Aaj TV News

BR100 4,846 Increased By ▲ 46 (0.97%)
BR30 24,817 Increased By ▲ 124 (0.5%)
KSE100 45,175 Increased By ▲ 231 (0.51%)
KSE30 18,470 Increased By ▲ 87 (0.47%)
COVID-19 TOTAL DAILY
CASES 845,833 4198
DEATHS 18,537 108
Sindh 288,680 Cases
Punjab 312,522 Cases
Balochistan 22,900 Cases
Islamabad 77,065 Cases
KP 121,728 Cases

کچھ دن سے خاص طور پر امریکا میں ، میڈیا اور سماجی رابطوں کی سائٹوں پر اڑن طشتریوں کی ایک ویڈیو وائرل ہوئی ہے۔ اڑن طشتری کی ویڈیو سامنے آنے کے بعد اس پر کئی سوالات بھی اٹھ رہے ہیں۔"UFO" کی ویڈیو پرامریکی محکمہ دفاع کا رد بھی آیا ہے۔

وزارت دفاع نے تصدیق کی ہے کہ حال ہی میں منظرعام پر آنے والی تصاویر اور ویڈیوز جو کہ سوشل میڈیا پر گردش کررہی ہیں نیوی کے اہلکاروں کی پرواز کے دوران لی گئی تھیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ مناظر نامعلوم اڑتی اشیا میں بڑھتی ہوئی دلچسپی کو مزید بڑھانے کے لیے آئی۔ یہ ایک نا معلوم فضائی مظہر ہے جسے 'یو اے پی' کہا جاتا ہے۔

پینٹاگان کے ترجمان سیو گوو نے سی این این کو بتایا کہ آسمان میں چمکتی ہوئی مثلثی شے کی تصاویر اور فوٹیج ، جنہیں "بال" ، "اکورن" اور "دھاتی غبارے" کے طور پر دیکھا گیا، کو نیوی اہلکاروں نے 2019ء کو کیمرے میں محفوظ کیا تھا جسے جمعہ کے روز برطانوی اخبار گارجین کی ویب سائٹ پر نشر کیا گیا۔

اس میں یہ بھی اشارہ کیا گیا ہے کہ وزارت دفاع ان فوٹیج کی نوعیت کے بارے میں مزید کوئی تبصرہ نہیں کرے گا اور نہ ہی اس کے بارے میں کوئی معلومات شیئر کی جائیں گی۔

بتایا جاتا ہے کہ گذشتہ اپریل میں ، پینٹاگون نے 2004 اور 2015 میں لی گئی 'یو اے پی' کی 3 ویڈیوز جاری کی تھیں جس میں پائلٹوں کی آواز بھی شامل تھی جس کی وجہ سے وہ اجنبی اشیاء کو دیکھ رہے تھے۔ وہ یہ سب دیکھ کر حیران رہ گئے تھے۔