گیا، KSE-100 کا سرخ رنگ مزید گہرا ہوتا گیا۔

اقتصادی محاذ پر وزیر مملکت برائے پیٹرولیم مصدق ملک نے کہا ہے کہ حکومت کو گیس کی قیمتوں میں اضافہ کرنا پڑے گا کیونکہ وہ آئی ایم ایف کے بیل آؤٹ پروگرام کو بحال کرنا چاہتی ہے۔

پاکستان منگل کو ایک روسی وفد کے ساتھ تیل اور مائع قدرتی گیس (ایل این جی) کے طویل مدتی تجارتی معاہدے اور 3 بلین ڈالر کے پاکستان اسٹریم گیس پائپ لائن (PSGP) منصوبے کی تعمیر کے لیے دو طرفہ بات چیت کرنے والا ہے۔

بزنس ریکارڈر سے بات کرتے ہوئے اسماعیل اقبال سیکیورٹیز کے سربراہ ریسرچ فہد رؤف نے بتایا کہ ایکویٹی مارکیٹ گزشتہ چند دنوں سے دباؤ کا شکار ہے۔

انہوں نے کہا کہ سیاسی اور معاشی بے یقینی ہر گزرتے دن کے ساتھ بڑھ رہی ہے۔ ایک طرف آئی ایم ایف کا پروگرام تعطل کا شکار ہے اور دوسری طرف یہ واضح نہیں ہے کہ عام انتخابات مقررہ وقت پر ہوں گے یا اس سے پہلے۔“

ٹاپ لائن سیکیورٹیز کے ڈائریکٹر ریسرچ عمیر نصیر نے بزنس ریکارڈر کو بتایا کہ وزیر خزانہ اسحاق ڈار کے آئی ایم ایف سے متعلق بیان کے حوالے سے میڈیا رپورٹس نے مارکیٹ کے جذبات کو ٹھیس پہنچائی ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس سے آئی ایم ایف پروگرام کی بحالی میں مزید تاخیر کے خدشات بڑھ گئے ہیں۔

مزید یہ کہ سیاسی منظر نامہ بھی غیر یقینی ہے اور خوف و ہراس پیدا کر رہا ہے۔ پہلے سے طے شدہ خطرہ بھی ذہنوں پر حاوی ہے، کیونکہ ہمارے زرمبادلہ کے ذخائر کم ہیں۔

نسیم نے مزید کہا کہ توانائی کی قیمتوں سے متعلق اہم فیصلہ لینے میں حکومت کی جانب سے عدم فعالیت بھی جذبات کو بھڑکا رہی ہے۔

آئی جی آئی سیکیورٹیز کے ہیڈ آف ریسرچ سعد خان نے بھی اسی طرح کے جذبات کی بازگشت کرتے ہوئے کہا کہ سیاسی ابہام کی وجہ سے بورس میں ادارہ جاتی فروخت دیکھی جا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ بازار میں قبل از وقت انتخابات کا شور مچ رہا ہے۔

مارکیٹ ماہر نے معاشی افراتفری کے خاتمے کے لیے آئی ایم ایف پروگرام کو جلد از جلد دوبارہ شروع کرنے پر زور دیا۔

پاکستان کے اسٹاکس اب ہفتوں سے دباؤ میں ہیں کیونکہ حکومت آئی ایم ایف کے ساتھ بات چیت میں مصروف ہے، لیکن ابھی تک اپنے بیل آؤٹ پروگرام کی بحالی پر کسی معاہدے پر نہیں پہنچ سکی ہے۔ اس تاخیر کے ساتھ زرمبادلہ کے گرتے ہوئے ذخائر بھی ہیں جو ایک ماہ سے بھی کم درآمدی کور کے ساتھ نو سال کی کم ترین سطح پر پہنچ گئے ہیں۔

تمام شیئر انڈیکس کا حجم پیر کو 105.5 ملین سے بڑھ کر 205.9 ملین تک پنچا تھا۔ ٹریڈ ہونے والے حصص کی مالیت گزشتہ سیشن میں 3.2 بلین روپے سے بڑھ کر 6.7 بلین روپے تک پہنچ گئی۔

کے الیکٹرک 29.9 ملین شیئرز کے ساتھ والیوم لیڈر تھی، اس کے بعد ورلڈ کال ٹیلی کام 14.5 ملین شیئرز کے ساتھ، اور سوئی ناردرن گیس پائپ لائنز 9.7 ملین شیئرز کے ساتھ دوسرے نمبر پر تھی۔

منگل کو 340 کمپنیوں کے حصص کا کاروبار ہوا جن میں سے 34 میں اضافہ، 281 میں کمی اور 25 میں کوئی تبدیلی نہیں ہوئی۔

PSX

KSE100

pakistan stock exchange

Market Crash

Comments are closed on this story.

مقبول ترین